Advertisement

آرزو وصل کی رکھتی ہے پریشاں کیا کی

May 08, 2019
 

اختر شیرانی

آرزو وصل کی رکھتی ہے پریشاں کیا کیا

کیا بتاؤں کہ مرے دل میں ہیں ارماں کیا کیا

غم عزیزوں کا ،حسینوں کی جدائی دیکھی

دیکھیں دکھلائے ابھی گردشِ دوراں کیا کیا

ان کی خوش بُو ہے فضاؤں میں پریشاں ہر سو

ناز کرتی ہے ہوائے چمنستاں کیا کیا

دشتِ غربت میں رلاتے ہیں ہمیں یاد آ کر

اے وطن تیرے گل و سنبل و ریحاں کیا کیا

اب وہ باتیں نہ وہ راتیں نہ ملاقاتیں ہیں

محفلیں خواب کی صورت ہوئیں ویراں کیا کیا

ہے بہارِ گل و لالہ مرے اشکوں کی نمود

میری آنکھوں نے کھلائے ہیں گلستاں کیا کیا

ہے کرم ان کے ستم کا کہ کرم بھی ہے ستم

شکوے سُن سُن کے وہ ہوتے ہیں پشیماں کیا کیا

گیسو بکھرے ہیں مرے دوش پہ کیسے کیسے

میری آنکھوں میں ہیں آباد شبستاں کیا کیا

وقتِ امداد ہے اے ہمت گستاخی ِشوق

شوق انگیز ہیں ان کے لبِ خنداں کیا کیا

سیر ِگل بھی ہے ہمیں باعثِ وحشت، اخترؔ

ان کی الفت میں ہوئے چاک گریباں کیا کیا


مکمل خبر پڑھیں