Advertisement

’’یمنیٰ زیدی‘‘ خود کو ہر کردار میں ڈھال لیتی ہیں

June 09, 2019
 

عموماً ہم کسی بھی فنکار کے آن اسکرین کرداروں کا تعلق اس کی اصل زندگی سے جوڑ دیتے ہیں، لیکن اکثر فنکار رونے دھونے والے کرداروں کے برعکس عام زندگی میں بہت چلبلے ، چنچل اور زندہ دل ہوتے ہیں۔ یمنیٰ زیدی بھی انہی میںسے ایک ہے۔ وہ آجکل جیو کے ڈرامہ سیریل ’’ دل کیا کرے ‘‘ میںعمدہ کام کررہی ہیں اور اس سے پہلے بھی کئی مشہور سیریلز میں زبردست فنکارانہ صلاحیتوں کا مظاہرہ کرچکی ہیں۔

یمنیٰ زیدی30جولائی1989ء کو لاہور میںپیدا ہوئیں۔ ویسے تو یمنیٰ ٹیکساس میں رہتی ہیں لیکن کام کے دوران کراچی اور لاہور کے درمیان شٹل کاک بنی رہتی ہیں۔ انھوں نے انٹیریئر ڈیزائننگ میںماسٹر کررکھاہے اور ریڈیو پر میزبانی بھی کرچکی ہیں۔ یمنیٰ کے والد زمیندار اور والدہ خاتون خانہ تھیں، جن کا تعلق پاکپتن کے گائوں عارف والا سے تھا۔ بچپن سے ہی یمنیٰ کے اندر اداکاری کے جراثیم تھے، جسے گھر والوں نے بھانپ لیا اور پھر ان کی بھرپور سپورٹ شروع کردی، مگر خود یمنیٰ نے کبھی اداکاری کو بطور کیریئر بنانے کا نہیں سوچا تھا۔ انھوں نے اپنےد وست عفان وحید کےاصرار پر شوبز انڈسٹری جوائن کرنے کا فیصلہ کیا۔

2012ء میں23سال کی عمر میں انھوں نے کیریئر کی ابتدا کرتے ہوئے اپنے پہلے سیریل میں معاون کردار اداکیا۔ اس کے بعددوسرے سیریل میںانھوں نے مرکزی کردار کے ذریعے خوب داد سمیٹی۔ اس کے بعد یمنیٰکو مختلف ڈراموں میںکام کرنے کی بے شمار آفرز آنی شروع ہوگئیں۔ ان کےیادگار ڈراموں میں’’پارس، آپ کی کنیز ، کانچ کی گڑیا، میری دلاری ، دل محلے کی حویلی ‘‘قابل ذکرہیں۔

یمنیٰ بلاشبہ نئی نسل کی باصلاحیت اداکارہ ہیںاور خوش قسمت بھی ہیںکہ انہیں آغاز میںہی سپرہٹ سیریلز مل گئے، جن کے ذریعے وہ اپنی اداکارانہ صلاحیتوںکو پروان چڑھاتی گئیں۔ اپنے پہلے ڈرامے میںایک باغی لڑکی کا کردار اداکر نے کےبعد ایک معصوم لڑکی سے لے کر ایک ظالم لڑکی تک انھوں نے یکسر مختلف کردار ادا کیے۔ ایک ڈرامے میں انہوں نے ایک ایسی لڑکی کا کردار نبھایا جو اپنے انکل کی جنسی ہراسگی کا شکا رتھی۔ یمنیٰ نے ایک گھبرائی اور خوفزدہ لڑکی کا کردار بھرپور طریقے سے پوٹرے کیا۔ اس کردار کےبارے میں یمنیٰ کا کہنا ہے، ’’یہ ڈرامہ سماج کے ایک چبھتے ہوئے موضوع پر تھا۔ بحیثیت ایک عورت اور اپنے گھر کی سب سے چھوٹی بیٹی ہونے کی وجہ سے میں محسوس کرتی ہوں کہ ہراسگی کے بارے میں کسی کو بتانا کس قدر مشکل کام ہے، چاہے یہ جسمانی ہو یا زبانی۔ ہاں، ہم دوسروں کی کہانیاں تو بتا دیتے ہیں ، لیکن جب ہمارے ساتھ ایسا ہوتا ہے تو سمجھ نہیںآتی کہ کیا کریںبلکہ اس کا اعتراف کرنا بھی کوئی آسان کام نہیںہوتا۔ اسی لیے میں نے اس کردار کو کرنے کی ہامی بھری تاکہ ان مسائل کو سامنے لایا جائے، جس کے بارے میںلوگ بات کرتےہوئے شرماتے اور کتراتے ہیں۔ مجھے فخر ہے کہ میںنے ایسا کردار کیا، جس سے معاشرےمیںان مسائل سے نمٹنے کیلئے آگاہی پھیلی‘‘۔

یمنیٰ سے سوال پوچھا گیا کہ اگر خدا نخواستہ ایسا اصل زندگی میں ہوتو کیا اس کے خلاف آواز اٹھانی چاہئےاور تمام معاملات کو سامنے لانا چاہئے، اس کے جواب میںیمنٰی نے لب کشائی کی، ’’ہاں، کیوںنہیں! سب سے پہلے تو میں یہ محسوس کرتی ہوں کہ یہ ذمہ داری ہمارے والدین اور سرپرستوںکی ہے۔ والدین کے ساتھ بچوں کے تعلقات اتنے سہل ہونے چاہئیںکہ وہ کسی بھی چیز کے بارےمیں بات کرسکیں۔ اگرآپ کے اور بچوںکے درمیان میں فاصلہ ہوگا تو آپ کو کبھی پتہ نہیں چلے گاکہ آپ کے بچے پر کیا گزر رہی ہے۔ اگر آپ نوٹس کریں کہ آپ کے بچے کے رویے میںیکسر تبدیلی آگئی ہے اور وہ غیر معمولی برتائو کا مظاہرہ کررہاہے تو اس کی وجہ معلوم کرنے کی کوشش کریں، اسے اعتماد میںلیں کیونکہ اس قسم کے معاملات بچے کے جسم اور روح پر بہت اثر انداز ہوتے ہیں اور ساری زندگی کیلئے بچے کی شخصیت متاثر کردیتے ہیں‘‘۔

یمنیٰ سال میں دو پروجیکٹس کرتی ہیں اور باقی وقت امریکا میںگزارتی ہیں، وہ وہاں’ریڈیو جوکی‘ کی پارٹ ٹائم جاب کرتی ہیں۔ مہرین جبار کی ہدایت میں بننے والے جیو ٹی وی کے ڈرامہ سیریل ’ دل کیا کرے‘ میںان کے کام کو بے حد سراہا جارہاہے۔ اسڈرامے میں یمنیٰ کے ساتھ فیروز خان، مریم نفیس، سرمد کھوسٹ ، شمیم ہلالی، سونیا رحمان، عابد علی اور تنویر جمال بھی اداکاری کے جوہر دکھا ر ہے ہیں۔

’دل کیا کرے‘ میں خوبصورتی سے کردار ادا کرنے والی یمنیٰ مہرین جبا رکے ساتھ کام کرکے بہت خوش ہیں کیونکہ مہرین ان کے پسندیدہ ہدایتکاروںکی فہرست میں شامل ہیں۔ فلموں میںکام کرنے کی بابت یمنیٰ کا کہنا ہےکہ وہ ایسا کا م کرنا چاہتی ہیں، جس پرانھیں فخر ہو۔ تاحال انھیں فلم میں کام کی آفر نہیںہوئی ہے۔


مکمل خبر پڑھیں