Advertisement

کیا بچے با آسانی دو زبانیں سیکھ، سمجھ اور بول سکتے ہیں؟

June 09, 2019
 

دورِ جدید میں مسابقت کا رجحان خطرناک حد تک اس قدر بڑھ چکا ہے کہ آج دو سال کی عمر کو پہنچتے ہی بچوں کو اسکول میںداخل کرواکے انھیں بھی مقابلے کی دوڑ میں شامل کر دیا جاتاہے۔ ہرچندکہ، اپنے بچوں کی کامیابی اور ان کے مستقبل کی فکر والدین کے لیے بظاہر ایک اچھی بات ہے، تاہم یہ بات بھی یاد رکھنے کی ضرورت ہے کہ بچوںکو انسان رہنے دیا جائے کہ کہیں مقابلے کی دوڑ میں والدین انھیں روبوٹ نہ بنا دیں۔ دوسری بات یہ ہے، مقابلے کی اس دوڑ میں بچوں کو شامل کرکے، ان سے ان کا بچپن نہ چھینا جائے، بچپن انسان کی زندگی کا سب سے خوبصورت دور ہوتا ہے، جس کے دوران کھیل کھیل میں بچے بہت کچھ سیکھتے اور دنیا کو دریافت کرتے ہیں۔

انگریزی کو دنیا کی سب سے طاقتور زبان کا درجہ حاصل ہے، جس سے صرف پاکستان میں بولی جانے والی زبانیں ہی نہیں، بلکہ دنیا کے تقریباً تمام خطوں اور ملکوں میں بولی جانے والی زبانیں متاثر ہورہی ہیں۔ جس طرح، پاکستان میں بچپن سے ہی بچوں کو ان کی مادری زبان کےساتھ انگریزی زبان بولنا سکھائی جاتی ہے، بالکل ایسی ہی صورتِ حال کا سامنا فرانسیسی، جرمن، ہسپانوی اور دیگر زبانیں بولنے والے بچوں کو بھی کرنا پڑرہا ہے۔

اس سلسلے میں فلوریڈا ایٹلانٹک یونیورسٹی کی جانب سے ایک تحقیقی رپورٹ شائع کی گئی ہے۔ تحقیق کا مقصد یہ جاننا تھا کہ پیدائش یا پیدائش کے کچھ عرصے بعد، بچوں کو بیک وقت جب دو زبانیں سکھائی جاتی ہیں، تو اس کا ان بچوں پر کیا اثر پڑتا ہے۔ رپورٹ کے نتائج، ان والدین اور ماہرین کی تشویش کو یقیناً کم کرنے کا باعث بنیں گے، جو اسے بچوں پر اضافی بوجھ اور بچوں کے ساتھ ناانصافی تصور کرتے ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بچہ پیدائش کے وقت سے ہی کوئی سی بھی دو زبانیں اپنی اپنی رفتار کے ساتھ سیکھتا ہے اور ایک زبان کا سیکھنا، اس کی دوسری زبان سیکھنے کی صلاحیتوں پر اثرانداز نہیں ہوتا۔ اس بات کا دارومدار بچوں کے والدین یا سرپرست پر ہے کہ وہ اپنے بچے یا بچوں کو کس طرح کا ماحول فراہم کرتے ہیں۔ اگر بچوں کو سکھائی جانے والی دونوں زبانیں مؤثر اور معیاری انداز میں متعارف کرائی جائیں تو وہ دونوں زبانوں کو بآسانی سیکھ، سمجھ اور بول سکتا ہے۔

تاہم، رپورٹ میں خبردار کیا گیا ہے کہ انگریزی زبان اپنی زیادہ اثر پذیری کے باعث، دوسری زبان کو ماند کرسکتی ہے۔ اس کی وجہ یہ بتائی گئی ہے کہ ایک بچہ جب گھر سے باہرنکلتا ہے تو اسکول اور فیملی تقریبات وغیرہ میں اسے اپنی مادری زبان کے بجائے انگریزی زبان زیادہ سُنائی دیتی ہے۔ اس وجہ سے یہ نتیجہ اخذ کیا گیا ہے کہ یہ ضروری نہیں ہے کہ ایک بچہ اپنی مادری زبان میں ہی بولنے اور سمجھنے میں زیادہ مہارت حاصل کرے، دراصل اس کا دارومدار اس بات پر ہے کہ اسے کون سی زبان زیادہ بہتر معیار میں سُننے اور سمجھنے کو ملتی ہے۔

’ڈیویلپ مینٹل سائنس جرنل‘ میں شائع ہونے والی رپورٹ میں ہسپانوی اور انگریزی زبانیں بولنے والے بچوں کو تحقیق کا مرکز بنایا گیا تھا۔ تحقیق سے اخذ ہونے والے اعدادوشمار کی بنیاد پر بتایا گیا ہے کہ بچے جیسے جیسے انگریزی میں بہتر مہارت حاصل کرتے جاتے ہیں، ان کی ہسپانوی زبان سیکھنے میں دلچسپی بتدریج کم ہوتی جاتی ہے۔ اس لیے، بچوں کے ساتھ بولی جانے والی زبان کے حجم کے مقابلے میں اس کا معیار زیادہ اہمیت اختیار کرجاتا ہے۔ ’’بچوں کے الفاظ کے ذخیرے اور ان کی گرامر کی صلاحیتوں میں بڑا گہرا تعلق پایا جاتا ہے۔ یہ بات دو زبانیں بولنے والے ہر بچے کے لیے کہی جاسکتی ہے۔ دوسری اہم بات یہ کہ ایک زبان میں الفاظ کے ذخیرے اور گرامر کی صلاحیتوں کا دوسری زبان میں الفاظ کے ذخیرے اور گرامر کی صلاحیتوں پر کوئی اثر نہیں پڑتا۔ دونوں زبانیں ایک دوسرے کے اثرسے آزاد رہتی ہیں‘‘۔

یہ تحقیق 2سے 4سال کے بچوں پر ہر چھ ماہ کے وقفے کے بعد کی گئی ہے اور نتائج مجموعی تحقیق کے عکاس ہیں۔ محققین نے اسٹڈی کے دوران متعدد ممکنات کو مدِنظر رکھا اور ان کا جائزہ لیا۔ مثلاً؛ 1) کیا بچوں میں اندرونی طور پر کوئی فطری صلاحیت ہوتی ہے، جس کے باعث وہ ایک ہی وقت میں الفاظ کا ذخیرہ اور گرامر سیکھتے ہیں یا پھر اس عمل میں ان کا کچھ چیزوں پر انحصار رہتا ہے؟ 2) کیا بچے الفاظ کا ایک خاص ذخیرہ حاصل کرنے کے بعد گرامر سیکھنا شروع کرتے ہیں یا گرامر بچوں کو الفاظ سیکھنے میں معاون ثابت ہوتی ہے؟ 3) یا پھر وہ خارجی عوامل ہوتے ہیں، جو بچوں میں الفاظ کا ذخیرہ اور گرامر سیکھنے کے عمل کو متحرک کرتے ہیں؟

تحقیق کے اعدادوشمار کی بنیاد پر محققین اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ بچوںمیں الفاظ کا ذخیرہ بڑھانے اور گرامر سیکھنے کے عمل میں بنیادی کردار امکانی طور پر منظرنامہ نمبر 3کا ہی ہوتا ہے۔

اس تحقیق کی روشنی میں، بچوں کے الفاظ کا ذخیرہ بڑھانے اور گرامر سکھانے کے لیے والدین اور سرپرستوں کا کردار اہمیت اختیار کرجاتا ہے۔ والدین اپنے بچوں کو جس زبان میں زیادہ ماہر بنانا چاہتے ہیں، انھیں چاہیے کہ وہ اپنے بچوں کو اسی زبان کا ماحول دیں۔ بچوں کی سیکھنے کی صلاحیتوں کا واحد دارومدار اس بات پر ہوگا کہ والدین انھیں مطلوبہ زبان میں کس حد تک بہتر سے بہتر ماحول فراہم کرسکتے ہیں۔ والدین اپنے بچوں کو مطلوبہ زبان میں جس قدر بہتر ماحول فراہم کریں گے، اس زبان میں بچوں کی کارکردگی اتنی ہی زیادہ اچھی رہے گی۔


مکمل خبر پڑھیں