| |
Home Page
جمعرات 04 ربیع الاوّل 1439ھ 23 نومبر 2017ء
November 14, 2017 | 12:29 pm

اب آپ بھی ’سپر ہیومن‘ بن سکتے ہیں

Artificial Intelligence Will Make Humans Super Human

Artificial Intelligence Will Make Humans Super Human

ماہرین کا کہنا ہے کہ جس تیزی کے ساتھ مصنوعی ذہانت (آرٹیفیشل انٹیلی جنس) کے شعبے میں ترقی ہو رہی ہے اسے دیکھتے ہوئے یہ کہا جا سکتا ہے کہ آئندہ 20 سال میں انجکشن کے ذریعے انتہائی باریک مشینیں جسم میں شامل کرکے انسانوں زبردست طاقت مہیا کی جا سکے گی جس سے وہ ’’سپرہیومن‘‘ بن جائیں گے۔

IA-super-human_01

مصنوعی ذہانت کی حامل باریک مشینیں جنہیں نینو مشینز کہا جاتا ہے، ایسی ہی ہوں گی جیسے موجودہ دور میں جسم میں مختلف امپلانٹس لگائے جاتے ہیں۔ یہ وہ وقت ہوگا جب انسان ہاتھ کے اشاروں سے مختلف گیجٹس کو کنٹرول کر سکے گا۔

برطانوی خبر رساں ادارے نے اپنی رپورٹ میں سپر ہیومنز کیلئے ’’سائبورگ‘‘ کا نام استعمال کیا ہے۔ آئی بی ایم کے ہرسلی انوویشن سینٹر کے سینئر موجد جان میک نمارا کا کہنا ہے کہ ٹیکنالوجی کی مدد سے ایک ایسی انسانی نسل پیدا ہوگی جنہیں آدھا انسان آدھی مشین کہا جا سکتا ہے۔

IA-super-human_03

انہوں نے کہا کہ دو دہائیوں کے دوران ہونےو الی ترقی انسان کو شعور اور آگہی کی بلندیوں پر لے جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ نینو مشینیں انسانی جسم میں شامل کیے جانے سے کئی طرح کے طبی فوائد بھی حاصل ہو سکیں گے، خلیوں، مسلز اور ہڈیوں کے پہنچنے والے نقصانات کو درست کیا جا سکے گا اور انہیں ایسا بنایا جا سکے گا کہ جس میں آئندہ کوئی خرابی پیدا نہ ہوسکے۔

انہوں نے کہا کہ ہم اپنے ارد گرد موجود گیجٹس اور آلات کو اپنے اشاروں اور خیالات کی مدد سے کنٹرول کر سکیں گے۔

IA-super-human_04

انہوں نے کہا کہ صرف یہی نہیں بلکہ مشینوں کی جسم میں موجودگی انسانوں کو سوچنے، سمجھنے اور حسابات کرنے میں بھی زبردست مدد فراہم کریں گی۔

تاہم، میک نمارا نے خبردار کیا ہے کہ یہ ٹیکنالوجی شاید صرف امیر افراد ہی استعمال کر سکیں گے اور دیگر لوگوں کے مقابلے میں وہ زیادہ طاقتور، زیادہ آگہی رکھنے والے اور زیادہ صحتمند ہوں گے۔