آپ آف لائن ہیں
جمعہ 10؍محرم الحرام 1440ھ 21؍ستمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
دنیا میں چند ایسے عالمی لیڈرز گزرے ہیں جنہوں نے اپنی دوراندیشی سے قوموں کی قسمتیں بدل دی ہیں۔ اللہ تعالیٰ نے قائداعظم کے بعدپاکستان کو بھی ذوالفقار علی بھٹو کی شکل میں بین الاقوامی سطح کا ایک ذکی، فہیم، نڈر، دوراندیش اور انتہائی سیاسی سمجھ بوجھ رکھنے والا لیڈر دیا جن کی خداداد صلاحیتوں نے ملکی سیاست کو ایک نئی جہت بخشی۔ شہید بھٹو نے اپنے دور میں نیوکلیئر پروگرام کی بنیاد رکھی جس کی بدولت آج پاکستان ایٹم بم رکھنے والا پہلا اسلامی ملک ہے۔ اس بارے میں برطانوی صحافی گورڈن کوریر نے اپنی کتاب ’’بم کیلئے خریداری‘‘ (Shopping for Bomb) کی پانچویں قسط میں انکشاف کیا تھا کہ ذوالفقار علی بھٹو ایٹمی ہتھیاروں پر صرف مغرب کی اجارہ داری کے خلاف تھے۔ پاکستان کا میزائل پروگرام، کامرہ ایرو ناٹیکل کمپلیکس، ہیوی مکینیکل کمپلیکس، مشاق ایئر کرافٹ، اسٹیل ملز، قراقرم ہائی وے اور بن قاسم پورٹ جیسے منصوبے شہید بھٹو کے عوام کو دیئے گئے تحفے ہیں۔ یہ قائد عوام ہی تھے جنہوں نے مزدور کو باعزت مقام دیا اور ملکی سیاست ڈرائنگ روم سے نکال کر مزدوروں اور کسانوں تک لائے۔ یہ شہید بھٹوکا ہی کارنامہ تھا جنہوں نے مسلم امہ کے اتحاد کیلئے 1975ء میں لاہور میں تیسری اسلامی سربراہی کانفرنس کا انعقاد کرکے 38ممالک کے سربراہوں کو اکٹھا کیا جس میں

لگائے گئے نعرے ’’تیل بطور ہتھیار‘‘ نے مغربی ممالک کو ہلا کر رکھ دیا تھا اور شہید بھٹو کو مغرب کیلئے خطرہ سمجھا جانے لگا تھا۔
زندہ قومیں اپنے ہیروز کو ہمیشہ یاد رکھتی ہیں۔ میں آج شہید ذوالفقار علی بھٹو کی 38ویں برسی کے موقع پر اُن کی صاحبزادی دختر مشرق شہید بینظیر بھٹو کی کتاب سے چند تکلیف دہ اقتباسات پیش کرنا چاہوں گا۔ وہ اپنی کتاب میں لکھتی ہیں کہ ’’میں 2اپریل کی صبح فوج کی طرف سے فراہم کردہ چارپائی پر لیٹی ہوئی تھی جب میری والدہ اچانک کمرے میں داخل ہوئیں تو انہوں نے مجھے پکارتے ہوئے بتایا کہ ’’پنکی باہر فوجی افسران کا کہنا ہے کہ ہم آج دونوں تمہارے والد سے ملاقات کرلیں۔ اس کا کیا مطلب ہے؟‘‘یہ دن عمومی طور پر میری والدہ کے ملاقات کا دن تھا، انہیں ہفتے میں ایک بار ملنے کی اجازت تھی۔ میری ملاقات ہفتے کے آخر میں متعین تھی۔ اب ہم دونوں کے اکٹھے ملاقات کیلئے کہنے کا مطلب کیا ہماری آخری ملاقات ہوگی۔ ضیانے میرے والد کے قتل کا فیصلہ کرلیا تھا۔میرا ذہن تیزی سے حرکت میں آگیا۔ میں نے سوچا ہمیں ملک سے باہر عالمی رائے عامہ اور اپنے عوام تک یہ خبر فوراً پہنچانا چاہئے۔ وقت ہاتھوں سے نکلتا جارہا تھا، میں نے والدہ سے کہا۔ ’’انہیں بتادیں میری طبیعت ناساز ہے، البتہ اگر یہ آخری ملاقات ہے تو میں جانے کیلئے تیار ہوں۔‘‘ جب میری والدہ گارڈز کے ساتھ بات کرنے کیلئے گئیں تو میں نے پہلے سے تحریر شدہ خفیہ پیغام اپنے ایک دوست کو بھجوایا اور کہا کہ وہ ہمیں آخری ملاقات کیلئے لے جارہے ہیں، تم فوراً غیر ملکی سفیروں تک یہ پیغام پہنچائواور عوام کو متحرک کرکے سڑکوں پر لائو۔‘‘ میری طبیعت ناسازہونے کی وجہ سے ملاقات اگلے روز کیلئے ملتوی ہوگئی اور اس طرح ہمیں اپنے والد کی جان بچانے کیلئے مزید 24گھنٹے مل گئے لیکن بی بی سی نے اپنی خبروں میں یہ بتایا کہ کل 3اپریل کو بھٹو صاحب کے ساتھ ہماری آخری ملاقات ہوگی لیکن عوامی احتجاج کی کال نہیں دی گئی جس نے ہماری آخری امید کو بھی ختم کردیا۔ اگلے روز ایک تیز رفتار جیپ میں ہمیں جیل پہنچا دیا گیا۔ آج تم دونوں اکٹھی یہاں کیوں آئی ہو؟‘‘ میرے والد نے اپنی کال کوٹھری سے آواز دی۔میری والدہ نے کوئی جواب نہ دیا۔کیا یہ ہماری آخری ملاقات ہے؟ انہوں نے پوچھا۔’’میرا خیال ہے ایسا ہی ہے‘‘ میں نے جواب دیا۔وہ جیل سپرنٹنڈنٹ سے پوچھتے ہیں ’’کیا یہ آخری ملاقات ہے؟‘‘ ’’ہاں‘‘۔’’کیا تاریخ کا تعین ہوگیا ہے؟‘‘’’کل صبح‘‘ جیل سپرنٹنڈنٹ نے جواب دیا۔’’کتنے بجے؟‘‘ ’’جیل قواعد کے مطابق صبح 5بجے۔‘‘’’یہ اطلاع تمہیں کب ملی؟‘‘’’کل رات‘‘اس نے رکتے رکتے جواب دیا۔ میرے والد اسے نظر بھر کے دیکھتے ہیں۔اپنے اہل و عیال سے ملاقات کا کتنا وقت دیا گیا ہے۔’’نصف گھنٹہ‘‘’’جیل قواعد کے مطابق ہمیں ایک گھنٹے ملاقات کا حق ہے۔‘‘ وہ کہتے ہیں۔’’صرف نصف گھنٹہ‘‘ سپرنٹنڈنٹ دہراتا ہے۔ یہ میرے احکامات ہیں۔غسل اور شیو کرنے کا انتظامات کرو۔‘‘ میرے والد اس سے کہتے ہیں۔ ’’دنیا خوبصورت ہے، اسی حالت میں الوداع کہنا چاہتا ہوں۔‘‘’’صرف نصف گھنٹہ‘‘ اس شخص سے ملاقات کیلئے۔ صرف نصف گھنٹہ جو مجھے زندگی کی ہر شے سے زیادہ عزیز ہے۔ سینے میں درد سے گھٹن محسوس ہوتی ہے، مجھے رونا نہیں چاہئے، مجھے اپنے ہوش بھی نہیں کھونے چاہئیں کیونکہ اس طرح میرے والد کی اذیت بڑھ جائے گی۔وہ چند سگار جو ان کے وکلا چھوڑ گئے تھے میرے حوالے کرتے ہیں۔ ’’میں آج شب کیلئے صرف ایک رکھ لیتا ہوں۔‘‘ شالیمار کولون کی شیشی بھی رکھ لیتے ہیں۔ وہ اپنی انگوٹھی بھی مجھے دینا چاہتے ہیں لیکن میری والدہ ان سے کہتی ہیں ’’اسے پہنے رکھیں۔‘‘ وہ کہتے ہیں ’’اچھا ابھی میں رکھ لیتا ہوں لیکن بعد میں بینظیر کے حوالے کردی جائے گی۔‘‘
’’تم دونوں نے بہت تکالیف اٹھائی ہیں۔‘‘ وہ کہتے ہیں۔ ’’وہ آج مجھے قتل کرنے جارہے ہیں، میں تمہیں تمہاری مرضی پر چھوڑتا ہوں اگر چاہو تو جب تک آئین معطل ہے اور مارشل لانافذ ہے،پاکستان سے باہر چلے جائو۔ اگر زندگی نئے سرے سے گزارنا چاہتی ہو تو یورپ چلی جائو، میری طرف سے اجازت ہے۔‘‘ہمارے دل ٹوٹ رہے ہیں ’’نہیں نہیں‘‘ ممی کہتی ہیں۔ ’’ہم کبھی نہیں جائیں گے، ہم ملک چھوڑ کر چلے گئے تو اس عوامی پارٹی جس کی بنیاد آپ نے رکھی ہے کی رہنمائی کیلئے کوئی نہیں ہوگا۔سپرنٹنڈنٹ پکارتا ہے۔ ’’وقت ختم ہوچکا۔‘‘ میں سلاخوں کو پکڑتے ہوئے اس سے کہتی ہوں۔’’برائے مہربانی کوٹھری کا دروازہ کھول دو۔‘میں اپنے پاپا کو الوداع کہنا چاہتی ہوں۔‘‘سپرنٹنڈنٹ انکار کردیتا ہے۔سلاخوں کے درمیان سے میں اپنے والد کے جسم کو چھونے کی کوشش کرتی ہوں۔ وہ اس قدر نحیف و ناتواں ہوچکے ہیں لیکن وہ سیدھا اٹھ بیٹھتے ہیں اور میرے ہاتھ کو چھولیتے ہیں۔ ’’آج شب میں غلام دنیا سے آزاد ہوجائوں گا‘‘چہرے پر ایک چمکتی روشنی لئے کہتے ہیں۔
الوداع پاپا! میں والد کی طرف دیکھ کر پکار اٹھتی ہوں اور میری ممی سلاخوں میں سے ان کو چھولیتی ہیں۔ ہم گرد آلود صحن میں سے گزرتے ہیں۔ میں مڑکے پیچھے دیکھنا چاہتی ہوں لیکن حوصلہ نہیں ہوتا۔ مجھے معلوم ہے میں ضبط نہیں کرسکوں گی۔‘‘ ہم جب پھر ملیں گے اس وقت تک خدا حافظ‘‘ مجھے ان کی آواز سنائی دیتی ہے۔ 4اپریل 1979ء کو صبح صادق سے بھی بہت پہلے راولپنڈی سینٹرل جیل میں انہوں نے میرے والد کو قتل کردیا۔ نیند کی گولیاںجو میری والدہ نے مجھے کرب انگیز شب گزارنے کیلئے دی تھیں کھانے کے باوجود میں اپنے بستر سے گھبراہٹ کے عالم میں اٹھ بیٹھی۔ ’’نہیں پاپا نہیں۔‘‘ میرے رندھے ہوئے گلے میں سے چیخ نکل گئی۔میری والدہ اور میرے پاس ایک دوسرے کی تسلی کیلئے الفاظ بھی میسر نہیں تھے۔ہم دونوں صبح سویرے میرے والد کی میت کے ہمراہ جانے کیلئے تیار ہوگئے۔’’ہم وزیراعظم کے ساتھ جانے کیلئے تیار ہیں‘‘ میں نے سامنے کھڑے خوفزدہ چھوٹے جیلر کو بتایا۔’’وہ انہیں دفنانے کیلئے پہلے ہی لے جاچکے ہیںلیکن کچھ بچا کھچا سامان تھا میں لے آیا ہوں۔‘‘ ’ان کی انگوٹھی کہاں ہے؟‘‘ میں نے جیلر سے استفسار کیا۔میں نے اسے اپنے تھیلے میں ہاتھ مارتے دیکھا اور پھر اپنی جیبوں میں، آخرکار اس نے میرے والد کی انگوٹھی میرے حوالے کردی۔
مخلص دور اندیش، نڈر، قابل اور ذہین لیڈر کسی قوم کو اللہ تعالیٰ کی طرف سے ایک عظیم تحفہ ہوتا ہے۔ اللہ تعالیٰ نے ہمیں بھی قائداعظم کے بعد شہید ذوالفقار علی بھٹو اور شہید بینظیر بھٹو جیسے عظیم لیڈرز عطا کئے لیکن افسوس کہ عالمی سازشوں کے تحت انہیں ہم سے چھین لیا گیا۔ شہید بھٹو نے ہمیشہ نظریات پر سمجھوتے سے انکار کیا۔ ٹیپو سلطان کا یہ قول ان کے مدنظر رہا کہ ’’شیر کی ایک دن کی زندگی گیڈر کی سو سالہ زندگی سے بہتر ہے۔‘‘ شہید بھٹو اپنی جان کی قربانی دے کر ہمیشہ کیلئے امر ہوگئے جس کا اندازہ مجھ سمیت لاکھوں عقیدت مندوں کے گڑھی خدا بخش میں بھٹو کی برسی کے اجتماع سے لگایا جاسکتا ہے۔



.

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں