آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعرات 20؍ ذوالحجہ 1440ھ 22؍اگست 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
رمضان المبارک سے چند روز قبل اے این پی کے سربراہ اسفند یار ولی خان کراچی تشریف لائے ۔ اس موقع پر انہوں نے ایک بڑے جلسے سے خطاب کیا۔ بلاشبہ یہ مثالی جلسہ اے این پی کے صوبائی سربراہ سینیٹر شاہی سید کی کاوشوں کا مظہر تھا۔ جناب اسفند یار صاحب اگرچہ علیل تھے لیکن چھ سات سال بعد اے این پی نے سندھ بالخصوص کراچی میں چونکہ سیاسی سرگرمیوں کے دوبارہ آغاز کا فیصلہ کیا تھا اس لیے کارکنوں کی خواہش تھی کہ خان صاحب اس جلسے سے خطاب کریں۔ اے این پی پلِ صراط پر سے گزرتے ہوئے اس مقام تک آپہنچی تھی۔ لیکن نہ تو سرخ پوش کارکنان تھکے ہوئے نظر آئے اور نہ ہی ان کے قائدین طویل آزمائشوں کے باوجود کوئی شکوہ زبان پر لائے۔ دراصل یہ باچا خان کی تحریک ہی کا طرہ امتیاز ہے کہ راہِ حق میں زبان پر اُف تک نہیں لانا ہے۔ وگرنہ کیا کیا گراں مایہ اصحاب گزشتہ آٹھ سال میں دہشت گردوں کی سفاکی کا نشانہ بنے۔ خود اسفند یار ولی خان پر خود کش حملہ ہوا تھا،  محفوظ یوں رہے کہ جان نثار ساتھی جاں وار گئے۔آپ کو یاد ہوگا کہ ولی باغ میںجب ایک خودکش حملہ آور اسفندیار ولی کی جانب بڑھ رہاتھا، تو ایک سرُخ پوش یارزمین نے اُسے دبوچ لیا تھا ، اِس کشمکش میں یار زمین جان سے گئے لیکن قاتل کومزید ایک قدم بھی اپنے قائد تک اُ ٹھانے نہ دیا۔
جورُکے تو کوہ گراں تھے

ہم جو چلے تو جاں سے گرز گئے
رہِ یار ہم نے قدم قدم تجھے یادگار بنا دیا
مقام افسوس ہے کہ ایسی جماعت جو عدم تشدد کی علمبردار ہو، اور اسے ناکردہ گناہوں کی پاداش میں مصلوب کیا گیا ہو۔ وہ اگر میدان عمل میں آئی توجلسے والے روز ہونا تو یہ چاہئے تھا کہ پیپلز پارٹی کی سندھ حکومت جمہوری آزادیوں کا پیہم ثبوت دیتے ہوئے اسے تمام سہولتیں فراہم کرتی۔ مگر جلسے کے شروعات عین چھ بجے انتظامیہ کے کارندے سینیٹر شاہی سید کو پیغام دیتے رہے کہ جلسہ منسوخ کردیا جائے وگرنہ جلسہ گاہ کے بالکل سامنے عمارت سے اسٹیج پر حملہ کیا جاسکتا ہے۔یہ خوف ارزاں کرکے ایسے لگ رہا تھاکہ جیسےپی پی کو بھی اے این پی کی فعالیت قبول نہیں۔ یعنی جیسے بھٹو صاحب کے دورِ فسطائیت کی یاد تازہ کی جارہی تھی، جب ایک ہی صدا ’لاڑکانے چلو ورنہ تھانے چلو‘ کے ماسوا دوسری کسی آواز کو نام نہاد عوامی حکومت کے ہرکارے سننے کے روادارہی نہ تھے۔ اسفند یار صاحب ہمیشہ پیپلز پارٹی کی تعریف کرتے ہیں اور برحق آصف زرداری کی ستائش بھی! لیکن بہ وجوہ پیپلز پارٹی کی سندھ حکومت برُے وقتوں کی ساتھی اے این پی کی کراچی میں کھلے عام سرگرمیوں سے خائف نظر آرہی ہے۔ سینیٹر شاہی سید کا یہ کہنا بجا ہے کہ جلسے میں روڑے اٹکائے جانے پر بھلا میں اس سے زیادہ کیا تحمل کا مظاہرہ کرتا کہ پر جوش کارکنوں کو صبر کا درس دیتا لیکن پریس کانفرنس میں دنیا کو یہ بتا دیتا کہ ’’کہا جاتا ہے کہ کراچی میں امن ہے لیکن یہ کیسا امن ہے کہ جس میں دیگر تمام جماعتیں تو ’ رنگ رلیاں‘ مناتی ہیں، لیکن اے این پی کو اپنے کارکنوں و عوام سے بات تک نہیں کرنے دی جاتی!
یہ امر بھی قابل غور ہے کہ اگر انتظامیہ اس منصوبے سے آگاہ تھی کہ سبوتاژ یا دہشت گردی کا کوئی واقعہ رونما ہوسکتا ہے تو قانون کے لمبے ہاتھ گردن سے کیوں بندھے رہ گئے؟ ایسے عناصر کو گرفتار کیوں نہیں کیا گیا یا پھر کراچی میں امن قائم کرنے والی اصل قوت کو کارروائی کے لیے اعتماد میں کیوں نہیں لیا گیا۔ خیر پیپلز پارٹی جانتی ہے کہ کراچی میں یا تو بلوچ ان کے ساتھ تھے یا پھر ایسے پختون جو جلسہ گاہ کی ’’کرسیاں گننے ‘‘پر مامور تھے! بلوچ تو کب کے پیپلز پارٹی پرتبرا بھیج چکے جبکہ پختون بھی اب جئے بھٹو کی تھاپ پر دھمال ڈالنے سے رہے۔ کیونکہ وہ جان گئے ہیں کہ دھمال کا سارا کمال تو وڈیرے ہی لے اڑتے ہیں۔مختلف قومیتوں کی پی پی سے دوری کا یہی وہ خوف ہے جو پیپلز پارٹی کو دامن گیر ہے ۔ اب دیگر قومیتیں تو کیا خود سندھی بھی اس جماعت سے نالاں ہوچلے ہیں۔
ہماری جب اسفند یار ولی صاحب سے نشست ہوئی تو سندھ حکومت کے کردارکے حوالے سے ہمارے ایک سوال کے جواب میں  وہ پیپلز پارٹی پر تنقید سے گریزاں رہے، بلکہ صوبے کو پختونخوا کا نام دئیے جانے سمیت 18ویں ترمیم وغیرہ کے حوالے سے وہ جناب آصف زرداری کی توصیف کرتے رہے۔ لیکن کارکنوں میں بہر صورت پیپلز پارٹی کی حکومت کے حالیہ طرز عمل پر غم و غصہ پایا جاتا ہے۔یوں تو پی پی اور اےاین پی میں کوئی باضابطہ اتحاد نہیں، لیکن دونوں کو حلیف سمجھا جاتا ہے۔صوبائی حکومت کی حالیہ ’احمقانہ زورآوری‘ کے بعدایسا لگتا ہے کہ رفاقت رقابت اور قربت دوریوں میں بدل سکتی ہے ۔
خواہش تھی کہ جناب اسفند یار ولی سے ہونے والی گزشتہ روز کی گفتگو میں آپ کو شریک کیا جائے، لیکن سدِراہ پیارے بلاول کی جماعت پیپلز پارٹی بن گئی۔ جن کے دور حکومت کے متعلق حبیب جالب نے کہا تھا۔
وہی حالات ہیں فقیروں کے
دن پھرے ہیں فقط وزیروں کے
سازشیں ہیں وہی خلافِ عوام
مشورے ہیں وہی مشیروں کے
ہر بلاول ہے دیس کا مقروض
پائوں ننگے ہیں بے نظیروں کے
اے این پی کے سربراہ نے یوں تو جلسے میں مختلف قومی ایشوز پر کھل کر باتیں کی تھیں، لیکن اس پوری نشست میں وہ یہاں تک صبر کا دامن تھامے رہے کہ جب ہم نے عرض کیا کہ بعض سیاسی و مذہبی رہنما اورصحافی کل تک طالبان کیلئے نرم گوشہ رکھتے تھے ، یہاں تک کہ اُن کو اپنے بچے تک قرار دیتے رہے، ان کے ضامن بنے اور مذاکرات پر زور دیتے رہے ۔پھر جب کوئی ڈرون حملے میں مارا جاتا تو واویلامچ جاتا کہ یہ مذاکرات کو سبوتاژ کرنے کی امریکی سازش ہے۔ اب جب سے پاک فوج نے یہ لکیر کھینچ دی ہے کہ طالبان تو ’را‘ کے لئے کام کرتے تھے۔ تو کل تک ان کی حمایت کرنے والے مذہبی و سیاسی لیڈروں، صحافیوں و دانشوروںکو جیسے چپ کا روزہ لگ گیا ہو ۔ہم نے اےاین پی کے قائد سے سوال کیا کہ یا ان لیڈروں سے یہ نہیں پوچھا جانا چاہئے کہ آپ’ را ‘کے ان ایجنٹوں کی کیوں حمایت کررہے تھے اور ڈرون حملوں میں ان کی ہلاکتوں پر آپ کے بین و شور کی وجہ کیا تھی؟ اسفند یار ولی کے جواب میں حکمت تھی ۔ کہنے لگےاجتہادی غلطی تو خیر نہیں کہہ سکتے،ہاں ادراک کی کمی ہوسکتی ہے ، فتورِنیت کا مگر زیادہ امکان ہے، ایسے لوگ عوام کے سامنے ’بے پردہ‘ہوچکے ہیں، تاہم ہمیں ملک و عوام کی خاطر آگے دیکھنا چاہئے۔اسفندیار صاحب کا یہ کہنا صائب،کہ ہمیں آگے دیکھناچاہئے، مگرکھلے دماغ اور کھلی آنکھوں سے یہ بھی دیکھنا چاہئےکہ کہیں یہی عناصر پھر نیا ’اسائمنٹ لے کر تو نازل نہیں ہورہے!...



.