آپ آف لائن ہیں
ہفتہ 4؍شعبان المعظم 1439ھ 21؍اپریل2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
x

جون کے اوائل میں چھ خلیجی ممالک کے قطر پر دہشت گرد گروپوں کی مدد کا الزام عائد کرنے کے بعد اِس کی مکمل ناکہ بندی کر دی گئی تھی اگرچہ قطر نے اِن الزمات کی تردید کی تھی مگر اِن الزمات کے نتیجے میں خطے میں کشیدگی اور سیاسی عدم استحکام کی صورتحال پیدا ہوئی جو کہ عالم اسلام کے اتحاد کیلئے نقصان دہ ہے۔ خلیجی ممالک میں پیدا ہونے والی اِس نئی صف بندی کے پیش نظر امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن قطر اور دیگر عرب ریاستوں کے درمیان جاری سیاسی و سفارتی بحران کے خاتمے کیلئے اِن دنوں خلیجی ممالک کے دورے پر ہیں۔ اقوام عالم کی سُپر پاور ہونے کے ناتے یہ امریکہ کا اخلاقی فرض بھی ہے۔ امریکی وزیر خارجہ نے قطر کے امیر شیخ تمیم بن حماد الثانی اور اپنے ہم منصب سے ملاقات بھی کی جس میں اُنہوں نے سیاسی بحران کے خاتمے کیلئے اپنے عزم کا اظہار کیا۔ اس موقع پرقطر کی جانب سے دہشت گردی کی روک تھام کیلئے کی جانے والی کوششوں کو مزید فعال بنانے کیلئے دونوں ممالک نے ایک معاہدے پر دستخط کئے ہیں۔ یہ معاہدہ دہشت گردی کیخلاف جاری جنگ میں اپنی اہلیت ثابت کرنے اور خلیجی ملک کی طرف سے دہشت گردی کیلئے فنڈنگ کے مسائل سے متعلق ہے جبکہ قطری وزیر خارجہ کا اِس معاہدے کے حوالے سے کہنا تھا کہ اس یادداشت کا حالیہ خلیجی سفارتی بحران سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

دونوں ممالک کے مابین دہشت گردی کے خاتمے کے حوالے سے یہ یادداشت نہایت خوش آئند ہے۔ یہ آنے والے وقت میں دنیا کیلئے امن کی نوید ثابت ہوگی۔ متحدہ عرب امارات، پاکستان اور دیگر اسلامی ممالک کی خواہش اور کوشش ہے کہ قطر، سعودی عرب اور دیگر خلیجی ممالک کے درمیان کشیدگی ختم کرائی جائے۔ تمام اسلامی ممالک کو متحد ہو کر اور آپس کے اختلافات کو پس پشت ڈالتے ہوئے ایک صف میں کھڑے ہو جانا چاہئے تاکہ اسلام مخالف قوتیں اپنے مذموم مقاصد میں کامیاب نہ ہو سکیں۔

​​
Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں