آپ آف لائن ہیں
جمعہ 10؍محرم الحرام 1440ھ 21؍ستمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

الیکشن کمیشن کی طرف سے ابھی تک انتخابی شیڈول کا اعلان نہیں ہوا اور نہ ہی کیئر ٹیکر حکومت بنی مگر ہر صوبے میں عوامی دنگل شروع ہوچکے ہیں ۔اور ہر پارٹی اپنے آپ کو معصوم ثابت کرکے بجلی ،گیس اور مہنگائی کا ذمہ دار دوسری پارٹی کو ٹھہرانے میں ایڑی چوٹی کا زور لگارہی ہے ۔قوم کی بدقسمتی تو دیکھئے یہ دونوں بڑی پارٹیاں پی پی پی اور مسلم لیگ ن ،ق اور اب ش گزشتہ مارشل لائوں کے درمیان مسلسل حکومتیں کرتی رہیں اور کھل کر کرپشن ،مہنگائی اور بجلی ،گیس ،پانی کے بحران پیدا کئے۔اربوں نہیں کھربوں روپے کے گھپلے ہوتے رہے اور سب خاموشی سے دیکھتے رہے اور کچھ نہ کرسکے ۔صرف 2سال سے جب سے پانامہ لیکس کا کردار سامنے آیا تو سب ہی یکے بعد دیگرے متحرک ہوگئے۔ خاص طور پر جب فوج نے کراچی آپریشن کیا تو سب کے بھیانک چہرے ایک ایک کرکے سامنے آتے گئے ہرطرف اور ہرصوبے میں کرپشن کا راج تھا جو سیاست دان اپنے اپنے صوبوں کے بیوروکریٹس کے ساتھ مل کر ایک طرف عوام کو بیوقوف سمجھ کر اُن کی دولت رشوت کک بیک نوکریوں کے بدلے لوٹ کر اپنی اور اپنے رفقاء کی جیبیں بھر رہے تھے ۔ریاستی ادارےاگر ہاتھ ڈالتے تو پارٹی والے شور مچاتے کہ ان کے ساتھ ظلم ہورہا ہے اور ثبوت ہونے کے باوجود وہ اندھے قانون کی آڑ میں چھوٹ جاتے۔ عدلیہ،فوج ،نیب اورایف آئی اے سب

دیکھتے رہ جاتے ۔سب سے بدقسمت شہر کراچی تھا جس میں ایم کیو ایم ،پی پی پی حکومت سے مل کر دہشت گردی پھیلاتی تو پی پی پی اپنی ہی بنائی گئی امن کمیٹی کے کارندوں کے ساتھ بھتہ اور قتل و غارت گری کا بازار گرم اور لیاری اور ملیر کے غنڈوں سے ایم کیو ایم سے مقابلہ کرتی اگر بھائی بگڑ جاتے تو سینیٹر رحمان ملک کو لند ن بھجواکر خاموشی سے ان کے مطالبات پورے کردیئے جاتے ۔اس طرح دونوں بڑی پارٹیوں کے ہاتھوں محب وطن عوام خصوصاً مہاجرین ان کا نشانہ بنتے تھے ۔ووٹ عوام ایم کیو ایم کو دیتے اُس کا بدلہ پی پی پی والے یہ کہہ کر لیتے کہ اور دو ووٹ ایم کیو ایم کو۔ پھر گزشتہ 10سالوںمیں ایک ایک کرکےکراچی کے ادارے سندھ حکومت کے ماتحت ہوتے گئے ۔پہلے کے ڈی اے، پھر کے بی سی اے ،واٹربورڈ ،کے ایم سی ،کراچی کا روڈ ٹیکس سب چھین لئے گئے ۔اب جب نئے الیکشن کی آمد ہے تو پی پی پی نے میدان میں بلاول بھٹو کو اتارا کہ وہ نووارد ہیں کراچی والوں کو قابو کریں ۔پوری سندھ انتظامیہ کراچی کے جلسے کو کامیاب کرانے میں اور ایم کیوایم کو نیچا دکھانے میں لگ گئی ۔بلاول نے جئے بھٹو کی صدالگاتے ہوئے فرمایا ہم نے کراچی میں امن قائم کیا رونقیں بحال کیں وغیرہ وغیرہ ہم آگئے تو کراچی کو پھر سے روشنیوں والا شہر بنادیں گے، یہ کریں گے وہ کریں گے۔ وہ بھول گئے چند ماہ قبل ایک صوبائی الیکشن میں کراچی والوں نے پی پی پی کراچی کے صدر سعید غنی کو جتواکر موقع فراہم کیا ، انہوں نے اپنے ضمنی الیکشن میں بلوچ کالونی کی سڑکوں کی تعمیر کا وعدہ کیا تھا آج تک ایک انچ سڑک نہیں بن سکی، پورے کراچی کی بدحالی کیسے دُور کریں گے ۔سعید غنی کی طرح وہ بھی اپنے علاقے میں نظر نہیں آئیں گے ۔اگر بلاول بھٹو مہاجروں سے مخلص ہیں تو سندھ سے خود کوٹہ سسٹم ختم کریں اور سندھ کی آبادی نادراکے شناختی کارڈ کے تحت جاری کریں اور الیکشن کے بعد صوبہ کراچی کے لئے ریفرنڈم کا اعلان کریں ۔تب وہ امید کریں کہ مہاجروں کی تمام سیٹیں حاصل کرسکتے ہیں یا اگر کوئی دوسری پارٹی یہ اعلان کرتی ہے تو وہ سند ھ کے الیکشن جیت سکتی ہے۔
پی ٹی آئی کے عمران خان بھی دوبارہ کراچی میں ایم کیو ایم کی جگہ لینے کی بھر پور تیاریوں میں لگے ہوئے ہیں چند سیٹیں کراچی میں ان کو ملی تھیں ۔اُس کے بعد پورے 5سال وہ ایک رات بھی کراچی میں نہیں گزار سکے مسائل کیسے حل کریں گے ؟میاں نواز شریف نے بھی گزشتہ اقتدار میں ایک رات بھی نہیں گزاری ۔البتہ مشرف طیارہ کیس میں کراچی جیل میں ضرور راتیں گزاریں اور ان کو کھاناپہنچانے والے محسن کو پاکستان کا صدر بناکر کراچی والوں پر احسان کردیا گیاہے ۔
ایک اصل معرکہ عمران خان اور شہباز شریف کے درمیان ہوتا نظر آرہا ہے کیونکہ شہباز شریف اور میاں نواز شریف نے قومی اور صوبائی بجٹوں کی دو تہائی رقم سے لاہور کو اتنا جگمگادیا ہے کہ لاہوری اس احسان تلے دبے ہوئے ہیں شاید وہ یہ احسان اتار دیں ۔مگر ابھی مسلم لیگ ن گرداب میں ہے کبھی وہ اسٹیبلشمنٹ کو الزام دیتی ہے تو کبھی وہ عدلیہ کوآنکھیں دکھاتی ہے ۔بے چاری پی پی پی کا بوریا بستر بظاہر تو ان دونوں بھائیوں نے پنجاب سے گول کردیا ہے اگر بلاول بھٹو کوئی کرشمہ دکھاکر اپنی والدہ مرحومہ کا واسطہ دے کر پنجاب میں کامیابی حاصل کرنے میں کامیاب ہوگئے تو معلوم نہیں ۔
رہا صوبہ خیبر پختون خوا،وہاں مولانا فضل الرحمٰن ایک مرتبہ پھر ایم ایم اے بنانے میں کامیاب ہوگئے ہیں اگر دوبارہ مذہبی بازار سجا تو وہ مسلم لیگ ن کو ملاکر عمران خان کو ٹف ٹائم دینے کی کوشش کریں گے ۔صوبہ سندھ کا اندرونی ووٹر ابھی تک تذبذب میں ہے اگر کوئی مشترکہ اتحاد بن گیا تو پھر پی پی پی کو شکست ہوسکتی ہے سو ابھی کچھ نہیں کہہ سکتے ۔
رہا بلوچستان کے الیکشن میں کیا ہوگا ،فی الحال سینٹ کے الیکشن اور صوبائی بغاوت کے اثرات ابھی تک زائل نہیں ہوئے۔ فی الحال کوئی پیش گوئی نہیں کی جاسکتی ۔ ابھی تک کوئی اشارے بھی نہیں ملے ۔قوم کو انتظار کرنا پڑے گا جب تک الیکشن کا بازار گرم نہیں ہوتا شطرنج کے مہرے کس طر ف جاتے ہیں۔ ستارہ شناس اس الیکشن کے بارے میں میاں صاحب کے مستقبل کو اندھیروں میں جاتا دیکھ رہے ہیں ،ساتھ ساتھ وہ عمران خان کو وزیراعظم کی مسند پر بھی نہیں دیکھ رہے ۔ وہ کڑے احتساب کا عندیہ قبل از الیکشن بتاتے ہیں،واللہ اعلم ۔ پیرنی صاحبہ کے کرشمےکا اب پتہ لگے گا۔اگر احتساب اقاموں کا شروع ہوا تو ایسے ایسے بڑے نام آئیں گے کہ سب دنگ رہ جائیں گے۔ بقول شاعر
میرے ساقی کو نظریں اٹھانے تودو
جتنے خالی ہیںجام سب بھر جائیں گے
(کالم نگار کے نام کیساتھ ایس ایم ایس اور واٹس ایپ رائےدیں00923004647998)

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں