آپ آف لائن ہیں
جمعہ 7؍ شوال المکرم 1439ھ 22؍ جون2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

آرمی چیف کی کابل میں صدر، چیف ایگزیکٹو، امریکی کمانڈر سے ملاقات، باڑ دہشت گردوں کیلئے ہے عوام کیلئے نہیں، جنرل باجوہ

آرمی چیف کی کابل میں صدر، چیف ایگزیکٹو، امریکی کمانڈر سے ملاقات، باڑھ دہشت گردوں کیلئے ہے عوام کیلئے نہیں، جنرل باجوہ

راولپنڈی (پ ر؍نیوز ایجنسیز) پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ دورہ کابل میں افغان صدر اشرف غنی، چیف ایگزیکٹیو عبداللہ عبداللہ اور امریکی کمانڈر ریزولیوٹ سپورٹ مشن جنرل جان نکلسن سے ملاقاتوں کے بعد وطن واپس پہنچ گئے۔ جنرل قمر جاوید باجوہ نے افغان صدر سے ون آن ون ملاقات اور پھر وفود کی سطح پر ملاقات کی۔ملاقات کے دوران آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ پاک افغان سرحد پر باڑ عوام کیلئے نہیں دہشت گردوں کیلئے بڑی رکاوٹ ہے۔پاک فوج کے ترجمان میجر جنرل آصف غفور نے سوشل میڈیا اکاؤنٹ پر جاری بیان میں بتایا کہ آرمی چیف نے اپنے دورہ کابل کے دوران افغان حکام کو طالبان کے ساتھ عید الفطر کے موقع پر کی جانے والی فائر بندی پر مبارکباد دی اور خواہش کا اظہار کیا کہ ایسے اقدامات پر عمل درآمد دیرپا امن کیلئے اچھی پیش رفت ہیں۔ جنرل قمر جاوید باجوہ نے اس عزم کو دہرایا کہ امن و ترقی کسی ملک کیلئے نہیں خطے کیلئے ضروری ہے، پا کستا ن میں امن و استحکام بحال کرنے کے بعد

x
Advertisement

ہماری توجہ اور کوششیں سماجی معاشی ترقی پر مرکوز ہیں جو دیر پا امن و استحکام کا راستہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور افغا نستا ن کے درمیان حال ہی میں طے پانے والے ایکشن پلان سے توقع ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان تعاون اور رابطے جاری رہیں گے۔ میجر جنرل آصف غفور کے مطابق مذا کرا ت میں متعدد معاملات بشمول افغانستان میں امن مذاکرات کیلئے کی جانے والی حالیہ کوششوں پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔اس کے علاوہ مذاکرات میں داعش کے بڑھتے ہوئے اثر و رسوخ کو جانچنے کیلئے اقدامات اور دہشت گردوں کی جانب سے مشکل سرحدی علاقے کو دہشتگردی کے لئے استعما ل کرنےکے معاملات پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔ افغان صدر اشرف غنی نے آرمی چیف کی کابل آمد اور امن و استحکام کیلئے حال میں اٹھائے گئے اقدامات پر ان کا شکریہ ادا کیا۔ اس موقع پر افغان صدر نے خطے میں ترقی، عارضی جنگ بندی میں توسیع اور امن مذاکرات کے حوالے سے اپنا وژن بھی شیئر کیا۔افغان چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ نے بھی آرمی چیف کا افغانستان آمد اور افغانستان پاکستان ایکشن پلان برائے امن و استحکام کے لیے اقداما ت پر شکریہ ادا کیا۔ امریکی جنرل جان نکلسن سےگفتگومیں آرمی چیف نے کہا کہ پاکستان کی خواہش ہےکہ امریکی اورنیٹوفورسزکامیاب ہوں اورپرامن و مستحکم افغانستان چھوڑ کر جائیں۔ قبل ازیں ایوان صدر آمد پر آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کو گارڈ آف آنر پیش کیاگیا۔ سیکرٹری خارجہ،ڈی جی آئی ایس آئی،افغانستان میں پاکستانی سفیر اور دیگر سینئرحکام جنرل باجوہ کیساتھ تھے ۔ واضح رہے کہ جنرل قمر جاوید باجوہ کو دورہ افغانستان کی دعوت افغان صدر اشرف غنی نے دی تھی۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں