آپ آف لائن ہیں
بدھ8؍ محرم الحرام1440ھ 19؍ستمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
’اسپین اور پاکستان کے درمیان دوطرفہ تجارت میں اضافہ خوش آئند ہے

ا سپین اور پاکستان کے درمیان درآمدات و برآمدات میں اضافے ، حجم کی سالانہ شرح میں بڑھوتری اور پاکستانی و ہسپانوی کمیونٹی کو پاکستان میں سرمایہ کاری جیسے موضوعات پرتبادلہ خیال کےلئے میڈرڈ کے سفارت خانے میں تعینات بزنس قونصلر ڈاکٹر حامد علی نے قونصلیٹ جنرل آف پاکستان بارسلونا میں قونصل جنرل علی عمران چوہدری کے ہمراہ پاکستانی میڈیا اور کاروباری برادری سے ملاقات کی اور انہیں مذکورہ عوامل کی افادیت کے حوالے سے بریفنگ دی ۔

بریفنگ کے دوران بزنس قونصلر نے بتایا کہ پاکستان کو 2013سے ملنے والی جی ایس پی پلس سہولت جاری رہنے کا اعلان کسی تحفے سے کم نہیں ۔ رواں سال فروری میں اسپین میں پاکستانی سفارت خانے نے اِس رعایتی پیکیج کوبرقرار رکھنے کے لئے دِن رات لابنگ کی ۔

’اسپین اور پاکستان کے درمیان دوطرفہ تجارت میں اضافہ خوش آئند ہے

کمرشل سیکشن اِس حوالے سے ممبر یورپین پارلیمنٹ سجاد کریم کے ساتھ ساتھ ہسپانوی ممبرز سے ملاقاتوں میں پیش پیش رہا ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کے مدمقابل بنگلہ دیش ہے جسے کوٹہ فری اور ڈیوٹی فری کی سہولت حاصل ہے۔ 2017سے یہی سہولت سری لنکا کو بھی مل چکی ہے۔ بھارت ایک بڑی مارکیٹ ہے اور اگر انڈیاجی ایس پی ہونے کے ساتھ ساتھ فری ٹریڈ ایگریمنٹ حاصل کر لیتا ہے تو یورپی ممالک میں پاکستان کی مصنوعات کاکیرئیر ختم ہونے کا خدشہ اپنی جگہ موجود ہے۔

اِسی خدشے کے پیشِ نظر یورپی یونین میں سیکرٹری جنرل ’لوپیز وائٹ‘ ہسپانوی سیاسی پارٹیوں کے ممبران یورپی پارلیمنٹ سے ملاقات کرنا ضروری تھا۔ اِنٹا کمیٹی کی ممبر اورہسپانوی سیکرٹری فارن افیئرز کے ساتھ ساتھ ایمنسٹی انٹرنیشنل، پی میک اور 4سو سال سے قائم این جی او ’’فومنٹ‘‘ کے نمائندوں سے ملاقاتیں بھی ہوئیں ، ہسپانوی سیکرٹری کامرس، اسپوک پرسن پاپولر پارٹی، سوشلسٹ پارٹی کے ممبرز یورپی پارلیمنٹ سے ملاقاتوں میں پاکستان کے لئے لابنگ ہوئی،اسپین اور پاکستان کے سیکرٹری خارجہ مذاکرات بھی جی ایس پی پلس ریویو کی کامیابی میں بڑی اہمیت کے حامل ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ جی ایس پی پلس کے بدلے پاکستان نے اقوام متحدہ سے 27کنونشنز کی شکل میں کئے گئے معاہدوں پر سختی سے عمل درآمد کیا۔

’اسپین اور پاکستان کے درمیان دوطرفہ تجارت میں اضافہ خوش آئند ہے

دوسری طرف اسپین اورپاکستان کی درآمدات و برآمدات کی شرح میں اضافہ بہت خوش آئند ہے،جولائی تا نومبر2017 تک دونوں ممالک کے درمیان تجارت کی شرح 485ملین ڈالر ہے جبکہ 2016کے پورے سال میں یہی شرح 379ملین ڈالرتھی۔ تجارت کی یہ شرح پانچ ماہ میں 106ملین ڈالر اور 28فیصد اضافے کے ساتھ سامنے آئی ہے۔ جنوری تا نومبر 2017تجارت 965ملین ڈالر تھی اب تاریخ میں پہلی ایساہو رہا ہے کہ یہ تجارت ایک بلین ڈالرز سے تجاوز کر گئی ہے۔

انہوں نے بتایا کہ پاکستان سے اسپین کے لئے سوئیٹرز، ٹیکسٹائل، گارمنٹس، جینز، ہوم ٹیکسٹائل فٹ ویئر، فارما سوٹیکل، اسٹیپل فائبرزاور اسپورٹس کا سامان بھیجا جاتا ہے جبکہ اسپین سے پاکستان کے لئے مشینری، بوائلرز، میکینکل، کنسٹرکشن مشینری، سرامکس، کیمیکل، دفاعی آلات کے ساتھ ساتھ اورگینک کیمیکل، ادویات اور جانوروں کی نگہداشت کی اشیاء بھیجی جاتی ہیں۔

اسپین کی بہت سی کمپنیز نے پاکستان میں جا کر سرمایہ کاری کرنا شروع کر دی ہے۔ سب سے بڑی ہسپانوی کمپنی ’’اِندرا‘‘ جو انفارمیشن ٹیکنالوجی ،سول ایوی ا یشن کے ساتھ ریڈار سسٹم پر کام کر رہی ہے اْس نے پاکستان ایئر فورس کے ساتھ تھنڈر جے ایف 17کے پائلٹس کی ٹریننگ کا معاہدہ بھی کیا ہے۔

ہسپانوی کمپنی ’’گیمسا‘‘ نے ونڈ انرجی پر سرمایہ کاری کی ہے۔ اسی طرح دوسری ہسپانوی بڑی کمپنیوں میں کارتے فیل، اینڈی ٹیکس، ’’زارا‘‘ مینگو نے اور اپنی دوسری پروڈکٹس کو پاکستان میں بیچنا شروع کر دیا ہے۔ اسپین سے پاکستان کے لئے ماہانہ 40سے90بزنس ویزے جاری کئے جاتے ہیں جس کی بدولت ہسپانوی تاجر پاکستان میں سرمایہ کاری کرنے جا رہے ہیں۔

ون ونڈو آپریشن کے ساتھ ساتھ حکومت پاکستان نے ہسپانوی بزنس مینوں کے لئے نئی سہولت کا آغاز کر دیا ہے کہ اگر کوئی ہسپانوی باشندہ بغیر ویزے کے فوری پاکستان جانا چاہے تو سفارت خانے میں تعینات کمرشل قونصلر اْس کو ایک لیٹر ایشو کرے گا جس پر سفر کیا جاسکے گا۔ پاکستان ایئر پورٹ پر اترتے ہی اسے ویزہ مل جائے گا۔اسی طرح ’’آئی سے کس‘‘ ACCIO اور ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی آف پاکستان کے مابین ایک MOUسائن ہونے جا رہا ہے جس کے تحت دونوں ممالک کے بزنس وفود کے دورے یقینی بنائے جائیں گے۔

اندالوسیہ ایجنسی فار فارن پروموشن بھی پاکستان کے ساتھ تجارتی تعاون پر رضا مند ہو گئی ہے۔ پاکستان اور اسپین کے مابین بڑھتی ہوئی تجارت کی شرح کو دیکھتے ہوئے یہ ضروری ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان ایک JTC ’’جوائنٹ ٹریڈنگ کمیشن‘‘ بنایا جائے جو سفارت خانوں کے کمرشل سیکشن کو سہولتیں دینے، بزنس ویزوں میں آسانی، سرمایہ کاری کے لئے نئے پروجیکٹس اور دونوں ممالک کی مختلف وزارتوں اور بزنس وفود کے سرکاری دوروں کا اہتمام کرے۔

بزنس قونصلر ڈاکٹر حامد علی نے بتایا کہ ان عوامل پر کام شروع ہو گیا ہے۔ بے شک جس کا خاطر خواہ فائدہ پاکستان کی معیشت کو ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ اسپین میں مقیم جن پاکستانیوں نے بزنس میں ترقی کی ہے انہیں چاہیے کہ وہ ہسپانوی تاجروں کو قائل کریں کہ وہ پاکستان میں سرمایہ کاری کریں جس کے لئے پاک چائنا اقتصادی راہداری بہترین ٹارگٹ ثابت ہو سکتا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ پاکستانی کامیاب بزنس مین بھی ان ممالک کے ساتھ ساتھ پاکستان کے مختلف سیکٹرز میں سرمایہ کاری کرکے وطن عزیز کی ترقی میں اپنا کردار ادا کریں۔

اس کے جواب میں چوہدری امانت حسین مہر نے کہا کہ ہم پاکستان میں سرمایہ کاری ضرور کریں گے اور اپنے ہسپانوی دوستوں کو بھی قائل کریں گے کہ وہ پاکستان میں جا کر سرمایہ کاری کریں لیکن اس کے لئے ہمیں سفارت خانہ پاکستان میڈرڈکا مکمل تعاون درکار ہو گا ، جواب میں بزنس قونصلر نے کہ جس کان سے پاکستان کی معیشت کو فائدہ ہواس سلسلے میں تعاون دینے کے لئے سفارت خانےکے دروازے چوبیس گھنٹے کھلے ہیں ۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں