آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعرات6؍ ربیع الاوّل 1440ھ 15؍نومبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

بھارت کے سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کھانے پینے کے انتہائی شوقین سمجھے جاتے تھے۔ان کے ساتھیوںکو انہیں بےجا کھانے سے روکنے کے لئے مختلف بہانے بنا نے پڑتے تھے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق گزشتہ روز اٹل بہاری واجپائی کے انتقال کر جانے کے بعد ان کے قریبی ساتھیوں اور صحافیوں نے ان کے کھانے سےرغبت کےقصّے یاد کئے۔

انہوں نے بتایا کہ واجپائی میٹھے اور سمندری غذا کے بے انتہا شوقین تھے۔ ایک سینئر صحافی رشید کدوائی نے اس وقت کو یاد کرتے ہوئے بتایا کہ ایک دفعہ سرکاری دورے کے دوران دوپہر کے کھانے پر واجپائی فوڈ کاؤنٹر پہنچ گئے جہاں میٹھے میں گلاب جامن بھی موجود تھے، واجپائی کو ان دنوں ڈاکٹروں نے پرہیز بتایا تھا۔

اس سے پہلے کہ واجپائی کی نظر گلاب جامنوں پر جاتی اور ان کا دل للچاتا، ان کے ساتھیوں نے ان کا دھیان بٹانے کے لئے ایک منصوبہ بنایا۔انہوں نے جھٹ سے وہیں موجود بالی وڈ کی معروف اداکارہ مادھوری ڈکشٹ سے ان کی ملاقات کرادی۔

پھر کیا تھا دونوں فلموں سے متعلق باتوں میں لگ گئے اور اسی دوران ان کے ساتھیوں نے بڑی مہارت سے سامنے رکھے وہ گلاب جامن غائب کردیے۔

جن بیورو کریٹس نے واجپائی کے ساتھ کام کیا، ان کا کہنا ہے کہ ’ چاہے وہ کلتہ کے پکوڑے ہوں، حیدرآباد کا حلیم یا بریانی ہو یا لکھنؤ کا گلاوٹی کباب ہوں ، واجپائی اکثر ان پر ہاتھ صاف کرتے نظر آتے تھے، وہ پکوڑوں پر بے تحاشا چاٹ مصالحہ چھڑک کر کھاتے تھے اور ساتھ چائے کے چسکے لیتے تھے۔

واجپائی کے ایک قریبی ساتھی نے بتایا کہ واجپائی اکثر و بیشتر کابینہ کے اجلاس کے دوران نمک والی مونگ پھلیاں کھاتے رہتے تھے۔

ایک صحافی جو اکثر واجپائی کے ساتھ سفر کرتا تھا،نے واجپائی کو سب سے آرام دہ وزیر اعظم قرار دیا ، واجپائی کا کہنا تھا کہ میں صرف کام کے لئے سفر پرنہیں جاتا بلکہ جہاں جاتا ہوں وہاں کے کھانوں سے بھی لطف انداز ہو تا ہوں ۔‘

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں