آپ آف لائن ہیں
بدھ8؍ محرم الحرام1440ھ 19؍ستمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

پیپلز پارٹی کے رہنما شرجیل میمن کے کمرے سے برآمد ہونے والی شرا ب کی بوتلوں کے حوالے سے ایڈیشنل آئی جی پولیس کراچی امیر شیخ نے معاملے کی تحقیقات کے لئے ڈی آئی جی ساؤتھ کی سربراہی میں کمیٹی قائم کردی ہے۔

ڈی آئی جی ساؤتھ جاوید عالم اوڈھو کی سربراہی میں قائم ہونے والی کمیٹی ایک ہفتے میں رپورٹ پیش کرے گی ۔

ایس ایس پی انویسٹی گیشن ساؤتھ عبداللہ جان ، اور ایس ایس پی انویسٹی گیشن ایسٹ ، شبیرمیمن تحقیقاتی ٹیم کا حصہ ہیں ، ٹیم کی تشکیل کا نوٹی فیکیشن جاری کردیا گيا ہے ، تحقیقاتی ٹیم کراچی پولیس کےکسی بھی افسریارکن سےمعاونت حاصل کرسکتی ہے۔

پولیس کے مطابق بوتلوں کے کیمیکل ایگزامینرسےشہد،زیتون کےتیل کاتجزیہ کرایاجائےگا ٹیسٹ کیلئےشرجیل میمن کےخون کےنمونےنجی اسپتال بھیجےگئےہیں ، یہ رپورٹس پیر کو ملیں گی۔

ڈی جی آئی جی جیل ناصر آفتاب کہتے ہیں شرجیل میمن کو سینٹرل جیل کراچی میں بی کلاس دی گئی ہے،رکن صوبائی اسمبلی ہونےپرشرجیل میمن کوقواعدکےمطابق سہولتیں دی گئیں۔

ڈی آئی جی جیل کے مطابق بوٹ بیسن تھانےمیں درج مقدمےمیں شرجیل میمن کے3ملازمین شکردین،محمد جام اورمحمد مشتاق علیگرفتار ہیں،ملزمان کوجوڈیشل مجسٹریٹ ساؤتھ عدالت نمبر15 میں پیش کیا گیا۔عدالت نےگرفتار ملزمان کو 15 ستمبر کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔

اسپتال کے کمرے جسے سب جیل قرار دیا تھا وہاں سے شراب کی بوتلیں ملنے کا مقدمہ گیارہ گھنٹے بعد انتہائی کمزور مقدمہ درج کیاجا چکا ہے ، ایف آئی آر میں شرجیل میمن کو کلین چٹ مل گئی،مقدمے میں ملزم کو ہی مدعی بنادیا گیاہے، جیل اہل کار اور افسران کو بھی بچایا گیا ہے،شراب کا ملبہ شرجیل میمن کے ملازمین پرڈال دیا گیا ہے۔

درج کی جانے والی ایف آئی آر میں چیف جسٹس کے اچانک دورے کا بھی کوئی ذکر نہیں ہے تاہم معاملے کو طول دینے کیلئے تحقیقاتی کمیٹی قائم کر دی گئی ہے۔

جیل سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق شرجیل میمن کو سینٹرل جیل میں بی کلاس سے بھی آگے کی سہولیات دستیاب ہیں۔ انہیں کئی خدمت گار فرام کیے گئے ہیں۔

شرجیل میمن مسلسل موبائل فون استعمال کررہے ہیں اور انہیں کھانا بھی گھر سے فراہم کیا جارہا ہے۔ ذرائع کے مطابق انہوں نے نجی اسپتال سے سنٹرل جیل منتقلی کے بعد پہلی رات سپریٹنڈنٹ جیل کے کمرے میں گزاری ہے۔ تاہم جیل حکام کی جانب سے اس کی تردید کی گئی ہے۔ ذرائع کے مطابق جیل قواعد کے برخلاف کئی سیاسی رہنماؤں نے ہفتے کی رات شرجیل میمن سے جیل میں ملاقاتیں کی ہیں۔

واضح رہے کرپشن کیس میں گرفتار شرجیل میمن کو بیماری کے باعث کراچی کے نجی اسپتال منتقل کیا گیا تھا جہاں ان کے کمرے کو سب جیل قرار دیا گیا تھا، تاہم گذشتہ روز چیف جسٹس کے اسپتال کے دورے کے موقع پر شرجیل میمن کے کمرے سے شراب کی بوتلیں برآمد ہوئي تھیں ، جس کےبعد عدالت کے حکم پر شرجیل میمن کو دوبارہ سنٹرل جیل منتقل کردیا گیا ۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں