آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
پیر9؍ربیع الثانی 1440ھ 17؍دسمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

ناک میں خارش کی غیرمہذب سمجھی جانےوالی عادت حقیقت میں بھی خطرناک ہوسکتی ہے۔

نئی تحقیق کے مطابق خطرناک بیماری نمونیا کےجراثیم ہاتھوں سے ناک میں پھیل سکتے ہیں۔ماہرین کے مطابق نمونیا بہت چھوٹے اورعمر رسیدہ افراد کو خاص طور پر بہت نقصان پہنچا سکتا ہے،اس سے ہر سال لاکھوں افراد موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔

تحقیق کرنےوالوں کا کہنا ہےکہ جہاں کھانسی اور چھینک کے وقت جراثیم کے پھیلاؤ سے بچنا ضروری ہے وہیںناک کو ہاتھ لگاتے وقت بھی احتیاط سے کام لینا چاہیے۔

ماہرین نے والدین کو خبردار کیا ہے کہ بچوں کو ہر وقت ناک میں انگلی ڈالنے یا خارش کرنے سے نہیں روکا جا سکتا لہٰذاکھلونوں سے کھیلنے اور کسی دوسرے سے ہاتھ ملانے کے بعد بچوں کے ہاتھ لازمی دھلوادیں۔

واضح رہے نمونیا پھیپھڑوں کی خطرناک بیماری ہے۔ عام طور پر بچے اور عمر رسیدہ افراد اس بیماری کا شکار ہوتے ہیں۔ یہ فنگس ،بیکٹریا اور وائرس کے سبب پھیلتا ہے۔ پاکستان میں ہر سال 80 ہزار سے زائد بچے نمونیا کا شکار ہو کر انتقال کر جاتے ہیں۔

ایک محتاط اندازے کے مطابق دنیا بھر میں ہر سال 5 لاکھ عمر رسیدہ افراد اس مرض کی وجہ سے جانبر نہیں ہو پاتے۔

نمونیا نظام تنفس کے ذیلی راستے میں انفیکشن ہونے سے ہوتا ہے جسے پھیپھڑوں کا انفیکشن کہا جاتاہے۔ نمونیا کے زیادہ تر کیس وائرس کے سبب ہوتے ہیں اور یہ نزلہ و زکام کی علامات کے بعد ظاہر ہو سکتے ہیں۔ بیکٹیریا کے سبب نمونیا کے کیسوں کی تعداد کم ہوتی ہے۔ بچوں میں نمونیا کی علامات مختلف ہو تی ہیں۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں