آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
پیر 12؍صفر المظفّر 1440ھ 22؍اکتوبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

اس وقت عالمی سطح پر 82 کروڑ انسان بھوک اور کم خوراکی کا شکار ہیں۔ تازہ عالمی اشاریے کے مطابق گزشتہ دو برس کے دوران بین الاقوامی مسلح تنازعات اور جنگوں کی وجہ سے اس تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔

جرمن میڈیا نے عالمی سطح پر فاقہ کشی، بھوک اور کم خوراکی سے متعلق اعداد و شمار پر مبنی انڈیکس کے حوالے سے کہا ہے کہ اس وقت کرہ ارض پر 82 کروڑ انسانوں کو زندہ رہنے کے لیے یا تو کوئی خوراک دستیاب نہیں یا پھر وہ تشویش ناک حد تک کم خوراکی کا شکار ہیں۔ ان میں وہ قریب ساڑھے 12 کروڑ انسان بھی شامل ہیں، جن کی بھوک کا مسئلہ انتہائی شدید ہو کر فاقہ کشی بن چکا ہے۔

رپورٹ کے مطابق 2000ء سے اب تک بھوک کے خاتمے کی عالمی کوششوں کو اُن جنگوں اور مسلح تنازعات سے شدید خطرات لاحق ہیں، جو مختلف خطوں میں جاری ہیں۔

اس انڈیکس کے مطابق اس وقت دنیا کا بھوک اور کم خوراکی سے سب سے زیادہ متاثرہ خطہ براعظم افریقہ کا زیریں صحارا کا علاقہ ہے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں