آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
ہفتہ15؍ رجب المرجب 1440ھ 23؍مارچ2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

پاکستان کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد کا کہنا ہے کہ سال 2018 میں مجموعی طور پر ٹیم کی کارکردگی بہتر رہی ، البتہ یونس خان اور مصباح الحق کی کمی محسوس کی گئی ، قومی ٹیم کےکوچ مکی آرتھر نے کہا کہ لارڈز ٹیسٹ ، آسٹریلیا کے خلاف سیریز اور ٹی ٹوئنٹی میں فتوحات قابل ذکر ہیں ۔

پی سی بی کے اعلامیہ کے مطابق کپتان سرفراز احمد کا کہنا ہے کہ 2018 میں ٹیم کی کارکردگی کچھ غیر معمولی اور کچھ بہت عام سی رہی لیکن مجموعی طور پر 2018 سال بہت اچھا رہا کپتان کا خیال ہے کہ ٹیم کی کارکردگی مزید بہتر ہو سکتی تھی ۔

قومی ٹیم کے کپتان نے اس بات کا اعتراف کیا کہ ٹیم نے مصباح الحق اور یونس خان جیسے مستند بیٹسمنوں کے بغیر ٹیسٹ میچز کھیلے، جن کی کمی ڈریسنگ روم اور گراؤنڈ میں محسوس کی گئی ۔

دوسری جانب ہیڈ کوچ مکی آرتھر کا کہنا ہے کہ کھلاڑیوں نےسال بھر میں اچھا کھیل پیش کرنے کی کوشش کی ، ٹیم کی فیلڈنگ بہتر ہونے پر سب سے زیادہ خوشی ہوئی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ نیوزی لینڈ کے خلاف سیریز اور سینچورین ٹیسٹ جیتا جا سکتا تھا ، ہارنے کی وجہ سے سال کا اختتام تکلیف دہ ہے ۔

البتہ لارڈز ٹیسٹ اور آسٹریلیا کے خلاف جیت سال کی بہترین کارکردگی میں سے ہے۔

مکی آرتھر نے کہا کہ ٹی ٹوئنٹی کرکٹ میں 17 فتوحات بھی قابل ذکر ہیں ۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں