آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
بدھ12؍رجب المرجب 1440ھ20؍مارچ 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پی آئی اے میں ہونے والی کرپشن کا بوجھ عام آدمی اور ٹیکس دہندگان کو مسلسل برداشت کرناپڑ رہا ہے۔

وزیراعظم کی زیر صدارت پی آئی اے میں جاری اصلاحات سے متعلق اعلیٰ سطح کا اجلاس ہوا،عمران خان نے کہا کہ بدقسمتی سے قومی ایئرلائن کا شماربھی ان اداروں میں ہوتا ہے جو بدانتظامی، کرپشن کی نذرہوئے۔

انہوں نے مزید کہا کہ کرپشن کی نذر ہونے والے اداروں کا بوجھ عام آدمی اور ٹیکس دہندگان کو مسلسل برداشت کرنا پڑرہا ہے۔

وزیراعظم نے یہ بھی کہاکہ پی آئی اے کو منافع بخش ادارہ بنانے کےلیے مربوط اور جامع بزنس پلان کوجلد از جلد حتمی شکل دی جائے۔

چیئرمین پی آئی اے ائر مارشل اسد محمود ملک نے ادارے کی حالت زار کو بہتر بنانے، منظم اور پرفیشنل طریقے سے چلانے ،کرپشن کےخاتمے، مالی خسارے میںکمی لانے اور سروس کی بہتری کےلئے کئے جانے والے اقدامات پر تفصیلی بریفننگ دی ۔

وزیراعظم کو بتایا گیا کہ ادارے کا کل خسارہ414 اعشاریہ 3 ارب روپے ہے ،اس میں 247 ارب روپے کے قرضے ہیں، 144 اعشاریہ 7 ارب روپے کے واجبات اور قرضوں کی واپسی کی ماہانہ قسط بمعہ سود 5 اعشاریہ 1 ارب روپے ماہانہ شامل ہیں۔

عمران خان کو بتایا گیا کہ ماضی میں منافع بخش اور عیر منافع بخش روٹس پر پی آئی اے کو 500 ملین کے خسارے کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

وزیراعظم کو اس دوران پی آئی اے میں موجود افرادی قوت اور ان کی پیشہ ورانہ صلاحیتوں میں اضافے سے متعلق بھی تفصیلی بریفنگ دی گئی۔

وزیراعظم کو یہ بھی بتایا گیا کہ گزشتہ 2 ماہ میں 194 گھوسٹ ایمپلائز 73 کیبن کریو اور 7 پائلٹس کو جعلی ڈگری کی بنیاد پر فارغ کیا گیا ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے بتایا کہ قومی ائیر لائن ہونے کے ناطے پی آئی ملک کی پہچان ہے بدقسمتی سے قومی ائیر لائن کا شمار بھی ان اداروں میں ہوتا ہے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں