آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
اتوار16؍رجب المرجب 1440ھ 24؍مارچ 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

پیپلزپارٹی کی حکومت کے خلاف جارحانہ حکمت عملی کسی حدتک کامیاب نظرآرہی ہے پیپلزپارٹی کی قیادت نے سندھ بھر میں جلسوں کا سلسلہ جاری رکھا ہوا ہے ان جلسوں سے سابق صدر آصف علی زرداری اور پی پی پی کے شریک چیئرمین بلاول بھٹو جارحانہ خطاب کررہے ہیںان کے لہجوں میں حکومت کے لیے تلخی کا عنصرپایا جاتا ہے گرچہ آصف علی زرداری اور فریال تالپور کو 23 جنوری تک مقدمات میں ضمانت مل گئی ہے تاہم حکومت بھی اپنے موقف سے پیچھے ہٹنے کو تیار نہیں سپریم کورٹ کے تحفظات اور ریمارکس کے باوجود بلاول بھٹو اور وزیراعلیٰ سندھ مرادعلی شاہ کا نام تادم تحریر ایگزٹ کنٹرول لسٹ سے نہیں نکالا گیا یہ بھی کہاجارہا ہے کہ ایوان میں فیصلہ کن اکثریت حاصل نہ ہونے کے سبب وزیراعظم پر پی پی پی کے ساتھ مفاہمت کے لیے دباؤ ہے تاہم حکومت نے دباؤ کو قبول کرتے ہوئے پی پی پی کے گھر سندھ پر سیاسی یلغار کی حکمت عملی اپناتے ہوئے وزیراعظم عمران خان اور وزیراطلاعات فواد چوہدری کے سندھ دورے کا شیڈول ترتیب دے دیا ہے جس کے بعد سندھ ایک بار پھر سیاسی گٹھ جوڑ کا محوربننے جارہا ہے۔وزیراعظم کی آمد سے قبل فوادچوہدری سندھ کا 2 روزہ دورہ کیا اور اہم سیاسی ملاقاتیں کیں وزیراعظم عمران خان 25 جنوری کوایک روزہ دورے پر سندھ پہنچ رہے ہیں۔ وزیراعظم ہم خیال جماعتوں کی اہم شخصیات سے ملاقاتیں کریں گے۔ وزیراعظم کو گھوٹکی کے دورے کی دعوت علی گوہرخان مہر نے دی ہے۔ وزیراعظم عمران خان دورہ سندھ میں پارٹی امور کا جائزہ بھی لیں گے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم کو سندھ میں جاری وفاقی حکومت کے ترقیاتی پراجیکٹس پرپیش رفت کے بارے میں بھی آگاہ کیا جائے گا وزیراعظم کے دورے سے پیپلزپارٹی اور پی ٹی آئی میں کشیدگی بڑھنے اور سندھ کی سیاست میں ہلچل پیدا ہونے کا امکان ہے۔ واضح رہے کہ گزشتہ ماہ جب سندھ میں حکومت کی تبدیلی یا گورنرراج کی افواہیں گرم تھیں توفوادچوہدری کو 31 دسمبر کو سندھ کا دورہ کرنا تھا تاہم اسی روز چیف جسٹس کے ریمارکس کے بعد یہ دورہ ملتوی کردیا گیا تھا۔دیکھنا یہ ہے کہ وزیراعظم کے دورے کا مقصد سیاسی ہے یا پھر وہ دورہ کراچی کے دوران الیکشن میں اہلیان کراچی سے گئے گئے وعدوں کو نبھانے اور کراچی کے لیے خصوصی پیکیج کا اعلان کرنے آرہے ہیں دوسری جانب پی پی پی کی جانب سے ان دوروں پر شدیدردعمل سامنے آیا ہے۔ سکھر میں میڈیاسے گفتگو کرتے ہوئے وزیراعلیٰ سندھ مرادعلی شاہ نے کہاہے کہ کوئی فسادپھیلانے سندھ میں آئے گا تو آہنی ہاتھوں سے نمٹاجائے گا ہم نے شرپسندوں کا مقابلہ کیا، چھوٹے موٹے فسادی کچھ نہیں کرسکیں گے۔ انہوں نے کہاکہ کسی کے آنے پر پابندی نہیں لگارہے، جوآرہے تھے وہ خود آتے آتے رک گئے ، پورا ملک وزیراعظم کا ہے، جہاں چاہیں آئیں جائیں۔ جب تک پارٹی قیادت اورعوام چاہیں گے، سندھ حکومت قائم رہے گی اور میں وزیراعلیٰ رہوں گا، ای سی ایل میں نام ہونے پر مجھے کوئی فکر اور پرواہ نہیں، ہمیں عدالتوں پر پورا یقین ہے کہ ریلیف ملے گا ۔ یہ لوگ مجھے سرکاری دورے پر جانے سے نہیں روک سکتے اور میرا فی الحال کہیں جانے کا کوئی ارادہ نہیں، حج اور کربلا سے بلاواآیا تو مجھے کوئی نہیں روک سکتا۔دوسری جانب پی پی پی کی جارحانہ سیاسی حکمت جاری ہے پی پی پی عوامی عامہ ہموار کرنے اور حکومتی پالیسیوں پر کڑی تنقید کررہی ہے ،کوٹری میں جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہاہے کہ موجودہ وفاقی حکومت ماضی کے فرعونوں سے سبق سیکھنے کے بجائے سندھ اورصوبے کے عوام سے سوتیلا سلوک اور ہمارے خلاف سازشیں کررہی ہے سندھ کے عوام نے کٹھ پتلی افلاطونی حکومت اورجعلی جے آئی ٹی رپورٹ کو مستردکردیا ہے ہمارے صبر کا امتحان نہ لیا جائے، اگر یہ باز نہ آئے تو ہم انہیں سکھائیں گے کہ ووٹ کی چوری کا بدلہ کس طرح لیا جاتا ہے۔ادھر سندھ اسمبلی کااجلاس جاری ہے، اجلاس کےد وران حکومت اور اپوزیشن کے دوران تلخ تندوتیز جملوں کا تبادلہ ہوتا رہا اجلاس میں پانچ ماہ بعد قائمہ کمیٹیوں کے قیام پر بھی اتفاق ہوا ادھر متحدہ قومی موومنٹ میں گروپ بندی کے خاتمے اور تمام گروپوں کو ایک پلیٹ فارم پر جمع کرنے کی کوششیں دم توڑنے لگیں، تمام گروپ تنظیمی ڈھانچامضبوط کرنے، ضمنی اور بلدیاتی انتخابات کی تیاریوں میں مصروف ہوگئے، ذرائع کے مطابق متحدہ قومی موومنٹ میں اہم رہنماؤں کے درمیان اختلافات ختم کرنے، انہیں ایک پلیٹ فارم پر جمع کرنے اورانتخابی سیاست میں ایک نشان یا اتحادسے حصے لینے کی کوششیں دم توڑنے لگی ہیں۔ ذرائع کے مطابق ایم کیو ایم (پاکستان) بہادرآباد کی تنظیمی کمیٹی نے کارکنان سے رابطوں کو تیز کرنے اور بلدیاتی انتخابات کی مہم کا آغاز کردیا ہے اوراس سلسلے میں 18 جنوری کو کراچی میں پہلا جلسہ کیا جائے گا دوسری جانب تنظیمی بحالی کمیٹی کے سربراہ ڈاکٹرفاروق ستار تمام جماعتوں کو یکجاکرنے کا اعلان کرتے ہوئے ماضی کی ایم کیو ایم کی طرز پر اپنے تنظیمی ڈھانچے کو منظم کرنے کی کوششوں میں مصروف ہیں جبکہ پاک سرزمین پارٹی کے رہنما حالات کا جائزہ لے رہے ہیں اورکراچی میں 24 جنوری کو ہونے والے ضمنی الیکشن کی تیاریوں میں مصروف ہیں، ذرائع کا کہنا ہے کہ آئندہ بلدیاتی انتخابات میں بھی یہ جماعتیں اپنے اپنے انتخابی نشان کے ساتھ ہی میدان میں اتریں گی۔اگر متحدہ قومی موومنٹ کے دھڑوں نے علیحدہ علیحدہ انتخابات میں حصہ لیا تو ممکن ہے کہ آئندہ بلدیاتی انتخابات کے بعد طویل عرصے بعد کراچی کا میئرمتحدہ قومی موومنٹ کے بجائے کسی دوسری جماعت سے ہو۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں