آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعرات19؍شعبان المعظم 1440ھ 25؍ اپریل 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

چیف جسٹس ہردلعزیز اپنا سنکھ پھونک کے رخصت ہوئے۔ نقیبوں نے عہد نو کے نقارے پہ چوٹ کی۔ نامزد قاضی القضاہ کا جلوس، جلال پادشاہی اور سطوت اختیار کے جلو میں نمودار ہوا۔ آواز نفیری اور تاشے کی دم بہ دم بلند ہوتی جاتی ہے۔ درویش بے نشاں نے اپنی بانسری ہونٹوں سے الگ کر کے زنبیل میں رکھ لی اور گردش ایام کے تماشے میں محو ہوا۔ ایک آزمائش ختم ہوئی، ایک امتحان باقی ہے۔ شہر افسوس کے گلی کوچوں میں افواہ کی چپاتیاں بٹ رہی ہیں۔ شکل و صورت ہر ایک کی جدا گانہ مگر ذائقے میں نمک کی آمیزش ایک جیسی ہے۔ فوجی عدالتوں کی آئینی میعاد مکمل ہونے کو ہے۔ یہ عدالتیں جنوری 2015ء میں دو برس کیلئے قائم کی گئی تھیں۔ 2017ء میں انہیں دو برس کی توسیع دی گئی۔ اب سوال ہے کہ ان عدالتوں کو مزید توسیع دی جائے یا یہ سلسلہ لپیٹ لیا جائے۔ یہ امر طے ہے کہ فوجی عدالتیں انصاف کے ان اصولوں پر پوری نہیں اترتیں جن کی ضمانت آئین کے آرٹیکل 10(الف) میں دی گئی ہے۔ چیف جسٹس محترم آصف سعید کھوسہ نے بھی فوجی عدالتوں کو شفاف سماعت کے معیارات سے فروتر قرار دیا ہے۔ ادھر لاہور میں طوطی خوش مقال حافظ طاہر محمود اشرفی نے بیان دیا ہے کہ دہشت گردی کے مکمل خاتمے تک فوجی عدالتوں کو قائم رہنا چاہئے۔ مولانا طاہر اشرفی کسی عوامی عہدے پہ فائز نہیں لیکن باخبر حلقے

جانتے ہیں کہ صریر خامہ میں نوائے سروش کی بازگشت ہے۔ حکومت نے اس معاملے پر پارلیمانی جماعتوں سے رابطے کیلئے دو رکنی کمیٹی تشکیل دی ہے۔ آصف علی زرداری کہتے ہیں کہ ان کی جماعت کیلئے فوجی عدالتوں میں توسیع کی حمایت کرنا مشکل ہو گا۔ بے شک 16دسمبر 2015ء کے بعد سے دہشت گردی کے خلاف فیصلہ کن کامیابیاں حاصل کی گئی ہیں تاہم ٹھیک ٹھیک بتانا مشکل ہے کہ اس میں فوجی عدالتوں کو کس حد تک دخل ہے کیونکہ اس دوران فوجی اور انتظامی اقدامات بھی کئے گئے۔گزشتہ برس فروری میں اٹھارہویں آئینی ترمیم کے بارے میں شروع ہونے والا شکوک و شبہات کا سلسلہ آہستہ آہستہ متشکل ہو رہا ہے۔ چیف جسٹس (ریٹائرڈ) ثاقب نثار نے ایک مقدمے کی سماعت کے دوران ریمارکس دیے کہ اٹھارہویں آئینی ترمیم پر پارلیمنٹ میں تفصیلی بحث مباحثہ نہیں کیا گیا۔ جاننا چاہئے کہ آٹھویں اور سترہویں آئینی ترامیم کیلئے بھی پارلیمنٹ کے فلور پہ جامع بحث نہیں ہوئی تھی بلکہ اس مقصد کیلئے قائم کردہ کمیٹیوں ہی نے ترمیم کے مسودے کو آخری شکل دی تھی۔ اٹھارہویں ترمیم تو اس لحاظ سے بہت شفاف عمل تھا کہ پارلیمنٹ میں موجود تمام سیاسی جماعتوں کی 29رکنی کمیٹی کے نو ماہ میں 200اجلاس منعقد ہوئے۔ ہمارے مخصوص تاریخی تناظر میں بہت سے معاملات کھلے عام زیر بحث نہیں لائے جاتے۔ مثال کے طور پہ آٹھویں آئینی ترمیم پر بحث مباحثے کیلئے پارلیمنٹ کا فلور کیسے استعمال کیا جاتا؟ تب بنیادی اختلاف تو مارشل لا اٹھانے پر تھا اور وزیر اعظم جونیجو اس قدر بااختیار تھے کہ پاکستان ٹیلیوژن پر ان کا یہ جملہ نشر ہونے سے روک دیا گیا کہ ’جمہوریت اور مارشل لا ایک ساتھ نہیں چل سکتے‘۔ سترہویں آئینی ترمیم کے لئے بند کمروں میں طویل مذاکرات کے دوران نکتہ نزاع پرویز مشرف کی وردی تھا۔ اٹھارہویں آئینی ترمیم اپنے جوہر میں وفاق پاکستان کی بنیادی ضمانت فراہم کرتی ہے۔ صوبوں کو اختیارات کی منتقلی ہمارے آئینی بندوبست کا تقاضا ہے۔ یہ ایک ناقابل تصدیق عمومی بیان ہے کہ صوبے اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے میں کامیاب نہیں رہے۔ جاننا چاہیے کہ مضبوط مرکز کی چھتر چھایا تلے قائم ہونے والی حکومتوں کی کارکردگی بھی کچھ ایسی تابناک نہیں رہی۔ 1973ء کا آئین چوالیس برس مکمل کر چکا ہے اور اسے ہماری قومی تشکیل میں اساسی دستاویز کا درجہ حاصل ہے۔ پاکستان کی تمام وفاقی اکائیوں کو احساس تحفظ دینے والی اٹھارہویں آئینی ترمیم 1973ء کے دستور کی مثبت توثیق ہے۔ اس عمرانی معاہدے کو پھر سے موضوع بحث بنانے سے مملکت کے جہاز کو زک پہنچنے کا اندیشہ ہے۔ اس دوران ہمارے سینئر شعلہ بیان صحافی نے بیچ چوراہے بیٹھ کے ٹیکنو کریٹ حکومت کی پرانی مگر سدا سہاگن بحث چھیڑ دی۔ ان سے سوال کرنا چاہئے کہ حضرات گرامی، آپ عمران خان حکومت کے پانچ مہینے دیکھ کے کائناتی نتائج اخذ کرنا چاہتے ہیں، اس سے پہلے تو آپ کی معاملہ فہمی اور مردم شناسی پہ سوالیہ نشان لگانا چاہئے۔ آپ نے کن معلومات اور تخمینوں کی بنیاد پر برس ہا برس قوم کو ایسے خواب فروخت کیے جن کا عملی دنیا سے کوئی تعلق ہی نہیں تھا۔ قلم قبیلے سے قطع نظر، نامزد چیف جسٹس تو فیصلہ سازی کی چوٹی پر فائز ہوئے ہیں۔ ان کی طرف سے ’میثاق حکومت‘ کی تجویز چند درچند خدشات کو جنم دے گی۔ ہمارے دستور میں حاکمیت اعلیٰ کو جمہور کے منتخب نمائندوں کی امانت قرار دیا گیا تھا۔ کیا حاکمیت اعلیٰ ایسا معاملہ ہے جسے منتخب نمائندوں اور بلحاظ عہدہ اعلیٰ مراتب پر فائز ہونے والے اہلکاروں میں قابل جواز بحث کا موضوع قرار دیا جائے؟ ہمارے محترم برادر قلم کہتے ہیں کہ آئین تھک چکا ہے۔ اسے کچھ مدت کے لئے ایک طرف رکھ کر ٹیکنو کریٹس کی ذہانت اور فطانت کو موقع دینا چاہیے یعنی گزشتہ دو برس میں ردے پر ردا جما کے ہمالیہ جیسی غلطی کا ارتکاب کیا گیا اور اب اس غلطی کے تاوان میں پورے گاؤں کو ڈائنا مائٹ سے اڑانے کی تجویز ہے۔ آئین وہ دھڑکتا ہوا دل ہے جسے اونگھ آ جائے تو جیتی جاگتی قوم شمشان گھاٹ کی ارتھی بن جاتی ہے۔ آئین ایسی چیز نہیں جسے سہولت کے مطابق جزدان میں لپیٹا جا سکے۔ یادش بخیر، اٹھارہویں آئینی ترمیم ہی نے دستور پر عمل درآمد میں تعطل کو غداری (High Treason) قرار دیا ہے۔ گویا آئین میں تعطل کی کوئی گنجائش نہیں۔ سوال یہ ہے کہ معمولی اکثریت سے قائم ہونے والی حکومت کس طرح ریاست کے تشکیلی خطوط پہ فیصلہ سازی کا اختیار رکھ سکتی ہے؟ جولائی 2018ء میں قانون ساز پارلیمنٹ منتخب کی گئی تھی۔ اسے دستور سازی کا مینڈیٹ بھی حاصل نہیں، غیر منتخب ریاستی عہدیداروں کے ساتھ عمرانی معاہدے کے اساسی خدوخال پر بحث مباحثہ تو بہت دور کی بات ہے۔ فرانسسکو گویا کی معروف پینٹنگ کا عنوان ہے، ’جب عقل کو اونگھ آ جاتی ہے تو عفریت جنم لیتے ہیں‘۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں