آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
پیر 16؍شعبان المعظم 1440ھ 22؍اپریل 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے وزیراعظم پاکستان کو ایک خط تحریر کیاہے جس میں صوبہ سندھ میں طویل گیس کی لوڈ شیڈنگ اور بحران کے حوالے سے اپنے تحفظات کا اظہار کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں گیس کی پیداوار کے حوالے سے صوبہ سندھ کا سب سے بڑا حصہ ہے، صوبے میں گیس کی قلت کے باعث نہ صرف گھریلو بلکہ تجارتی صارفین کو بھی شدید مشکلات کا سامنا ہے، جس سے صوبے کی معیشت، صنعتیں اور گھریلو صارفین بُری طرح سے متاثر ہورہے ہیں۔

وزیراعلیٰ سندھ کا کہنا ہے کہ صوبہ سندھ کو گیس کی بندش آئین کے آرٹیکل 158 کی خلاف ورزی ہے ۔

وزیراعلیٰ سندھ نے مزید کہا کہ صوبہ سندھ سے گیس کی پیداوار 2700-3000 ایم ایم سی ایف ڈی کے درمیان ہے اور اس کے مقابلے میں سوئی سدرن گیس کمپنی سندھ کو 1200 ایم ایم سی ایف ڈی سے بھی کم گیس فراہم کررہی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ آئین کے آرٹیکل 158 کے تحت سندھ کے لوگوں کو سندھ میں 3000 ایم ایم سی ایف ڈی سے زائدپیدا ہونے والی گیس ترجیحی بنیادوں پر دینی چاہیے۔

وزیراعلیٰ سندھ نے وزیراعظم پاکستان کی اس اہم مسئلے کی جانب توجہ مبذول کراتے ہوئے کہا کہ وہ اس مسئلے کے تدارک کے لیے متعلقہ وزارت کو ہدایت جاری کریں کہ وہ باقاعدگی کے ساتھ صوبہ سندھ کو اُس کی ضروریات کے مطابق اور آئین کے آرٹیکل 158 کے تحت گیس فراہم کریں۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں