آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعرات16؍شوال المکرم 1440ھ 20؍جون 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

مرزا غالب

ایک ایک قطرہ کا مجھے دینا پڑا حساب

خون جگر ودیعت مژگان یار تھا

اب میں ہوں اور ماتم یک شہر آرزو

توڑا جو تو نے آئنہ تمثال دار تھا

گلیوں میں میری نعش کو کھینچے پھرو کہ میں

جاں دادۂ ہوائے سر رہ گزار تھا

موج سراب دشت وفا کا نہ پوچھ حال

ہر ذرہ مثل جوہر تیغ آب دار تھا

ہر ذرہ مثل جوہر تیغ آب دار تھا

کم جانتے تھے ہم بھی غم عشق کو پر اب

دیکھا تو کم ہوے پہ غم روزگار تھا

کس کا جنون دید تمنا شکار تھا

آئینہ خانہ وادی جوہر غبار تھا

کس کا خیال آئنۂ انتظار تھا

ہر برگ گل کے پردے میں دل بے قرار تھا

جوں غنچہ و گل آفت فال نظر نہ پوچھ

پیکاں سے تیرے جلوۂ زخم آشکار تھا

دیکھی وفائے فرصت رنج و نشاط دہر

خمیازہ یک درازی عمر خمار تھا

صبح قیامت ایک دم گرگ تھی اسدؔ

جس دشت میں وہ شوخ دو عالم شکار تھا 

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں