آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
اتوار 15؍شعبان المعظم 1440ھ 21؍اپریل 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

وجیہہ شاہد

اِن دنوں پاکستان بڑے معاشی بحران سے گزر رہا ہے اور عمران خان کی قیادت میں قائم ہونے والی نئی حکومت اس سنگین صُورتِ حال پر قابو پانے کے لیے جان توڑ محنت کر رہی ہے۔ گو کہ اس بھاگ دَوڑ اور اصلاحات کے سبب معاشی بہتری کے کئی مثبت اشارے ملے ہیں، مگر اِس ضمن میں اب بھی بہت کچھ کیا جانا باقی ہے۔کہا جاتا ہے کہ اگر آج امریکا دنیا کی سب سے بڑی معاشی طاقت ہے، تو اس کا سبب وہ 36ہزار کمپنیز ہیں، جنھوں نے مختلف شعبوں میں بھاری سرمایہ کاری کر رکھی ہے۔ نیز،ہمارا پڑوسی اور دوست مُلک، چین بھی اسی راہ پر گام زَن ہے، شاید ہی دنیا کا کوئی کونا ایسا ہو، جہاں چین نے کسی نہ کسی شکل میں سرمایہ کاری نہ کر رکھی ہو، یہاں تک کہ امریکا جیسا سُپر پاور بھی اب چین کا مقروض ہے۔ ان مثالوں سے ظاہر ہوتا ہے کہ کسی بھی مُلک کی معیشت کی بہتری وہاں ہونے والی سرمایہ کاری سے مشروط ہے، اس لیے پاکستان میں ہونے والی سرمایہ کاری بھی کسی نعمت سے کم نہیں اور ہمیں مُلکی ترقّی کے لیے اسے خوش آمدید کہنا چاہیے۔ گزشتہ دنوں سعودی ولی عہد، پرنس محمّد بن سلمان نے پاکستان کا تاریخی دَورہ کیا، جس کے دَوران تقریباً 20ارب ڈالرز کے معاہدوں اور یادداشتوں پر دست خط کیے گئے۔ یقیناً یہ پیش رفت پاکستان کے معاشی مستقبل کے لیے انتہائی اہمیت کی حامل ہے۔ اس سے قبل چین بھی سی پیک کی صُورت میں 46ارب ڈالرز کی سرمایہ کاری کر رہا ہے، جن میں سے اب تک کئی ارب ڈالرز خرچ بھی کیے جاچُکے ہیں۔ واضح رہے، سی پیک کے کئی کاریڈور مکمل ہوچُکے ہیں یا پھر تکمیل کے قریب ہیں، جن میں توانائی کے منصوبے بھی شامل ہیں۔

چوں کہ وطنِ عزیز کو توانائی کے سنگین بحران کا سامنا ہے، تو سی پیک کے تحت مکمل ہونے والے پاور پراجیکٹس جتنی جلد فعال ہوجائیں، اتنا ہی مُلک و قوم کے لیے بہتر ہوگا۔ اسی حوالے سے میڈیا میں ایک عرصے سے زیرِ گردش یہ خبر بھی خوش کُن ہے کہ شنگھائی الیکٹرک پاور(SEP)،’’ کے الیکٹرک‘‘ کے 66.4فی صد شیئرز خریدنے میں دِل چسپی رکھتی ہے۔ اگر 1.77ارب ڈالرز مالیت کے اس معاہدے پر دست خط ہو جاتے ہیں، تو یہ پاکستان میں نجی سیکٹر میں ہونے والا سب سے بڑا معاہدہ ہوگا۔تاہم، حیرت انگیز طور پر 27ماہ سے گفت و شنید جاری ہے اور اب تک معاملہ منطقی انجام تک نہیں پہنچ سکا۔ ماہرین کے مطابق، یہ معاہدہ پاکستان میں بیرونی سرمایہ کاری کے لیے گیم چینجر ثابت ہو سکتا ہے۔ لہٰذا، حکومتی اداروں کو اس معاہدے کی راہ میں آنے والی رکاوٹوں کے سدّ ِباب کے لیے فوری اور تیز رفتار اقدامات کرنے چاہئیں۔ ایس ای پی کی کارکردگی کا اندازہ اس سے لگایا جا سکتا ہے کہ یہ کمپنی پچھلے 10برسوں میں شنگھائی میں 3ہزار میگا واٹ سے 30ہزارمیگا واٹ تک بجلی کی پیداوار بڑھانے میں کام یاب رہی، جو اس کی مہارت کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ اطلاعات کے مطابق’’ شنگھائی الیکٹرک پاور‘‘ کراچی میں 9ارب ڈالرز سے زیادہ کی سرمایہ کاری کا ارادہ رکھتی ہے، جس سے بجلی کی پیداوار، ترسیل اور تقسیم کی صلاحیت میں مزید بہتری آئے گی۔سو، ہمیں اس موقعے کو گنوانا نہیں چاہیے، کیوں کہ کراچی کے باسیوں کی توانائی کی ضروریات پوری کرنے کے لیے یہ ایک نادر موقع ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق اس سال موسمِ گرما میں کراچی کے شہریوں کو 600میگا واٹ کے شارٹ فال کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے، تو اس طرح کے مسائل سے نمٹنے کے لیے بیرونی سرمایہ کاروں کو سہولتیں فراہم کرنا ہوں گی تاکہ وہ مکمل اطمینان اور یک سوئی سے اپنا سرمایہ یہاں منتقل کرسکیں۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں