آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعرات12؍شعبان المعظم 1440ھ 18؍ اپریل 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

مشیر اطلاعات سندھ مرتضیٰ وہاب کہتے ہیں کوئی ادارہ بے لگام نہیں ہونا چاہیے، دیگر صوبوں کی پولیس صوبائی حکومت کے ماتحت ہے، سندھ میں پولیس جوابدہ نہیں ہے۔

مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ پولیس کی فائرنگ سے جاں بحق ہونے کے 6 واقعات ہوچکے ہیں، وقت آگیا ہے کہ اختیارات کا رونا رونا چھوڑیں اور ذمے داری قبول کریں۔ صوبے کو آئین اور وزیراعلیٰ چلائے گا، پولیس اختیارات کا نہیں اپنی کارکردگی کا بتائے۔

مشیر اطلاعات سندھ مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ ہم نے بڑی مشکل سے اس صوبے میں امن قائم کیا تھا، پولیس کا افسر والدین کو ساتھ دینے کا کہتا ہے اور ڈراتا ہے، ارشاد رانجھانی کیس میں دہشتگردی کی شقوں کو نکال دیا گیا، پولیس کب تک اپنے آپ کو بچائے گی، پولیس کا احتساب ہونا چاہیے۔

واضح رہے کہ پولیس اصلاحات سے متعلق سندھ حکومت اور پولیس کے درمیان تنازعہ شدت اختیار کر گیا ہے، صوبائی حکومت پولیس حکام کے تیار کردہ ایکٹ 2019 کے مجوزہ مسودہ سے خوش نہیں اور وہ نئے قوانین کا بل اسمبلی میں پیش کرنا چاہتی ہے۔

مشیر اطلاعات سندھ نے تین اسپتالوں کو وفاق کو دینے کے سپریم کورٹ کے حکم پر کہا کہ جنوری میں سپریم کورٹ نے 3 اہم اسپتالوں کو وفاق کو دینے کا کہا تھا تاہم اب تک وفاق اسپتالوں کو ٹیک اوور کرنے کیلیے اقدامات نہیں کرسکا، وعدے تو بہت کیے گئے، آج 90 دن پورے ہوگئے۔

مرتضیٰ وہاب نے مزید کہا کہ ہم نے عدالت میں درخواست جمع کروائی ہے کہ 90 دن کی مدت میں توسیع کی جائے، محکمہ صحت ان تینوں اداروں کو خط لکھے گا کہ ان کے اخراجات ہم برداشت کریں گے، جس طرح ماضی میں ان کے اخراجات برداشت کیے اب بھی کریں گے، بڑی محنت کے بعد یہ ادارے بہتر ہوئے ہیں، انہیں سیاست کی نذر نہ کیا جائے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں