آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
بدھ16؍رمضان المبارک 1440ھ22؍ مئی 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سندھ کی نومسلم لڑکیوں کے تحفظ کی درخواست کے قابل سماعت ہونے پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے درخواستوں پر سماعت کی۔

دعا فاطمہ عرف سمرن اور غلام عائشہ عرف پریا کماری نے اپنے شوہروں کے ہمراہ درخواست دائر کی۔

چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے استفسار کیا کہ مذہب تبدیل کرنے والی لڑکیاں اسلام آباد ہائی کورٹ سے ہی کیوں رجوع کرتی ہیں؟ یہ لڑکیاں سندھ ہائی کورٹ سے رجوع کیوں نہیں کرتیں؟

درخواست گزار کے وکیل عمیر بلوچ نے عدالت کو بتایا کہ سندھ میں لڑکیوں کی جان کو خطرہ ہے، خدشہ ہے کہ سندھ ہائی کورٹ پہنچنے سے پہلے ہی انہیں قتل کر دیا جائے گا۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ نے کہا کہ ہم اس عدالت کو استعمال کرنے کی اجازت نہیں دیں گے، آپ لوگوں کو سندھ ہائی کورٹ پر مکمل یقین ہونا چاہیے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ سندھ کا معاملہ ہے تو دائرہ اختیار بھی سندھ ہائی کورٹ کا ہی بنتا ہے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں