آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعرات16؍ ربیع الاوّل 1441ھ 14؍نومبر 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز


چینی انجینئرزنےدنیا کی تیز ترین مقناطیسی ریل گاڑی تیار کرنے کادعویٰ کیاہے جو 600 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے سفر کرسکتی ہے۔

چین کے پاس پہلے دنیا کا تیز ٹرین ریل کا نظام ہے لیکن اس کے انجینئرز چاہتے ہیں چین میں مسافر اپنا سفر کم سے کم وقت میں طے کریں،اسی لئے بیجنگ میں پہلی پروٹو ٹائپ میگنیٹک ٹرین تیا رکی گئی ہے ۔

مختلف ٹیسٹ اور آزمائشوں کے بعد ٹرین شنگھائی اور بیجنگ کے درمیان پانچ گھنٹے تیس منٹ کا فاصلہ تین گھنٹے تیس منٹ میں طے کرے گی۔

انجینئرز کا دعویٰ ہےکہ اس کی رفتار یورپی ممالک کے درمیان چلنےوالی یورواسٹار سے دگنی ہے یعنی یہ ٹرین لندن سے پیرس کے درمیان فاسلہ صرف49 منٹ میں طے کرسکےگی۔

چینی انجینئرز 200 کلومیٹر فی گھنٹہ طے کرنے والی ٹرینیں بھی تیار کر رہے ہیں، ان ٹرینوں کی خاص بات یہ بھی ہے کہ یہ دوسری ٹرینوں کی نسبت دس فیصد کم ایندھن استعمال کریں گی۔

چین میں اب تک تیز ترین ٹرینوں کے لیے 20 ہزار کلومیٹر سے زائد ٹریک بچھایا جاچکا ہے اور 2020 تک اس میں مزید 10 ہزار کلومیٹر کے اضافے کا ہدف طے کیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ چین نے ان ٹرینوں کے لیے 360 ارب ڈالرز کا خرچہ کیا ہے۔

اس سے قبل حال ہی میں جاپان میں دنیا کی تیز ترین بلٹ ٹرین متعارف کرادی گئی ہے،ریل حکام کا کہنا ہے کہ جاپان 2023تک اس نئی ٹرین کو عام افراد کے لئے چلانے کا ارادہ رکھتا ہے۔

بین الاقوامی خبریں سے مزید