آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
پیر18؍ذیقعد 1440ھ22؍جولائی 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

سابق وزیراعظم اور ن لیگ کے سینئر رہنما شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ بجٹ خسارے میں 50فیصد اضافہ معیشت کی ناکامی ہے۔

شاہدخاقان عباسی نے سابق وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل،سابق گورنر محمد زبیر و دیگر کے ہمراہ کراچی پریس کلب میں پریس کانفرنس کی۔

انہوں نے کہا کہ حکومت خود کہہ رہی ہے اس سال افراط زر 13فیصد تک جائے گا،افراط زر بڑھنے اور گروتھ میں کمی سے کاروبار میں کمی اورغربت میں اضافہ ہوگا۔

سابق وزیراعظم نے مزید کہا کہ معیشت جس حال میں چھوڑی تھی اگر اسی حال میں ہوتی تو حکومت کو کسی اور ٹیکس لگانے کی ضرورت نہیں تھی ۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومت عوام کو ریلیف دینے کی بجائے انتقامی کاروائیوں میں مصروف ہے مہنگائی کا بوجھ عوام اور منافع حکومت میں شامل لوگ کما رہے ہیں۔

شاہد خاقان عباسی نے یہ بھی کہا کہ بجٹ میں عوام کے لئے کچھ نہیں ہے، یہ بجٹ حکومت کا نہیں آئی ایم ایف کا ہے، ہر طرح کے احتساب کے لئے تیار ہیں نیب دھمکیاں نہ دے۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ جو حکومت 4ہزار ارب کے ٹیکس اکھٹے نہیں کرسکتی وہ کیا پیکیج دےگی؟ کراچی کے 2ملین لوگ 2وقت کی روٹی سے محروم ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایمنسٹی اسکیم میں 48کروڑ جمع ہوئے،چینی مافیا نے راتوں رات کروڑوں کما لئے۔

ن لیگی رہنما نے کہا کہ ان ہاؤس تبدیلی ملکی مسائل کا حل نہیں، آئندہ ہفتے آل پارٹی کانفرنس میں لائحہ عمل طے کیا جائےگا۔

شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ حکومت کے اقدامات عوام کو اصل ایشوز سے ہٹا کر دیگر باتوں میں الجھانا چاہتی ہے الزام لگا کر صرف قد آور سیاستدانوں کو بدنام کرنے کی سازش کی جارہی ہے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں