آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعہ 21؍ ذوالحجہ 1440ھ23؍اگست 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

اندرون سندھ طوفانی بارش، 2؍ بچیاں اور خاتون جاں بحق، بجلی غائب

حیدرآباد، بدین، ٹنڈو آدم، اسلام کوٹ، ٹھٹھہ (نامہ نگاران) بدین، ٹنڈو آدم، اسلام کوٹ، ٹھٹھہ، خیر پور ناتھن شاہ، جھنڈو سمیت اندرون سندھ طوفانی بارش کے نتیجے میں 2؍ بچیاں اور خاتون جاں بحق ہوگئیں، تیز ہوائوںکے باعث سائن بورڈ، درخت اور چھتیں گر گئیں، بارش کے ساتھ ہی بجلی غائب ہوگئی، نشیبی علاقے زیر آب آگئے، آسمانی بجلی گرنے سے متعدد مویشی ہلاک ہوگئے۔ تفصیلات کے مطابق ضلع بدین میں پڑنے والی طوفانی بارش نے تباہی مچا کر رکھ دی مسلسل تیز بارش کے سبب ضلع بھر میں نشیبی علاقے زیر آب آگئے۔ دیہی علاقوں کو جانے والے کچے راستے مسدود ہوگئے جبکہ ایل بی او ڈی میں پانی کے بہائو میں بھی اضافہ ہوگیا۔ بدین ، گولارچی، کڈھن، سیرانی ، بھگڑا میمن ، نندو ، کھوسکی، کڑیو گہنور، ترائی ، کھورواہ، احمد راجو سمیت ضلع کے تمام شہری دیہی و ساحلی علاقوں میں پڑنے والے شدید بارش کے نتیجے میں نشیبی علاقے مکمل طور پر زیر آب آگئے ہیں۔ بارش کے سبب دیہی علاقوں کو جانے والے کچے راستے مسدور ہوگئے ہیں اور ساحلی علاقوں کے متعدد دیہات سے بھی زمینی رابطہ عارضی طور پر منقطع ہوگیا ہے۔مسلسل تیز بارش کے سبب ایل بی او ڈی میں پانی کے بہائو میں بھی اضافے کی اطلاعات ہیں ضلع بھر میں پڑنے والی بارش کے نتیجے میں تمام معمولات بری طرح متاثر ہوگئے

ہیں۔ حیدرآباد میں دن بھر جاری رہنے والی بارش کے باعث 80 فیصد شہر کی بجلی بند اور نشیبی علاقے سڑکیں اور گلیاں پانی میں ڈوب گئیں۔ تیز آندھی اور طوفانی ہواؤں کیساتھ موسلادھار بارش کےباعث شہری اور نواحی علاقوں میں درجنوں درخت اور سائن بورڈ گرگئے۔ حیسکو ترجمان کا کہنا ہے کہ ریجن کے 89 فیڈر بارش اور ٹیکنیکی خرابیوں کے باعث بند ہیں۔شہری علاقوں میں بجلی میں بھی بجلی کی فراہمی متاثر ہے تاہم اسے جلد بحال کردیا جائیگا۔ہفتہ کی شام 5 بجے سے شروع ہونے والا سلسلہ رات گئے تک جاری تھا ،جسکے دوران لطیف آباد،قاسم آباد،پھلیلی،پنیاری سمیت کچی آبادیوں،اہم شاہراہوں اور گلیوں میں پانی کی بھاری مقدار جمع ہوگئی۔ ٹنڈوآدم شہر اور اسکے گرد نواح میں گزشتہ رات اور آج دن میں تیز طوفانی ہواؤں کی وجہ سے متعدد شہر کے مختلف مقامات پر لگے ہوئے سائن بورڈ اور درخت اکھڑنے اور کچے مکانات کی چھتیں گرنے کی اطلات موصول ہوئیں جبکہ کوئی جانی نقصان نہیں ہوا. جبکہ مٹی کے طوفان کے سبب شہری خوف کے عالم میں مبتلا ہوگئے طوفان کی شدت کے سبب بجلی کا نظام دھرم بھرم ہوگیا اور 132kv کی لائین میں خرابی کے سبب شہریوں کو چھ گھنٹے بجلی سے محروم رہنا پڑا حیسکو حکام کے مطابق طوفان کے باعث جانب موسلاد بارش کے سبب سڑکوں پر پانی جمع ہوگیا۔ہفتہ کو علی الصباح خیرپورناتھن شاہ میں اچانک بارش پڑنے کا سلسلہ شروع ہوا جو وقفہ وقفہ سے جاری رہا ۔ ککڑ، تھرڑی جادو شہید اور دیگر مقامات پر تیز بارش پڑ نے کی اطلاعات بھی موصول ہوئی ہیں۔جھڈو سمیت گردونواح میں جمعہ کی شام سے شروع ہونے والی بارش آگلے دن ہفتہ کے روز بھی جاری رہی۔جھڈو میں بارش نے ہر طرف جل تھل کر دیا اور مین شاہی بازار سبزی اور گوشت کی دکانوں پر مشتمل گول مارکیٹ کے اطراف میں پانی دکانوں کے اندر داخل ہوگیا۔ صغیر کالونی میں چھت گرنے سے ایک عورت ہلاک ہو گئی۔ بارش کے دوران بجلی کا بریک ڈاؤن رہا ۔ روڈ راستوں میں بھرے ہانی کیچڑ اور بجلی کی بندش نے معمولاتِ زندگی درہم برہم کرہوگیا۔ اسلام کوٹ کے نواحی گائوں بھٹیوں کی ویری میں گذشتہ رات بارش کے دوران جاری ہونے والی تیز نہر میں دوبچیاں ڈوب کر جاں بحق ہو گئیں۔سات سالہ چاندی اور چار سالہ ہریاں گھر کے باہر میدان میں کھڑی تھیں کے برابر میں بارشی پانی سے چلنے والی نہر کا بہائو بڑھ گیا اور ریت سے پھسل کر دونوں نہر میں جا گری۔گائوں وی ھنگورجا میں آسمانی بجلی گرنے سے تین گائے بھی ہلاک ہو گئیں۔ ٹھٹھ شہر اور گردونواح میں طوفانی بارش نے تباہی مچا دی۔ بارشی کے نتیجے میں مختلف علاقے زیر آب آگئے۔ تاریخی شاہ جہان مسجد میں پانی داخل ہو گیا۔ وی او شہر اور گردونواح میں شام سات بجے تیز طوفانی ہواؤں اور گرج چمک کے ساتھ شروع ہونیوالی موسلادھار دھار بارش تا حال جاری ہے۔ بارش کی پہلی بوند کے ساتھ ھی بجلی کی فراھمی بند ھو گئ ھے جبکہ ساحلی اور کوہستانی علاقوں میں بارش کے باعث کاروبار زندگی معطل ھو گئی ہے۔

اہم خبریں سے مزید