آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
پیر 20؍ربیع الاوّل 1441ھ 18؍نومبر 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز
ڈکٹےٹر شپ کی شخصی علامتےں کبھی تبدےل ہو جاتی ہےں،کبھی تحلےل اور کبھی تائب۔ لےکن شخصی آمرےتوں کی ادارہ جاتی اور قانونی باقےات کی مثال کھڑک سنگھ کے قےدی جےسی ہے۔ راوی کہتا ہے جےل کا دروازہ کھلا کھڑک سنگھ کا مبارک قدم جو سامنے آتا اس قےدی کی رہائی کا پروانہ بن جاتا۔ نئے راجہ نے متفکر ہو کر کو توال سے سوال کےا۔ سب سے پرانا قےدی کہاں ہے؟جواب ملا سامنے کوٹھڑی مےں۔ زنجےروں مےں جکڑے ہوئے قےدی کو راجہ کی قدم بوسی کےلئے زمےن پر گراےا گےا تو کھڑک سنگھ نے پوچھا قےدی کا جرم کےا ہے؟ اہلکار بولے جناب کچھ نہےں۔ قےدی عرض گزار ہوا راجہ صاحب مےرا نہ تو کو ئی جرم بتاتا ہے نہ قصور اور مےرے بال سفےد ہو گئے ہےں۔کھڑک سنگھ نے پوچھا کہ ےہ کب سے جےل مےں ہے؟ بتاےا گےا کہ آپ کے باپو جی مہاراجہ رنجےت سنگھ کے زمانے سے۔ کھڑک سنگھ نے قےدی سے مو ¿دب ہو کر کہا کہ مےں آپ کو باہر نہےں نکال سکتا،آپ مےرے بزرگوں کی نشانی ہےں۔ پاکستان مےں حکمرانی کی تارےخ مےں تازہ ترےن ڈکٹےٹر شپ نئے ملےنےم کے ساتھ آئی تھی ۔ آج کے کئی پارسا اور اصول پرست اس ڈکٹےٹر شپ کی پشت پر سوار ہو کر رتبوں تک پہنچے اور پھر گنگا اشنان کر لےا ۔ ڈکٹےٹر شپ تو سات سمندر پار چلی گئی مگر نشانےاں ےہےں چھوڑ گئی۔ ان مےں سے اےک نے اسی ہفتے سمندر پار پاکستانےوں کیلئے پاکستان کی رےاست و

سےاست کے اےک اور دروازے پر تالا لگاےا ہے۔ آپ جانتے ہی ہےں کہ الےکشن کمیشن نے مشرف کی بدنام زمانہنشانی الےکشن آرڈر مجرےہ 2002ءکی روشنی مےں ےہ اعلان کےا ہے کہ دہری شہرےت رکھنے والے پاکستانی سےاسی جماعتوں کا عہدہ حاصل کرنے کے حقدار نہےں۔ وہ ڈکٹےٹر جس نے رےفرنڈم کے ذرےعے اقتدار کے گھوڑے پر کاٹھی ڈالی۔ وےسا ہی رےفرنڈم ،جےسا بےسوےں صدی کے اورنگزےب عالمگےر نے منعقد کراےا تھا، جس کی جھلکےاں حبےب جالب نے ےوں مرتب کےں:
شہر مےں ہو کا عالم تھا
جِن تھا ےا رےفرنڈم تھا
مرحو مےن ، شرےک ہو ئے
سچائی کا چہلم تھا
کچھ بارےش سے چہرے تھے
اور اےمان کا ما تم تھا
پھر ےہی ڈکٹےٹر آئےن کے شےڈول نمبر 5مےں لکھے ہو ئے افواج پاکستان کے کمانڈر اِن چےف کے حلف کو بوٹ تلے مسل رہا تھا تو اسے باوردی الےکشن لڑنے کا جو ڈےشل پروانہ مل گےا ۔ آج ڈکٹےٹر شپ سے نفرت کرنے والے اور اس کے خلاف گلے پھاڑ کر چنگھاڑنے والے اس کی نشانےاں نکال نکال کر بےرون ملک پاکستانےوں کا منہ چڑا رہے ہےں ۔ کےا ےہ سچ نہےں کہ آج پاکستان مےں کوئی بھی سےاسی جماعت، مذہبی گروہ ےا فرقہ اےسا نہےں ہے جس نے سمندر پار ونگ قائم نہ کر رکھا ہو؟ اس کی وجہ صاف ظاہر ہے کہ جو لےڈر، گروہ ےا طائفے مغرب کو جمہورےت، رواداری، مذہبی ہم آہنگی اور مشرقی اقدار ےا کلچر سکھانے بےرون ملک ےاترا پر جا تے ہےں ان کے ڈےرے اور کھابے سمندر پار پاکستانےوں کے خرچے اور کندھوں پر ہوتے ہےں۔ مجھے اچھی طرح ےاد ہے کہ جب اےک مرتبہ محترمہ نے مجھے ہنگامی طور پر لندن پہنچنے کا کہا تو ساتھ بتاےا کہ آپ کی رہائش کا بندوبست رحمن ملک کرےں گے۔ اےئرپور ٹ پر مےرے کافی دوست موجود تھے۔ کالی مر سےڈےز مےں مےزبان نے مجھے اےک سکھ کے ہوٹل مےں پہنچاےا جہاں مےں نے نہ سامان اتارا نہ تھکاوٹ اور سےدھا ہائڈپارک کے کونے پر اپنے پسندےدہ ہوٹل مےں جا ٹھہرا۔ اس کی وجہ وہ افسانے تھے جو ہر اس آدمی کے گرد بُنے اور ٹےلر کئے جاتے ہےں جو اپنی ذات کے لئے بےرون ملک جا کر لاہوری زبان مےں ”رےڑھا“ ڈھونڈتا ہے۔ دہری شہرےت رکھنے والے سمندر پار پاکستانی دنےا بھر مےں پھےلے ہوئے چائنہ ٹاو ¿ن کی طرح دےس پردےس اور نگر نگر مےں چھوٹا پاکستان ہےں۔ جن کے سہارے ہمارے فورےکس کے ذخائر قائم ہےں اور جن کے آسرے پر بڑے بڑے دربار، لےڈر، قائد، آستانے ، دانشور اور تحرےکےں چلتی ہےں ۔ حےران کن بات ےہ ہے کہ دہری شہرےت والوں کے بجٹ پر پھلنے پھولنے والے ان کے لئے آواز اٹھانے پر کےوں تےار نہےں؟ اس کی اےک وجہ ےہ ہو سکتی ہے کہ مغرب کے اکثر ملکوں مےں نمک کا استعمال نہ ہونے کے برابر ہے، ظاہر ہے اس کی وجوہ طبی ہےں۔
جن نشانےوں کا تذکرہ ہو رہا ہے ان مےں سے اےک مےں دھرے گئے وہ مظلوم اور مڈل کلاس ارکانِ اسمبلی تھے جنہےں سپرےم کورٹ حملہ کےس مےں سزائےں ملےں۔ مےں نے ان کی طرف سے سپرےم کورٹ مےں ان سزاو ¿ں کے خلاف اپےلےں دائر کےں ۔ان کا تعلق پو ٹھوہار اور لاہور کے علاقوں سے تھا۔جسٹس خلےل رمدے جنہےں فوجداری قوانےن کی بارےکےوں اور نزاکتوںکاخوب علم ہے کی سربراہی مےں لارجر بنچ کے روبرو مےں نے ےہ نکتہ اٹھاےا کہ اس وقت ملک مےں توہےن عدالت کا کوئی بھی قانون نہےں جسے جسٹس رمدے نے نوٹ کےا اور وہ اپےلےں دفتر واپس چلی گئےں۔
توہےن آئےن ، توہےن عوام ، توہےن جمہورےت ، توہےن پارلےمان، توہےن جمہور اور توہےن عدل کرنے والی ڈکٹےٹر شپ نے اےسی جادوگری کی کہ اس کا بناےا ہوا 2003ءکا ےہ قانون اس کے خلاف کچھ نہےں ہونے دےتا۔ ےوں تو باری باری اس کے مہربان بھی قسمت کے دھنی بن کر سامنے آئے۔ اس قانون کے ڈنکے کےنےڈا اور برطانےہ تک بجے۔ جہاں لاکھوں پاکستانی جبری ہجرت کے اسےر ہےں اور جنہےں دہری شہرےت کے نام پر ڈےڑھ سال سے لکھنے، بولنے اور سننے بلکہ سنانے والوں نے نشانے پر لے رکھا ہے حالانکہ پاکستان مےں رےاست کے دوسرے کئی اہم شعبے اےسے ہےں جن مےں دہری شہرےت رکھنے والوں کی موجودگی کے اشارے ےا پبلک نشاندہی وقتاً فوقتاً ہوتی رہتی ہے۔ دہری شہرےت سے جڑا ہوا اےک اور اہم مسئلہ وہ ہے جس کے نتائج ہم سب کے لئے مقامی نہےں بلکہ علاقائی ےا عالمی سطح کی شرمندگی کا باعث بن سکتے ہےں ۔ مےری مراد آزاد کشمےر اور جموں کشمےر کے وہ لاتعداد ووٹرز ہےں جنہےں آزاد جموں و کشمےر کے پارلےمان اور پاکستان کے انتخابی نظام مےں بےک وقت حصہ لےنے کی اجازت ہے ۔ ہمارے آئےن اور قومی مو ¿قف کے مطابق خطہ کشمےر عالمی تنازعات مےں شامل ہے اور کشمےر کے عوام کو ابھی تک اقوام متحدہ ان کا طے شدہ رائے شماری کا حق دلوانے مےں بھی کامےاب نہےں ہو سکی۔
ذکر ہو رہا ہے نشانےوں کا جن مےں وکلاءکے خلاف استعمال ہونے والا 1980ءکا اےک اےسا قانون بھی ہے جس کے تحت کسی لےگل پرےکٹےشنر کا معاشی طور پر حق زندگی چھےنا جا سکتا ہے اور وہ بھی بغےر کسی دادرسی ےا اپےل کے ۔ جن رولز کا ےہاں حوالہ دےا جا رہا ہے وہ حکمرانی کے اےسے دور مےں بنائے گئے تھے جب ملک کے منتخب اےوان کو لپےٹنے کے بعد 1980ءمےں اس وقت پاکستان بھر کی بار اےسوسی اےشنےں باغی روش ہو گئی تھےں ۔ جب اےک منتخب وزےر اعظم کا عدالتی قتل کےا گےا، نہ جانے کےوں وہ نشانےاں جنہےں تارےخ کا قبرستان بھی قبول نہےں کرتا انہےں اسلامی جمہورےت کے داعی پاکستان مےں کوئی چھو بھی نہےں سکتا۔ اےسی ہی اےک اور نشانی وہ پانچ قومی خواب ہےں جو بےس کروڑ لوگ خوابِ خرگوش مےں نہےں کھلی آنکھوں سے بھی دےکھتے ہےں۔ جنہےں ہم روزگار ، امن و امان، روٹی، کپڑا اور مکان کہتے ہےں۔ جمہورےت کی حالےہ قسط پانچ سال پورے کر رہی ہے جبکہ اسلامی جمہورےت کا دعوےدار پاکستانی معاشرہ پےنسٹھ سالہ ہو چلا ہے مگر بےس کروڑ لوگوں کے ےہ پانچ عدد خواب پچھلی صدی سے اس صدی مےں آگئے اور اگر سےاسی ستاروں اور قومی اداروں کی چال ےہی رہی تو پھر مستقبل قرےب مےں بھی ےہ خواب پورے نہےں ہو سکتے ۔ مےں رجائےت پسند ہوں لےکن اس کا علاج کےا کروں کہ آج الےکشن ہونے مےں ہفتے باقی رہ گئے ہےں مگر کوئی بھی اےسا نہےں جس کا فوکس عام آدمی کے ےہ پانچ خواب ہوں ۔ تقسےم سے پہلے کی ہندوستانی سےاست کے باپو افرنگی تھے اور برصغےر مےں نو سو سال سے برسرِاقتدار مسلمانوں کو انڈر کنٹرول رکھنے کیلئے ےہ پانچ خواب انہی کے ڈےزائن شدہ ہےں ۔ جی ہاں ! مسائل کی صورت مےں۔کوئی تو اےسا ہو جو ان نشانےوں کو دفنا سکے۔ اس وقت پاکستان کی رےاست کے پاسبان اس ملک کے پاسداروں سے جس قدر ظالمانہ بلکہ بے رحمانہ سلوک کر رہے ہےں اُس کی اِس سے کھلی مثال اور کےا ہو سکتی ہے کہ ساری دنےا مےں پٹرولےم کی قےمتےں سر کے بل نےچے آ رہی ہےں اور ےہاں ڈےزل سوا سو روپے لےٹر پر پہنچا دےا گےا ہے۔ جنہوں نے تےن دن کھلی بدمعاشی کے ساتھ غرےبوں کی جےبےں اور گلے کاٹے اُن کے لمبے ہاتھوں مےں چھوٹی سی ہتھکڑی ڈالنے والا کوئی اہلکار ہے نہ رےاستی ادارہ۔ نشانےاں خود نشانِ عبرت ہوتی ہےں۔ ان سے تبدےلی مانگنا شعلے سے ٹھنڈک مانگنے جےسا ہے۔
جن سے خدا کا خوف بھی تھرّا کہ رہ گےا
اُن ظالموں سے خوفِ خدا مانگتے ہےں لوگ
اب اِس فرےب عام کی، توجےہہ کےا کرےں
صرصر کا نام لے کے، صبا مانگتے ہےں لوگ

ادارتی صفحہ سے مزید