| |
Home Page
منگل یکم ذیقعدہ 1438ھ 25 جولائی 2017ء
May 20, 2017 | 12:00 am
حزب اللہ رہنما پر امریکا، سعودی عرب کی مشترکہ پابندی

Todays Print

کراچی،واشنگٹن(نیوزڈیسک،خبر ایجنسی) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے دورے سے قبل امریکی انتظامیہ نے سعودی عرب کے ساتھ مل کر دہشت گردی سے متعلق پہلی پابندی لگادی،ڈونلڈ ٹرمپ منصب صدارت سنبھالنے کے بعد اپنے پہلے غیر ملکی دورے پر آج سعودی عرب جارہے ہیں ،دوسری جانب سعودی وزیر خارجہ عادل بن احمد الجبير کا کہنا ہے کہ امریکہ اور مغرب اسلامی دنیا کے دشمن نہیں ہیں، یہ دورہ شدت پسندوں کو تنہا کر دے گا، ادھر امام کعبہ شیخ صالح بن حامد نے ریاض میں ہونے والی اسلامی سمٹ کو سراہا ہے جس میں مسلم ممالک کے سربراہان اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ شرکت کرینگے۔غیر ملکی خبر رساںا دارے کے مطابق امریکی محکمہ خارجہ نے حزب اللہ کے سینئر رہنما ہاشم سیف الدین اور مصر کے جزیرہ نما سینائی میں داعش کے آپریشنز کے رہنما محمد العیساوی پر پابندیوں کا اعلان کیا،ہاشم سیف الدین کو ہدف بنانے میں سعودی عرب بھی امریکا کے ساتھ شامل ہے، جنہیں لبنان سے تعلق رکھنے والی پارٹی کے مالی معاملات کا نگراں کہا جاتا ہے۔امریکی محکمہ خارجہ کے بیان میں کہا گیا کہ ’پابندی کے نتیجے میں ہاشم سیف الدین کے سعودی عرب میں موجود تمام اثاثے منجمد ہوجائیں گے اور سعودیہ سے ان کے اثاثے منتقل کرنے پر پابندی ہوگی،امریکی محکمہ خزانہ نے یمن سے تعلق رکھنے والے 2قبائلی رہنماؤں ہاشم محسن ایدارُس الحامد اور خالد علی مبخُت الارادہ پر بھی پابندیاں عائد کیں،ٹرمپ انتظامیہ کا کہنا تھا کہ یہ چاروں افراد یا تو دہشت گردی میں ملوث رہے یا انہوں نے اس کی منصوبہ بندی اور امریکی قومی سلامتی کے لیے خطرہ بنے۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ مشرق وسطیٰ اور یورپ کے 5ممالک کے دورے کے آغاز میں آج ریاض پہنچیں گے۔ دوسری جانب سعودی وزیرِ خارجہ عادل بن احمد الجبير کہتے ہیں  کہ یہ اسلامی دنیا کے لیے بہت بھرپور پیغام ہے کہ امریکہ اور مغرب آپ کے دشمن نہیں ہیں، یہ مغرب کے لیے بھی بھرپور پیغام ہے کہ اسلام آپ کا دشمن نہیں ہے، اس دورے سے اسلامی دنیا اور مغرب کے درمیان عموماً اور امریکہ کے درمیان خصوصاً مکالمہ بدل جائے گا۔ یہ شدت پسندوں کو تنہا کر دے گا، چاہے وہ ایران ہو، دولتِ اسلامیہ ہو یا القاعدہ ہو، جو کہتے ہیں کہ مغرب ہمارا دشمن ہے۔