Raza Ali Abidi - Urdu Columns Pakistan | Jang Columns
| |
Home Page
ہفتہ 2؍ جمادی الاوّل 1439ھ 20 ؍ جنوری2018ء
رضا علی عابدی
دوسرا رخ
April 26, 2013
نقل کرنے کو بھی ہُنر چاہئے؟

اگر آزمائش کا دوسرا نام امتحان ہے اور اگر امتحان ہی کو آزمائش کہتے ہیں تو انسان کے زمین پر اترتے ہی اس کا امتحان شروع ہوگیا تھا۔ انسان بھی خطا کا پُتلا ہو نہ ہو، چالاکی کا پُتلا ضرور ہے۔ اس نے کڑی سے کڑی آزمائشوں سے بچ نکلنے کے راستے نکال لئے اور وقت کے ساتھ نئے نئے حربے سیکھتا گیا۔ یہ سلسلہ آج تک جاری ہے۔ اسی کو نئے زمانے میں نقل...
April 19, 2013
نہ ویسا کھانا رہا، نہ ویسے کھانے والے

دنیا کی بہت سے باتیں سمجھ میں آتی ہیں لیکن یہ مفت کے کھانے پر جھپٹنے اور ٹوٹ پڑنے کا قصّہ آج تک سمجھ سے بالاتر ہے۔ لوگ بھوکے ہوں، ترسے ہوئے ہوں، برسوں سے اچھے کھانے کی شکل نہ دیکھی ہو ، اس کے بعدکھانے پر پِل پڑیں تو حیرت نہ ہو۔ ہم نے بڑے بڑے کھاتے پیتے رئیسوں اور پیٹ بھرے لوگوں کو دیکھا ہے کہ کھانا لگتے ہی اس پر جھپٹتے ہیں اور اچھی سے...
April 12, 2013
سنگین جرائم پر قابو پانے کا آسان طریقہ

کچھ روز ہوئے لاہور کے کسی علاقے میں ایک کمسن بچّی پہلے روز اسکول جارہی تھی۔ راستے میں کسی بااثر شخص نے اُسے اُٹھایا، بھوکے بھیڑئیے کی طرح اسے بھنبھوڑا اور نیم مردہ حالت میں کہیں پھینک دیا۔ بچّی اسپتال میں بے سدھ پڑی تھی پھر کوئی خبر نہیں ملی کہ اس کا کیا حال ہوا لیکن وہ درندہ جس کے سر پر وحشت سوار تھی، اسکے بارے میں خبر ہو یا نہ ہو،...
April 05, 2013
یوٹیوب ممنوع ہے، عشقِ ممنوع جاری

کچھ روز ہوئے میں یہاں لندن میں اپنے ایک دوست کے گھر گیا۔ اُن کے بچّے ایک عجیب و غریب کھلونے سے کھیل رہے تھے۔ میں نے پوچھا یہ کیا ہے، پتہ چلا کہ نئے زمانے کے بچّے آئی پیڈ سے کھیل رہے ہیں۔ ہر چند کہ عزت خاک میں ملی لیکن پوچھنا پڑا کہ وہ کیا ہوتا ہے؟میں ٹھہرا تختی اور سلیٹ کے زمانے کا آدمی۔ یوں لگا کہ بچّے سلیٹ سے کھیل رہے ہیں۔ بچّے مجھے...
March 29, 2013
جب اسکردو میں فرشتے اترے

ابابیلوں نے آنا چھوڑ دیا ہے لیکن فرشتوں کا اُترنا ابھی جاری ہے۔ یہ کہانی انہی کی ہے۔ اسکردو سے بھی اور آگے ایک گاؤں ہے: کورفے۔ یہ پاکستان کا شاید آخری گاؤں ہے۔ اس سے آگے کوہ قراقرم اور کے ٹو کی چوٹی ہے۔ ان پہاڑوں پر چڑھنے کیلئے دنیا بھر کے کوہ پیما اسی علاقے سے گزرتے ہیں۔ وہ ذرا سا گاؤں کورفے اب دنیا کے نقشے پر نظر آنے لگا ہے۔ یہاں اس...
March 22, 2013
نئے ٹھگ

ڈیڑھ سو سال ہوئے جب انگریز حکمرانوں نے اعلان کیا تھا کہ پورے برصغیر میں سارے ٹھگ اپنے انجام کو پہنچے اور ٹھگی ختم ہو گئی ہے۔ کچھ روز پہلے یہی بات ہو رہی تھی تو یہ بڑا سوال ہمارے سامنے سر اٹھا رہا تھا کہ کیا یہ سچ ہے؟ کیا ٹھگ ختم ہوگئے؟سوال مختصر ہے مگر جواب اس سے بھی چھوٹا، نہیں۔ برصغیر میں ٹھگ کبھی ختم نہیں ہوئے وہ شکلیں بدل بدل کر...
March 15, 2013
پُرانے ٹھگ

جہاں عقل ساتھ نبھانے پر تیار نہ ہو وہاں تاریخ بڑے کام کی چیز ہے۔ ہر طرف غارت گری ہے، سب مانتے ہیں مگر ہماری سر زمین پر یہ کوئی نئی یا پہلی غارت گری تو نہیں۔ لوگوں نے لوگوں کو پہلے بھی بڑے دکھ دیئے ہیں، پہلے بھی بہت ستایا ہے اور پہلے بھی بہت سر اُتارے ہیں مگر پہلے سر کچلے بھی گئے ہیں۔ پہلے بھی ظلم کو مٹایا گیا ہے اور پہلے بھی بے رحموں کو...
March 08, 2013
مےں نے اپنا لہجہ پہلی بار سنا

مےں نے اپنی آواز بارہا سنی تھی مگر اپنا لہجہ پہلی بار سنا۔کراچی مےں عباس ٹا ن کے تباہ شدہ کھنڈروں مےں جب دکھیاری ما ں اور بےٹیوں کو یہ کہتے سنا کہ ہم اِس حکومت کو نہےں مانتے تو آواز اُن کی تھی، لہجہ ہو بہو مےرا تھا۔ جی چاہتا ہے یہ تحریر یہےں لپےٹ دوں لےکن دو چار باتےں ہےں کہنے کی۔ مےں یہ سوچ سوچ کر حےران ہوں کہ کوہستان سے کوئٹہ اور...
March 01, 2013
ان سے کوئی نہیں جیت سکتا

آج کل ملک معراج خالد رہ رہ کر یاد آرہے ہےں۔ جب بھی نگراں وزیراعظم کے چنا کی بات ہوتی ہے، سوچتا ہوں کہ معراج خالد جےسا کھراانسان اب کہاں ملے گا۔ اکثر سیاست داں عوام عوام کی رٹ لگاتے ہےں، ان مےں سے زیادہ تر نے ان گھرانوں مےں قدم تک نہےں رکھا جن مےں وہ مخلوق بستی ہے جسے عوام کہا جا تا ہے۔ ملک صاحب پنجاب کے نہایت غریب گھرانے مےں پےدا ہوئے...
February 22, 2013
کہیں ایسا نہ ہو جائے

اب تو یہ سُن سُن کر الجھن ہونے لگی ہے کہ تاریخ خود کو دہراتی ہے۔ تاریخ کبھی رُکے اور کہیں ٹھہرے تو خود کو دہرائے۔ تاریخ کے بارے میں طے ہے کہ وہ جاری رہتی ہے۔ تاریخ میں جو کچھ ہوتا ہے اس سے پہلے کچھ ہو چکا ہوتا ہے اور اس عمل کے دوران جو وقفہ محسوس ہوتا ہے وہ وقفہ نہیں ہوتا۔ البتہ ایک بات مانی جا سکتی ہے اور وہ یہ کہ تاریخ اپنا حلیہ بدل...
February 15, 2013
وطن کی محبت ناپنے کا تھرمو میٹر

ایک بار پھر ہمیں دہری شہریت کا طعنہ سننا پڑا ہے۔ اس بار طعنے میں کچھ تحکّم کا عنصر شامل ہے اور کچھ تحقیر کا۔ طعنہ ملک کی سب سے بڑی عدالت کے سب سے بڑے منصفوں نے دیا ہے اور وہ بھی کچھ اس انداز میں کہ اچھا بھلا انسان خود کو قصور وار محسوس کرنے لگے حالانکہ ہم نے جب دہری شہریت اختیار کی تھی تو قانون میں اس کی پوری پوری اجازت تھی۔ حکومتِ وقت...
February 15, 2013
وطن کی محبت ناپنے کا تھرمو میٹر

ایک بار پھر ہمیں دہری شہریت کا طعنہ سننا پڑا ہے۔ اس بار طعنے میں کچھ تحکّم کا عنصر شامل ہے اور کچھ تحقیر کا۔ طعنہ ملک کی سب سے بڑی عدالت کے سب سے بڑے منصفوں نے دیا ہے اور وہ بھی کچھ اس انداز میں کہ اچھا بھلا انسان خود کو قصور وار محسوس کرنے لگے حالانکہ ہم نے جب دہری شہریت اختیار کی تھی تو قانون میں اس کی پوری پوری اجازت تھی۔ حکومتِ وقت...
February 08, 2013
کیا اچھی خبریں اٹھ گئیں اس جہان سے؟

برطانیہ میں ایک گمنام سا اخبار نکلتا ہے جس کا نام ہے پازیٹیو نیوز یعنی مثبت خبریں۔ اس اخبار کی رائے ہے کہ دنیا میں بہت سی اچھی، امید افزا اور حوصلہ افزا خبریں بھی ہوتی ہیں جنہیں یہ عام اخبار اہمیت نہیں دیتے۔ اس بے چارے اخبار کی شہرت اور مقبولیت کا یہ عالم ہے کہ بی بی سی کی تاریخی عمارت بُش ہاؤس کی اے ٹی ایم مشین کے پاس کوئی شخص اس کی...
February 01, 2013
نام میں بہت کچھ رکھا ہے

آنجہانی ولیم شیکسپیئر کے ایک مشہور قول کا اردو ترجمہ یوں ہے’ نام میں کیا رکھا ہے ‘ لیکن حقیقت یہ ہے کہ نام میں اتنا بہت کچھ رکھا ہے کہ جہاں کہیں یہ قول لکھا جاتا ہے وہیں ذرا باریک حروف میں ’ ولیم شیکسپیئر‘ کا نام بھی ضرور لکھا جاتا ہے۔ یہی مکالمہ اگر ہمارے بنارس والے آغا حشر کے کسی ڈرامے کا ہوتا تو نہ قول لکھا جاتا ، نہ اس کے نیچے...