آپ آف لائن ہیں
منگل7؍شعبان المعظم 1439ھ24؍اپریل 2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
x
شدید گرمی کے موسم میں ملک بھر میں جاری لوڈ شیڈنگ کے عذاب نے عوام کی زندگی دوبھر کر رکھی ہے اور لوگ حیران ہیں کہ حکومتی مدت کے چار سال مکمل ہوجانے کے باوجود بجلی کی پیداوار میں اضافے کی یقین دہانیاں کہاں گئیں۔ گزشتہ روز قومی اسمبلی میں بھی یہ موضوع گرم رہا جبکہ وزیر اعظم نے بھی اس صورتحال پر منگل کو کابینہ کی کمیٹی برائے توانائی کے خصوصی اجلاس میں سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے وزارت پانی و بجلی کو ہنگامی بنیادوں پر تمام وسائل بروئے کار لاکر بجلی کی پیدوار بڑھانے کی ہدایت کی تھی ۔ وزیر اعظم کی بازپرس پر وزارت پانی و بجلی کا موقف تھا کہ گرمی کی شدت میں غیرمتوقع اضافہ ہوجانے سے بجلی کی طلب یکایک ڈھائی ہزار میگاواٹ سے بھی زیادہ بڑھ گئی ہے تاہم امید ہے کہ بڑھتا ہوا درجہ حرارت ڈیموں میں پانی کی مقدار میں اضافے کا سبب بھی بنے گا جس کے بعد بجلی کی پیدوار بڑھاکر لوڈشیڈنگ کا دورانیہ کم کیا جاسکے گا۔ لیکن وزیر اعظم نے گرمی کا بہانہ قبول نہ کرتے ہوئے سرزنش کی کہ موسم کی شدت اور ڈیموں میں پانی کی کمی کے پیش نظر قبل از وقت منصوبہ بندی ضروری تھی جبکہ وزیر اعلیٰ پنجاب نے گزشتہ روز بھکی پاور پلانٹ کے افتتاح کے موقع پر لوڈ شیڈنگ میں اضافے کے ذمہ داروں کو سزا دیے جانے کی ضرورت کا اظہار کیا ۔ یہ صورتحال حکومت کیلئے انتہائی

x
Advertisement

قابل توجہ ہے کیونکہ اس پوری مدت میں عوام کو یقین دلایا جاتا رہا ہے کہ بجلی کی پیداوار میں مسلسل اضافہ ہورہا ہے لیکن عملی تجربہ اس کے بالکل برعکس ہے اور گرمی شروع ہوتے ہی ملک کے بیشتر حصوں میں چار سال پہلے کی طرح طویل دورانیہ کی لوڈشیڈنگ شروع ہوگئی ہے ۔ موسموں کی آمد و رفت کوئی آسما نی آفت نہیں جواچانک ٹوٹ پڑی ہو، گرمی ہرسال انہی دنوں میں شروع ہوتی ہے لہٰذا لوڈ شیڈنگ کا یہ جواز فی الواقع نااہلی کا بدترین مظاہرہ ہے جس پر متعلقہ حکام کو قرار واقعی سزا دی جانی چاہئے تاکہ آئندہ کیلئے اس غیرذمہ دارانہ طرز عمل کا سدباب ہوسکے۔

.

​​
Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں