آپ آف لائن ہیں
منگل14؍ محرم الحرام 1440 ھ25؍ستمبر 2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

پاکستان مسلم لیگ (ن) کی ’’تحریک برائے عدل‘‘ کیا ہے جسے شروع کرنے کا دعویٰ نواز شریف کررہے ہیں؟یہ ایک سیاسی دائو ہے جس کا مقصد سپریم کورٹ کو ایک جانبدار ادارہ ظاہر کرتے ہوئے تاثر دینا ہے کہ اس نے سابق وزیر ِ اعظم کو غلط طور پر منصب سے ہٹایا، تاریخی طور پر آئین پامال کرنے والے آمروں کا راستہ روکنے کی کبھی کوشش نہیں کی ، اور موجودہ دور میں یہ ایگزیکٹو اور پارلیمان کے اختیارات کو بتدریج اپنے ہاتھ میںلے رہی ہے۔ نوازشریف کے مطابق عدالت کا سب سے بڑا مقصد خود کو تمام اداروں سے برتر پوزیشن پر فائز کرنا ہے ۔
نواز شریف پارلیمنٹ میں واضح اکثریت حاصل کرنے کے لئے عوامی حمایت کی لہر ابھارنے کی کوشش میں ہیں تاکہ وہ آئین میں ترمیم کرسکیں ۔ اگرچہ اُن کا بنیادی مقصد اپنی نااہلی کو ختم کراناہے ، لیکن تاثر یہ دے رہے ہیں کہ وہ دراصل آئین اور اس کے لوازمات، جیسا کہ نمائندہ جمہوریت بمقابل کنٹرولڈ جمہوریت، اختیارات کی علیحدگی بمقابل عدلیہ کی دخل اندازی، قانون کی حکمرانی بمقابل ججوں کی حکمرانی، طے شدہ طریق ِ کار بمقابل من مانی سے دی جانے والی سزا۔ اصولوں کی پاسداری کا نعرہ ایک طرف، نواز شریف کا مقصد واضح دکھائی دیتا ہے۔ وہ جو کچھ عدالت میں ہار چکے ہیں، اُسے انتخابی معرکے میں جیتنے کی امید لگائے ہوئے ہیں۔

/>پاکستان مسلم لیگ (ن) کی تاریخ میں ایسا کوئی اثاثہ نہیں جس سے ظاہر ہو کہ اسے نظام ِعدل کی اصلاح یا آئین کو تقویت دینے میں بہت دلچسپی ہے ۔ نواز شریف نے 14ویں ترمیم کے ذریعے آئین میں آرٹیکل 63A کو شامل کیا تھا۔ یہ آرٹیکل پارٹی کے سربراہان کو پارٹی کے ارکان ِاسمبلی کے ووٹ اور ضمیر کا حاکم بنا دیتا ہے ۔ اُنھوں نے 21ویں ترمیم کی قیادت کی۔ اس کے ذریعے فوجی عدالتوں کا قیام عمل میں آیا اور باقاعدہ قانونی طریق ِ کار اور اختیارات کی علیحدگی کے اصول پامال کیے گئے ۔جب چیف جسٹس افتخار چوہدری نے پی پی پی کا گلا دبوچا ہوا تھا تواُس وقت نواز شریف عدلیہ کی فعالیت کی داد دے رہے تھے ۔
نوا زشریف کو اقتدار سے پی ٹی آئی نے نہیں ، سپریم کورٹ نے نکالا ۔ جب تک سپریم کورٹ قانون کی ایک غیر جانبدار نگران رہتی ہے، نواز شریف کسی طور یہ دعویٰ نہیں کرسکتے کہ ان کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے ۔ لیکن اگر سپریم کورٹ کو سیاسی رقابت کے کھیل میں شریک ایک کھلاڑی (جو وہ یقیناًنہیں ہے ) کے طور پر پیش کیا جائے تو پھر یہ اپنی غیر جانبداری اور قانون کی تشریح کرنے والے حتمی ادارے کی ساکھ کھو دی گئی۔ صرف اسی صورت میں نوازشریف کے پاس مظلومیت کو سیاسی حمایت میں ڈھالنے کا جواز نکلتا ہے ۔ دوست کالم نگار، مشرف زیدی بالکل درست کہتے ہیں کہ نواز شریف محاذآرائی کا راستہ اختیار کرکے سپریم کورٹ کو تائو دلانے میں کامیاب رہے رہیں۔ چاہے غصہ تھا یا اپنے اختیارات پر ناز اور دلیر ی کا التباسی تصور، عدالت اسی میدان میں آگئی ہے جہاں نواز شریف اسے لانا چاہتے تھے ۔
سیاست ، حتی کہ مہذب جمہوری ریاستوں میں بھی ، ایک گندہ کھیل ہے جس میں سب کچھ جائز سمجھا جاتا ہے ۔ سیاسی حریفوں کا ایک دوسرے پر کیچڑ اچھالنا معمول کی بات سمجھا جاتا ہے ۔ لیکن انصاف کا دامن اجلا ہونا چاہیے۔ سیاستدانوں کو تنازعات راس آتے ہیں، ججوںکو نہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ججوں سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ عوام سے دور رہیں گے ۔ وہ نہیں، اُن کے فیصلے بولتے ہیں۔ کیا جج حضرات بنچ سے اشتعال انگیز بیان بازی کا جواب دے سکتے ہیں۔ جارج برنارڈ شا نے کیچڑ سے لت پت کسی جانور سے کشتی لڑنے سے گریز کرنے کی نصیحت کی ہے ۔ ایک تو آپ گندے ہوجائیں گے، اور دوسرے کیچڑ میں کشتی لڑنا اُس جانور کو مرغوب ہے ۔ وہاں آپ اُسے پچھاڑ بھی دیں تو بھی آپ کے کپڑے اجلے نہیں رہیں گے ۔
یہاں سیاست کی برائی نہیں، سیاسی اکھاڑے اور قانون کی عدالت کا فرق واضح کرنامقصود ہے ۔ ہوسکتاہے کہ نوازشریف نظام ِعدل کی اصلاح کے لئے قانون سازی کا کوئی ارادہ نہ رکھتے ہوں۔ وہ یہ بھی جانتے ہوں گے کہ اکیسویں ترمیم کے ذریعے سپریم کورٹ نے خود کو کسی بھی آئینی ترمیم کو ویٹو کرنے کا اختیار دے رکھا ہے۔ مشہور امریکی چیف جسٹس، ہیوز کا کہنا ہے ۔۔۔’’یقیناًہم آئین کے تابع ہیں، لیکن آئین کا تعین بھی جج حضرات ہی کرتے ہیں۔ ‘‘
جمہوریت اور قانون کی حکمرانی ایک دوسرے سے متحارب نہیں،ہم آہنگ ہونے والی اقدار ہیں۔ ان کی بنیاد قانون کی بالا دستی پر ہے ۔ لیکن جب یہ ایک دوسرے سے بر سرِ پیکار ہوں تو جمہوریت، قانون کی حکمرانی اور آئین کی بالا دستی، سب متاثر ہوتے ہیں۔ جب سپریم کورٹ این آر او فیصلے کے بعد پی پی پی حکومت کو سوئس حکام کوخط لکھنے کا حکم دیتی ہے تاکہ آصف زرداری کے خلاف تحقیقات ہوسکیں تو آج قانون کی حکمرانی کے بلند وبانگ نعرے لگانے والے (چاہے وہ ابھی تک پی پی پی میں ہوں یا پی ٹی آئی کی طرف ہجرت کرچکے ہوں) نے خبردار کرتے ہوئے تھا کہ سپریم کورٹ قانون کی حکمرانی کو جمہوریت کے مقابلے پر کھڑا کررہی ہے ۔ اُس وقت نواز شریف ’’قانون کی حکمرانی کے کیمپ ‘‘ میں تھے ۔
2013 ء میں عمران خان نے سپریم کورٹ اور چیف جسٹس چوہدری پر الزامات کی بوچھاڑ کردی کہ اُنھوں نے مبینہ طور پر انتخابی دھاندلی میں معاونت کی، انتخابات چرائے اور جمہوریت کو نقصان پہنچایا۔ تحقیقات کے لئے چیف جسٹس ناصر الملک کی سربراہی میں سپریم کورٹ کا کمیشن قائم ہوا۔ طویل سماعتوں کے بعد بھی انتخابی دھاندلی کا کوئی ثبوت پیش نہ کیاجاسکا۔ اس کے باوجود پی ٹی آئی کے حامی ابھی تک دھاندلی کی تھیوری پر یقین رکھتے ہیں۔ پاناما کیس کے بعد نواز شریف سپریم کورٹ کی مخالف سمت دیکھے جارہے ہیں۔ اب اُن کا بیانیہ ’’جمہوریت بمقابل قانو ن کی حکمرانی ‘‘ ہے ۔ اُن کے سیاسی مخالفین ماضی میں سپریم کورٹ کو برا بھلا کہہ رہے تھے، لیکن اب وہ عدالت کے ساتھ کھڑے ہیں۔ سیاسی قلابازیوں پر حیرت کیسی؟
تاہم سپریم کورٹ چاہے کتنی ہی مقبول اورقابل ِ احترام کیوں نہ ہو، میڈیا کو استعمال کرے یا توہین عدالت کے نوٹسز بھجوا ئے،یہ سیاست دانوں کے ساتھ اُن کے میدان میں اتر کر مقابلہ نہیں کرسکتی ۔ سوئس حکام کو خط لکھنے کے دور میں پی پی پی نے بہت جارحانہ لب و لہجہ اپنایا تھا۔ دوسری طرف سپریم کورٹ اپنے احکامات کا نفاذ کرانے میں یکسوتھی۔ اس نے خط لکھنے سے انکار پر وزیر ِاعظم گیلانی کو نااہل کردیا۔ اُس وقت بہت سے دھڑے چاہتے تھے کہ سپریم کورٹ صدر زرداری کو بھی منصب سے چلتا کرے۔ لیکن صدر زرداری نے اپنی مدت پوری کی اور خط سے کوئی سیاسی تلاطم پیدا نہ ہوا۔
سپریم کورٹ نے جج حضرات کو سنگین دھمکیاں دینے پر الطاف حسین کوبھی توہین کا نوٹس بھجوایا۔ عمران خان کو بھی ایسا ہی نوٹس بھجوایا گیاکیونکہ وہ دھاندلی میں فاضل جج صاحبان کو ملوث کر رہے تھے۔ ان دونوں واقعات میں عدالت کا مقصد تنبیہ کرنا تھا نہ کہ سزا دینا۔ اور سپریم کورٹ یقیناً معافی مانگنے پر توہین کے نوٹس خارج کرنے کی روایت رکھتی ہے۔ پی ٹی آئی اور پاکستان عوامی تحریک کے اسلام آباد دھرنے کے دوران شاہراہِ دستور پر قبضہ کرلیا گیا۔ وکلا پی ٹی آئی اور پاکستان عوامی تحریک کے کارکنوں کی قائم کردہ ’’ سیکورٹی چیک پوسٹس‘‘ سے گزر کر سپریم کورٹ جاتے۔ محترم جج صاحبان کو بھی عدالت پہنچنے کیلئے ایک طویل چکر کاٹنا پڑتا۔ اس دوران کنٹینرز پر سے مغلظات کا طوفان برپا تھا۔ تاہم سیاسی کیچڑ میں اترنے سے گریز کرنے کے لئے توہین ِعدالت کا کوئی نوٹس نہ بھیجا گیا۔ امریکہ میں مالیاتی بحران کے دوران صدر روزویلٹ کی ’’نیو ڈیل‘‘ کو روایت پرست سپریم کورٹ نے خارج کرنے کا عمل جاری رکھا۔ 1936ء میں جب روزویلٹ دوبارہ بھاری اکثریت سے جیت گئے تو اُنھوں نے ایک بل کے ذریعے عدالت کی کمپوزیشن کو تبدیل کرنے کی کوشش کی ۔ اس بل کا عنوان ’’کورٹ پیکنگ پلان ‘‘ تھا۔ ایک عوامی جلسے میںروز ویلٹ نے اس بل کی ضرورت کا احساس دلاتے ہوئے کہا کہ ’’آئین کو عدالت سے، اور عدالت کو خود سے، بچانا ضروری ہوچکا ہے ۔‘‘اگرچہ ابتدائی طور پر عوام نے اس بل کو بہت پذیرائی دی لیکن یہ جلد ہی اپوزیشن کے سیاسی مفاد کی نذر ہوگیا ،ا ور قانون نہ بن سکا۔ ہماری سپریم کورٹ نے نواز شریف کو صادق اور امین نہ پاتے ہوئے نااہل قرار دے دیا۔ اس فیصلے پر جتنی بھی بحث یا تنقید کی جائے، اس کا نفاذ تو بہرحال ہوگیا ۔ اب نواز شریف اپنا سیاسی کیرئیر زندہ رکھنے کے لئے سپریم کورٹ کو اپنے حریف اور جانبدارادارے کے طور پر پیش کررہے ہیں۔ وہ عوام کو بتارہے ہیں کہ اُنہیں ناروا طو رپر عہدے سے ہٹایا گیا ۔ وہ اپنے سیاسی مورچے میںہیں، لیکن سپریم کورٹ کیوں اس تنازع میں الجھ رہی ہے؟ اس نے تنقید کامنہ بند کرنے کے لئے توہین کے قانون کی لبلبی پر انگلی کیوں رکھ دی ہے ؟کیا عدالت میں سرزنش کرنے سے سپریم کورٹ کا وقار بلند ہوتا ہے، یااس سے قانون کی حکمرانی قائم ہوتی ہے ؟پاکستان ایک کمزور جمہوریت رکھتا ہے ۔ اس میں قانون کی حکمرانی کی روایت بہت گہری نہیں۔ اس کا آئین جاندار ، اور ارتقا کے مراحل میں ہے ۔ تاہم شہریوں کی آئینی ضروریات پوری کرنے کے لئے ہمیں ایک ایسی عدالت کی ضرورت ہے جو ساکھ رکھتی ہو اور جس کی غیر جانبداری کسی شک و شبہ سے بالا تر ہو۔ اس کے جج صاحبان ذاتی انا اور عزائم سے بلند ہوں ۔ اُن کا ذو ق ِ انصاف عوامی مقبولیت کی مٹھاس سے آشنانہ ہو۔ نواز شریف کی سپریم کورٹ پر تنقید قابل ِ مذمت ہے، بالکل جس طرح کل عمران خان اور آصف علی زرداری کی تھی۔ اس وقت سوال یہ ہے کہ کیا سپریم کورٹ سیاسی دلدل میں اترنے سے گریز کرے گی یا حساب کتاب برابر کرنے کے لئے اس اکھاڑے میں جا اترے گی؟

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں