| |
Home Page
پیر یکم شوال المکرم 1438ھ 26 جون 2017ء
بابر ستار
June 24, 2017
مافیاز کے اصول

بعض وکلا کے رویے وکلا برادری کی بدنامی کا سبب بن رہے ہیں۔ گزشتہ ہفتے لاہور ہائی کورٹ میں چند درجن وکلا پاکستان بار کونسل( جو ہمارے پیشہ ور انہ اصول اور ضوابط طے کرنے والی سب سے ارفع باڈی ہے) کے ساتھ اظہار ِ یکجہتی کے لئےجمع ہوئے ۔ اس بار کونسل کے خلاف ایک 70 سالہ خاتون نے درخواست دی تھی ۔ اُس خاتون کو 2016 ء کے اختتام سے اب تک اپنی گمشدہ...
June 17, 2017
اشرافیہ کی باہمی کشمکش

سیاسی نظام کو کنٹرول کرنے کے لئے اشرافیہ میں جاری باہمی کشمکش عام افراد کے لئے بہت بڑی خبر اس صورت میں بن سکتی ہے جب وہ نظام ِ کہن کو تہہ و بالا کرنے اور نئی تبدیلیاں لانے کے لئے پرعزم ہوں۔ کیا پاناما سے ایسا ہوپائے گا؟ ایک حوالے سے اس کھیل میں چوائس بہت واضح ہے ۔ شریف برادران عوامی عہدہ رکھتے ہیں۔ اگر وہ یا اُن کے رشتہ دار اپنے معلوم...
June 10, 2017
قانون کی حکمرانی کی آزمائش

(گزشتہ سے پیوستہ) وزیر ِ اعلیٰ پنجاب شہباز شریف چاہتے ہیں کہ صرف اُن کے خاندان کی بجائے سب کا بے لاگ احتساب ہو۔ ایسا مطالبہ کرنے والے حکمران اشرافیہ سے تعلق رکھنے والے وہ پہلے شخص نہیں ہیں۔ جب این آر او کیس کا فیصلہ آنے کے بعد آصف زرداری کے خلاف سوئس کیس پر توجہ مرکوز ہوئی تو پی پی پی چاہتی تھی کہ احتساب کا آغاز آدم ؑ کے فرزندان،...
June 03, 2017
قانون کی حکمرانی کی آزمائش

پی ایم ایل (ن) آخر کار اپنے جذبات پر قابو نہ پاسکی۔ نہال ہاشمی نے کھلے الفاظ میں وہ بات کہہ دی جو نون لیگ کے بہت سے وفادار زیر ِ لب کہہ چکے ہیں۔ اُنھوں نے نواز شریف کا حساب لینے اور پریشان کرنے والے سرکاری افسران (جنہوں نے ریٹائر بھی ہونا ہے) کوخطرناک نتائج کی دھمکیاں دیتے ہوئے کہا کہ اُن پر پاکستان کی سر زمین تنگ کردی جائے گی۔ پی ایم...
May 27, 2017
سوشل میڈیا کو لگام ڈالنے کی کوشش

سوشل میڈیا پر دو واضح مظاہر ہمارے سامنے نمایاں ہیں۔ ایک تو ہمارے درمیان کچھ گروپس کی موجودگی،جن کے ارکان جعلی ناموں سے شر انگیز معلومات پھیلاتے رہتے ہیں۔ ان کی فعالیت مربوط اور جچی تلی ہوتی ہے ۔ اور دوسرا یہ کہ بطور معاشرہ ہم دوسروں سے منفی محرکات کے بغیر ، محض فکری اور مثبت اختلاف کرنے کی صلاحیت نہیں رکھتے ۔ ہم نے اب تک یہ نہیں...
May 13, 2017
’’آئین ِ جواں مرداں‘‘ کیا ہے ؟

اُن دھڑوں کو یقینا سخت صدمہ سہنا پڑا ، اور بعض کے ہاں تو صف ِ ماتم بھی بچھی ہوئی ہے ، جوایک منتخب شدہ حکومت اور فوج کے درمیان ڈاگ فائٹ دیکھنے کی تیاری میں تھے ۔ بلکہ اب وہ فوجی ہائی کمان کے خلاف دل کی بھڑاس نکال رہے ہیں کہ اگر ڈان لیکس کوئی ایشو تھا ہی نہیں تو کیوں کہا جارہا ہے کہ یہ طے ہوگیا ہے ۔ ذرا اُن افراد کی ذہنی حالات کا تصور کریں...
May 06, 2017
پاناما کیس کا دوسرا مرحلہ

اب ہمارے سامنے پاناما فیصلے کو نافذ کرنے کے لئے تشکیل دیا جانے والا بنچ ہے ۔ اس میں بجا طور پر وہی جج حضرات شامل ہیں جنہوں نے کیس کی سماعت کی تھی اور فیصلہ لکھاتھا کہ اس کے لئے مزید تحقیقات کی ضرورت ہے ۔ یہ کارروائی ممکنہ طور پر ایسا رخ اختیار کرسکتی ہے کہ مستقبل بعیدمیں وزیر ِاعظم کو نااہل قرار دیدے ، یا پھر فاضل عدالت اُنہیں فوری...
April 29, 2017
پاناما کیس کا فیصلہ

اگر سیاسی مقبولیت اور کامیابی کا تعین اخلاقیات کرتیں توپاناما کیس کا فیصلہ شریف برادران کی سیاست کے لئے موت کی گھنٹی ثابت ہوتا۔ وزیر ِاعظم کے خلاف کیس یہ تھا کہ وہ بدعنوانی کے مرتکب ہوئے ہیں اور اُن کے زیر کفالت افراد اُن کی اعلانیہ آمدنی سے کہیں بڑھ کر اثاثوں کے مالک ہیں۔ وزیر ِاعظم نے اس بات کو تسلیم کیا کہ اُن کے بچے لندن فلیٹس...
April 22, 2017
پر تشدد مافیا، انصاف اور عدالت

اُن افراد کے محرکات اور فکری میک اپ کو کیسے سمجھا جائے جو توہین کے الزام میں اپنے ساتھی شہریوں پر تشدد کرنا ، اُنہیںزندہ جلانا اور قتل کرنا جائز سمجھتے ہوں، ؟کون سی چیز اس بات کی وضاحت کرتی ہے کہ محض توہین کا الزام ہی کسی ہجوم کے لئے اپنے ہم وطن، بلکہ ہم مذہب شخص کو بلا تحقیق ہلاک کرنے کا جواز بن جائے ؟ ایک ایسے ملک ، جس میں ستانوے...
April 16, 2017
گرفتاری کی سزا

پاکستان میں سوموٹو کے سنہری دور میں ہر شخص کو یقین تھا کہ سابق وفاقی وزیر برائے مذہبی امور، حامد سعید کاظمی اور سابق ڈی جی حج ، رائو شکیل انتہائی گناہ گار افراد ہیں جنہوںنے حج انتظامات تک کو نہ بخشا اور خیانت کے مرتکب ہوئے ۔ سوموٹو کیس نمبر 24(حج انتظامات میں بدعنوانی2010)کا آغاز اس اعلان سے ہوتا ہے ۔۔۔’’ سال 2010ء کے جج انتظامات میں...
April 08, 2017
حقائق سازی اور قطبی رویے

2012میں مجھے ڈی جی آئی ایس پی آر لیفٹیننٹ جنرل عاصم باجوہ نے فون کیا کہ آرمی چیف، جنرل اشفاق کیانی مجھ سے ملنا چاہتے ہیں۔ مجھ جیسا ایک کالم نگار، جو ہمیشہ اس آئینی اصول کو مقدم سمجھتا اور اسی کی وکالت کرتا رہاہو کہ پاکستان میں عسکری اداروں پر سویلینز کا کنٹرول ہونا چاہیے ، کا پریشان ہوجانا فطری بات تھی۔ ایک مرتبہ پہلے بھی مجھے...
April 01, 2017
آپ نظام سے کیا چاہتے ہیں۔ انصاف یا جبر؟

ہمارے بہت سے سیاست دانوں اور اینکرحضرات (جن کے مائیک کے ساتھ جام ِ جمشید بھی انسٹال معلوم ہوتا ہے) نے دعویٰ کیا ہے کہ شرجیل میمن کی پاکستان آمد پر گرفتاری میں نیب کی ناکامی اور ڈاکٹر عاصم حسین کی ضمانت پر رہائی پی پی پی اور پی ایم ایل (ن) کے درمیان کسی نئی ڈیل کا نتیجہ ہے ۔ ایسے کہنے والے یہ تاثر دینے کی کوشش کررہے ہیں کہ ہماری عدلیہ...
March 18, 2017
حسین حقانی کا مضمون اور ہماری منافقت

حسین حقانی نے، جیسا کہ ہمارے وزیر ِ دفاع ہمیں بتاتے ہیں، ایک بار پھر ہماری قومی سلامتی کو خطرے میں ڈال دیا ہے ، اور اس مرتبہ موصوف نے محض اخبار (واشنگٹن پوسٹ) میں ایک مضمون لکھ کر ایسا کردیا ہے ۔ محب ِوطن حلقے حسین حقانی کے جس انکشاف پر مشتعل ہیں، وہ یہ ہے کہ اوباما انتظامیہ اسامہ بن لادن کی تلاش کے لئے پاکستان میں اپنے انٹیلی جنس...
March 11, 2017
جوڈیشل اصلاحات کا عمل اور حقائق

ہمارے ہاںدو معاملات پر وسیع تر اتفاق ِ رائے پایا جاتا ہے۔ ایک یہ کہ ہمارا جسٹس سسٹم شکستہ اور کمزور ہے ، چنانچہ اگر کسی کے ساتھ ریاست یا معاشرے کی طرف سے زیادتی ہوتی ہے اور وہ اس کی داد رسی چاہتا ہے تو تاخیر سے ملنے والے انصاف، یا اس کی عدم دستیابی کی صورت میں وہ مزید محرومی کا شکار ہوجاتا ہے۔ دوسرا یہ کہ تنازعات کو حل کرنے سے قاصر...