آپ آف لائن ہیں
پیر6؍رمضان المبارک 1442ھ 19؍اپریل2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

ماحولیات کے تحفظ کے لیے کام کرنے والی امریکی ایجنسی کے مطابق، اکثر اوقات باہر کے برعکس گھروں کے اندر دو سے پانچ گنا زیادہ آلودگی ہوتی ہے۔ ایئر لیبز میں چیف سائنس آفیسر میتھیو ایس جانسن کے مطابق، گھر کے اندر فضا میں اتنی آلودگی ہوتی ہے جتنی کہ باہر، لیکن اس کے ساتھ گھر کے اندر دیگر آلودہ عناصر بھی شامل ہو جاتے ہیں، جس میں مکان کی تعمیر میں استعمال ہونے والا مواد، کھانا پکانا اور صفائی کے لیے استعمال ہونے والی اشیا شامل ہیں۔ خوش قسمتی سے چند ایسی چیزیں ہیں، جن سے آپ گھر کے اندر کی فضا کو صحت مند بنا سکتے ہیں۔ اس کے لیے ہم ایسی پانچ تراکیب بتاتے ہیں، جن کی مدد سے آپ ایسا کر سکتے ہیں۔

ہوا کو راستہ دیں

گھر میں تازہ ہوا کے لیے دن میں کم از کم ایک بار ساری کھڑکیوں اور دروازوں کو کھول دینا ایک اچھی حکمتِ عملی ہے۔ اگر آپ کو کسی قسم کی الرجی نہیں اور باہر زیادہ شدید موسم نہیں ہے تو اس صورتحال میں گھر کے اندر ہوا کی نکاسی کے نظام کو استعمال کیا جاسکتا ہے، جس میں فلٹر لگے ایئر کنڈیشنگ سسٹم شامل ہیں۔

اس کے علاوہ اگر آپ کھانا پکا رہے ہیں یا نہا رہے ہیں تو اس صورت میں ہوا باہر نکالنے والے فین کا استعمال کریں تاکہ مضرِ صحت ذرّات اور ضرورت سے زیادہ نم ہوا کو باہر نکالا جا سکے۔

گھر کے اندر پودے رکھیں

اگر آپ ہوا صاف کرنے والے مہنگے فلٹرز کا خرچہ برداشت نہیں کر سکتے تو اس صورت میں آپ پودوں کو گھر کے اندر رکھ سکتے ہیں۔ بعض پودے ہوا کے مضرِصحت اجزاء کو صاف کر سکتے ہیں اور یہ گھر کے اندر کی فضا میں آلودگی کی روک تھام کے لیے ایک مؤثر ذریعہ ثابت ہوتے ہیں۔ اگر آپ گھر کے اندر پودے رکھنے کے بارے میں سوچ رہے ہیں تو ذیل میں دیے گئے چند پودوں سے آپ یہ کام شروع کرسکتے ہیں۔

منی پلانٹ: اس پودے کو اُگانا اور اس کی دیکھ بھال کرنا آسان ہوتا ہے۔ یہ قالین اور روغن سے نکلنے والے مضرِ صحت کیمیکلز کو فضا سے ختم کرنے میں مدد دیتا ہے۔

ڈریگن ٹری: یہ درخت مشرقی افریقا میں پایا جاتا ہے اور اسے گھروں اور دفاتر میں آرائش کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ یہ درخت بھی مضرِ صحت کیمیکلز کو فضا سے ختم کرنے میں مدد دیتا ہے۔

اسنیک پلانٹ: یہ پودا رات کے وقت کاربن ڈائی آکسائڈ جذب کرتا ہے۔

ماہرین کے مطابق، آپ جو کوئی بھی پودا گھر میں رکھیں، اس حوالے سے ذہن میں رکھنے والی سب سے اہم بات یہ ہے کہ یہ پودے قدرتی طور پر فضا کو صاف کرتے ہیں۔ تاہم، اس کے لیے ضروری ہے کہ انہیں صحت مند رکھا جائے کیونکہ دوسری صورت میں یہ پودے ہوا میں بائیولوجیکل آلودگی پھیلانا شروع کر دیں گے۔

ماحول دوست طریقے سے بُو کا خاتمہ

آپ تعمیراتی سامان میں استعمال ہونے والے مواد کے بارے میں تو ضرور جانتےہوں گے۔ ہم مصنوعی خوشبو سے جب بھی اس کی بُو ختم کرنے کی کوشش کرتے ہیں تو اس کے نتیجے میں مزید کیمیلز کا اخراج ہوتا ہے، یعنی کہ یہ ہوا کے حساب سے اپنا ردعمل دیتے ہیں اور ممکنہ طور پر خطرناک ثابت ہوتے ہیں۔ مثال کے طور پر گھروں میں صفائی کے لیے استعمال ہونے والا ایسا سامان یا آلات جو ماحول دوست نہیں ہوتے، ان کے استعمال سے فارمل ڈی ہائیڈ کیمیکل کا اخراج ہوسکتا ہے، جس کا تعلق کینسر جیسے مرض سے ہوتا ہے۔

آپ کیا کر سکتے ہیں؟

آپ کو کرنا یہ ہے کہ کپڑوں کی دھلائی کے لیے ایسی مصنوعات کا استعمال کریں، جن میں خوشبو نہیں ہوتی۔ اس کے ساتھ پریشر سے نکلنے والے اسپرے کا استعمال ترک کر دیں، اس میں قالین کو صاف کرنے اور ہوا سے بُو ختم کرنے کے لیے استعمال ہونے والے اسپرے بھی شامل ہوتے ہیں۔ اگر کچن کی بات کی جائے تو وہاں بُو کو ختم کرنے کے لیے لیموں کے ٹکڑے اور بیکنگ سوڈا کا استعمال کیا جاسکتا ہے۔

گھر میں سگریٹ نوشی سے اجتناب

سگریٹ نوشی بذاتِ خود نقصان دہ ہے اور اگر یہ گھر میں کی جائے تو بے حد نقصان دہ ہوتی ہے۔ اجتماعی سگریٹ نوشی کے گھر کی اندرونی فضا پر سنگین اثرات مرتب ہوتے ہیں، خاص کر اگر ہوا کی نکاسی کا انتظام غیر مناسب ہو۔ سگریٹ کا دھواں قریب میں بیٹھے لوگوں کے لیے بے حد نقصان دہ ہوتا ہے اور یہ انھیں خطرناک بیماریوں سے دوچار کر سکتا ہے۔ اگر گھر میں نوازئیدہ بچے ہوں تو سگریٹ نوشی کے نتیجے میں ان کی اچانک موت بھی واقع ہو سکتی ہے۔

الرجی سے نجات حاصل کرنا

پولن اور مٹی کے ذرّات کے نتیجے میں بیمار ہونے کا خدشہ ہوتا ہے، خاص کر اگر آپ کو سانس کی بیماری، پولن الرجی اور دیگر اقسام کی الرجی ہیں۔ ہوا میں نمی کے تناسب سے یہ فضا میں تیزی سے پھیلتے ہیں اور ان لوگوں کو متاثر کر سکتے ہیں جن کو پھیپھڑوں کی بیماری لاحق ہو۔