آپ آف لائن ہیں
منگل22؍ذیقعد 1441ھ 14؍جولائی 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

افغانستان میں صدر اشرف غنی اور ان کے سیاسی حریف ڈاکٹر عبداللہ عبداللہ کے درمیان گزشتہ روز شراکت اقتدار کا معاہدہ طے پا جانے سے اُس سیاسی غیر یقینی کے ختم ہو جانے کے امکانات روشن ہو گئے ہیں جو عام انتخابات کے بعد ڈاکٹر غنی کی صدارت کو ان کے حریف کی جانب سے درست تسلیم نہ کرنے نیز اس منصب کا خود کو جائز حقدار قرار دینے کا نتیجہ تھی۔ اس تناظر میں افغانستان میں پائیدار امن کے قیام کے آرزومند ہر شخص کے لیے شراکت اقتدار کے معاہدے کی صورت میں ہونے والی یہ پیشرفت باعث ِ اطمینان ہے کیونکہ اس کے بعد ملک میں مستحکم سیاسی نظام کے قیام کے لیے بین الافغان امن مذاکرات کی راہ سے ایک بڑی رکاوٹ دور ہو گئی ہے۔ معاہدے کی رو سے ملک کے صدر ڈاکٹر اشرف غنی ہی رہیں گے تاہم کابینہ میں دونوں رہنماؤں کے منتخب کردہ ارکان مساوی تعداد میں شامل ہوں گے جبکہ طالبان کے ساتھ مذاکرات کی قیادت عبداللہ عبداللہ کریں گے۔ ڈاکٹر غنی کے پچھلے دورِ حکومت میں بھی عبداللہ عبداللہ ان کے ساتھ ایسے ہی ایک معاہدے کی بنیاد پر شریک اقتدار تھے تاہم اس پر دونوں فریقوں کو رضامند کرنے میں کلیدی کردار امریکہ نے ادا کیا تھا جبکہ تازہ معاہدہ بظاہر خود افغان سیاسی قوتوں کے اپنے مفاہمتی جذبے کا حاصل ہے جس کا واضح اظہار ڈاکٹر عبداللہ کے ٹویٹر پیغام کے ان الفاظ سے ہوتا ہے کہ اب ہمیں بحیثیت قوم ایک ساتھ کام کرنا اور مسائل کا قابل عمل حل تلاش کرنا ہے۔ پاکستانی دفتر خارجہ، امریکی وزیر خارجہ اور نیٹو کے سربراہ کی جانب سے معاہدے کا خیرمقدم اسی امید کے ساتھ کیا گیا ہے کہ یہ مفاہمت ملک میں پائیدار سیاسی استحکام کا باعث بنے گی اور بین الافغان مذاکرات کے ذریعے اس منزل کی جانب جلد از جلد پیش قدمی شروع کی جائے گی۔ خدا کرے کہ دونوں رہنما ان توقعات پر پورا اتر سکیں اور افغان قوم عشروں سے جاری بدامنی سے مستقل طور پر نجات پا سکے۔