آپ آف لائن ہیں
پیر21؍ذیقعد 1441ھ 13؍جولائی 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

خواتین کی ترقی کئی عشرے پیچھے جانے کا خطرہ ہے،ماہرین

لندن(جنگ نیوز)مساوی تنخواہ ایکٹ کی پچاسویں سالگرہ کے موقع پر ماہرین نے کہا ہے کہ وبائی مرض کورونا وائرس صنفی مساوات پر تباہ کن اثرات ڈال رہا ہے اور یہ خواتین کو کئی عشرے پیچھے دھکیل سکتا ہے۔یہ انکشاف ہوا ہے کہ خواتین اضافی بچوں کی دیکھ بھال اور گھریلو کام کاج برداشت کر رہی ہیں اور وہ مردوں ، مہم چلانے والوں ، سیاستدانوں اور ورک ماہرین کی نسبت زیادہ تعداد میں ملازمت سے محروم ہو رہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ حکومت میں خواتین کی آوازوں کی کمی سے بھی پچاس سال کی ترقی کومعکوس کا خطرہ درپیش ہے۔فوسٹیٹ سوسائٹی کی چیف ایگزیکٹو سیم سمتھرس نے کہا کہ میرے خیال میں خواتین کے کام کی جگہ مساوات کے اس بحران سے خواتین کئی دہائیوں پیچھے چلی جائیں گی جب تک کہ حکومت اس کو روکنے کے لئے مداخلت نہیں کرتی ہے۔ادارہ برائے مالیاتی مطالعات اور یو سی ایل انسٹی ٹیوٹ آف ایجوکیشن نے اس ہفتے دریافت کیا کہ ماؤں کے مستقل طور پر ملازمت سے محروم ہونے یا ملازمت چھوڑنے کے 47 فیصدسے زائد امکانات تھے ، اور اس بحران کے آغاز سے ہی 14 فیصد طویل رخصت پر جاچکی ہیں۔ریزولوشن فاؤنڈیشن کے اعداد و شمار سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ 10 کم آمدنی والوں میں سے صرف ایک ہی گھر سے کام کرسکتا ہے ، اور ٹی یو سی کے جنرل سکریٹری فرانسس او گریڈی نے کہا کہ کم آمدنی کرنے والوں میں 69 فیصد خواتین ہیں ۔انہوں نے کہا کہ محنت کش خواتین کورونا وائرس کے خلاف لڑائی کی قیادت کر رہی ہیں ، لیکن ان میں سے لاکھوں کم تنخواہ اور غیر محفوظ ملازمتوں کا شکار ہیں۔ ہمیں ایک حساب کتاب درکار ہے کہ ہم خواتین کے کام کو کس قدر اہمیت اور اجر دیتے ہیں۔بزنس ان دی کمیونٹی کے مطابق کورونا وائرس کے بحران کی وجہ سے حکومت نے کمپنیوں کو اس سال صنفی تنخواہوں کے فرق کا ڈیٹا فائل کرنے سے استثنیٰ دے دیا۔جس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے متعدد کمپنیوں نے ڈیٹا فائل نہیں کیا۔تجزیہ کاروں کا کہنا ہے تنخواہوں میں صنفی امتیاز کے خاتمے میں دو سو سال لگیں گے۔طبی عملے کی کچھ حاملہ کارکنوں کا کہنا ہے کہ انھیں بحران کے دوران کام کرنے پر مجبور کا گیا ، جبکہ دیگر نے ملازمت سے رخصت دینے کی شکایت کی ہے۔ماہرین نے چائلڈ کیئر بحران کے بارے میں بھی پیش گوئی کی،اور فوسیٹ سوسائٹی کا اندازہ ہے کہ 150،000بچوں کی دیکھ بھال کی خدمات فراہم کرنے والے روزگار سے محروم ہوسکتے ہیں،جن میں 97 فیصد خواتین ہیں۔دفتر برائے قومی شماریات کی نئی تحقیق کے مطابق مرد روزانہ خواتین کے مقابلے میں ایک گھنٹہ کم اجرت پر کام کررہے ہیں،لیکن وہ اپنی ذمہ داریوں میں اضافہ کررہے ہیں۔رپورٹس سے پتا چلتا ہے کہ دنیا بھر میں لاک ڈاؤن کے دوران خواتین کے خلاف تشدد میں بہت زیادہ اضافہ ہوا ہے،برطانیہ کی گھریلو تشدد کی ویب سائٹ سے رابطہ کرنے والوں میں دس گنا اضافہ ہوا ہے۔
یورپ سے سے مزید