آپ آف لائن ہیں
منگل5؍جمادی الثانی 1442ھ 19؍جنوری 2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group
خیال تازہ … شہزادعلی
سابق امریکی صدر بارک اوبامہ کی نئی تصنیف، ’’اے پرامسڈ لینڈ‘‘ جس نے اشاعت کے ساتھ ہی فروخت کے نئے ریکارڈ قائم کیے ہیں اور بڑی تعداد میں ناقدین کو پہلے ہفتے میں ہی متوجہ کرلیا ہے، برطانیہ میں اس کی قیمت 35 پاونڈ ہے تاہم یہاں لوٹن کے ڈبلیو ایچ سمتھ بک سٹور پر 10پائونڈ ڈسکاؤنٹ کے ساتھ ویک اینڈ پر 25 پونڈ میں دستیاب تھی، نیو یارک ٹائمز میں این پراساد فیل برک نے لکھا ہے کہ منگل کے روز منظر عام پر آنے والی بارک اوباما کی صدارتی یادداشتوں، ’’ایک وعدہ شدہ سرزمین‘‘ کے پہلے جلد کا انتظار ختم ہوگیا ہے۔ اوباما کو یہ کتاب شائع کرنے میں تین سال اور 10 ماہ لگے جو پچھلی صدی میں کسی بھی دوسرے امریکی صدر سے زیادہ لمبا عرصہ ہے، اوباما کی نسبتاً سست رفتاری کی کیا وجوہات ہیں ، اس پر ایک نظر ڈالیں کہ انہوں نے اپنی یادداشت کس طرح تیار کی، اور ماضی کے صدور ان سے کس طرح رجوع کرتے ہیں کچھ جوابات تجویز کرتے ہیں۔ پہلے یہ کہ اوبامہ کی کتاب طویل ہے۔ ٹائمز میں جینیفر سلائی نے ایک جائزہ میں وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے ابتدائی طور پر 500 صفحات پر مشتمل ایک یادداشت لکھنے اور ایک سال میں مکمل کرنے کا ارادہ کیا اور یہ صرف ایک والیم ہے۔ دوسری جلد پر ابھی کام جاری ہے، اس کے باوجود دوسرے صدور نے کم وقت میں اسی طرح

کی لمبی خودنوشت شائع کیں۔ بل کلنٹن کی ’’میری زندگی‘‘ وہائٹ ​​ہاؤس چھوڑنے کے بعد ساڑھے تین سال سے بھی کم وقت میں شائع ہوئی اور اس کا وزن تقریباً ایک ہزار صفحات پر تھا۔ ہیری ٹرومین نے اپنی دو جلدوں کی یادداشتوں کی پہلی قسط اوبامہ کی نسبت ایک سال قبل شائع کی، فرق یہ ہے کہ اوباما کا پیچیدہ انداز اور کتاب خود لکھنے پر اصرار دوسرا اشارہ پیش کرتے ہیں، 44 ویں صدر کے بارے میں دو کتابوں کے مصنف جوناتھن الٹر نے کہا کہ اوباما ایک حقیقی ادبی اسٹائلسٹ ہیں اور واضح کیا کہ اس طرح کی تخلیق آسان کام نہیں خود بحراوقیانوس کے ایک انٹرویو میں اوباما نے ایک ہی پیراگراف میں گھنٹوں سوچ بچار کرنے کا اعتراف کیا تھا واقعی شاہکاریوں ہی تو تخلیق نہیں ہوجاتے جیسا کہ میں اس کو سمجھتا ہوں، وہ بہت ہی عمدہ انداز میں لکھتا ہے یہ تہنیتی الفاظ پیٹر آسنوس نے کہے ہیں جنہوں نے ’’ڈریمز فار مائی فادر‘‘ شائع کی تھی ، کلنٹن نے ایک مختلف معاملہ اٹھایا، اور سابق خارجہ پالیسی کے مصنف، تاریخ دان ٹیڈ وڈمر کی خدمات حاصل کیں تاکہ ان کی ابتدائی زندگی کے بارے میں ان کا انٹرویو لیا جائے۔ دوسرے صدور، جیسے لنڈن جانسن اور رونالڈ ریگن ، مددگاروں اور ماضی کے لکھنے والوں کی مدد سے اپنی کتابیں تیزی سے شائع کرنے میں کامیاب ہوگئے۔ اوبامہ کے پبلشر کا کہنا ہے کہ معاونین نے تحقیق میں ان کی مدد کی لیکن انہوں نے یہ یادداشت خود لکھی ہے۔ یہ ایک امتیاز ہے جو اوبامہ کو ان کے کئی پشرو صدور سے ممتاز کرتا ہے، صدارتی کتابوں کی تاریخ کے مصنف کریگ فہر مین نے کہا کہ صدارتی یادداشتیں واقعی ایک سخت صنف ہیں، ہم نے بہت سے باصلاحیت صدور کے ساتھ مددگار اور گھوسٹ رائٹرز بھی دیکھے ہیں، ابتدائیہ ہی یہ واضح کرنے کے لیے کافی ہے کہ اوبامہ کی اس تصنیف میں تاریخ کا ایک انتہائی گہرا ذاتی محاسبہ شامل ہے جو ہمیں جمہوریت کی طاقت پر یقین کرنے کی ترغیب دیتا ہے، اپنی صدارتی یادداشتوں کی ہلچل سے پہلی جلد میں اوبامہ آزاد دنیا کے رہنما کے طور پر اور اپنی شناخت ڈھونڈنے والے نوجوان سے کہانی سناتے ہیں اور اپنی سیاسی تعلیم اور اس کے اہم لمحات دونوں کو ذاتی طور پر تفصیل سے بیان کرتے ہیں۔ ان کی تاریخی صدارت کی پہلی مدت، ڈرامائی تبدیلیوں اور ہنگاموں کا وقت، اوباما اپنی ابتدائی سیاسی امنگوں سے لے کر 4 نومبر 2008 کی آبیاری تک، طاقت کے مظہر کرنے والی اس اہم سیاسی خواہش سے لے کر قارئین کو اس سفر پر لے کر گامزن ہیں جب وہ امریکہ کے 44 ویں صدر منتخب ہوئے تھے اور وہ پہلے فرایقی شخص بن گئے تھے جو امریکی قوم کے اعلی عہدے پر فائز ہوئے ، ایوان صدر کی عکاسی کرتے ہوئے وہ اعلیٰ حد تک پہنچنے اور صدارتی اقتدار کی حدود اور ساتھ ہی امریکی پارٹی کی سیاست اور بین الاقوامی سفارت کاری کی حرکیات کے بارے میں ایک واحد بصیرت کی ایک انوکھی اور سوچ سمجھ کر ایک دوسرے کی پیش کش کرتے ہیں۔ اوباما قارئین کو اوول آفس اور وہائٹ ​​ہاؤس سچویشن روم کے اندر اور ماسکو، قاہرہ، بیجنگ اور اس سے آگے لے جاتے ہیں ،وہ ہمیں ان مواقع پر شریک کرتے ہیں جب وہ اپنی کابینہ کو اکٹھا کرتے ہیں اور آرام نہیں کرتے اور عالمی مالیاتی بحران سے نبرد آزما ہوتے ہیں، ولادیمیر پیوٹن کے حوالے اہداف اٹھائے جاتے ہیں، بظاہر ناقابل تلافی مشکلات پر قابو پالیا جاتا ہے، افغانستان میں امریکی حکمت عملی کے بارے میں جرنیلوں کے ساتھ جھڑپیں، وال سٹریٹ اصلاحات اور آپریشن نیپچون اسپیئر جو اسامہ بن لادن کی موت پر منتج ہوتا ہے ایک وعدہ شدہ زمین غیرمعمولی خود شناسی ہے، تاریخ کے ساتھ ایک شخص کی شرط کی کہانی ، عالمی سطح پر آزمائے جانے والے برادری کے منتظم کا اعتماد، سیاہ فام امریکی کی حیثیت سے منصب کے لئے انتخابی توازن برقرار رکھنے کے بارے میں اوباما واضح ہیں، ʼامید اور تبدیلیʼ کے پیغامات سے خوش آئند نسل کی توقعات رکھتے ہیں اور اعلی مفادات کے فیصلے کرنے کے اخلاقی چیلنجوں کا مقابلہ کرتے ہیں۔ وہ ان قوتوں کے بارے میں واضح ہیں جنہوں نے ملک اور بیرون ملک ان کی مخالفت کی مگر پھر بھی وہ اپنے اعتقاد سے کبھی نہیں ہٹتے، وہ اپنے اس یقین سے کبھی بھی مایوس نہیں ہوتے کہ عظیم اور جاری امریکی تجربے کے اندر ہی ترقی ہمیشہ ممکن ہے۔یہ خوبصورتی سے لکھی گئی اور طاقتور کتاب بارک اوباما کے اس یقین کو عام کرتی ہے کہ جمہوریت کسی بھی طور کسی اعلٰی شے کا عطا کردہ تحفہ نہیں ہے بلکہ یہ ہمدردی اور مشترکہ تفہیم پر قائم ہے اور جسے دن بہ دن مل کر تعمیر کیا جاتا ہے۔ یہ ہفتے کی ’’آبزرور بک‘‘ منتخب ہوئی ہے اور اس نے قریب قریب مختلف سطح پر خاصی پزیرائی حاصل کی ہے، آبزرور میں پیٹر کونراڈ نے اس یادداشت کو صدارت کا ایک ’’شاعرانہ اکاؤنٹ‘‘ کہا ہے جب کہ دی انڈی پنڈنٹ کے شان اوگریڈی نے 44 ویں صدر کے تازہ ترین کو "امریکہ کے بہترین صدر کی طرف سے ایک خوبصورت، سوچی سمجھی یادداشت کہا ہے۔ اوباما کی خوبصورتی سے تحریری یادداشت ہے جو ایک تھرل کی طرح لکھی گئی ہے۔ دیباچہ میں اوباما نے لکھا کہ جب انھوں نے فیصلہ کیا کہ وہ اپنے دور صدارت کی داستان تحریر کریں گے تو ان کا خیال تھا کہ وہ 500 صفحات پر مبنی کتاب ہو گی جسے وہ سال بھر میں مکمل کرلیں گے لیکن مزید تین سال اور 200 مزید صفحات کے باوجود ان کی کہانی کا صرف پہلا حصہ ہی مکمل ہوا ہے۔ اسے سات حصوں اور 27 ابواب میں تقسیم کیا گیا ہے، اوبامہ آغاز سے اختتام تک ایک منجھے ہوئے لکھاری دکھائی دیتے ہیں، ان کے خیالات سوچوں یا عمل سے چاہے ہم کتنا اختلاف رکھیں مگر وہ واقعات کی منظر کشی بھرپور طریقے سے کرتے ہیں اور ایک لکھنے والے کے لیے مستعمل ڈیوائسیز کا بھرپور استعمال کرتے ہوئے نظر آتے ہیں یعنی کبھی ان کا فوکس شفٹ ہوتا ہے اور جیسا کہ مواد تخلیق اور ترتیب پاتا ہے لکھنے کا موڈ بدلتا ہے، کتاب کا پارٹ ٹو،یس وی کین Yes we can، خاصا متاثر کن ہے، جب 2007 کی فروری کی ایک خوشگوار صبح کو مسٹر اوبامہ کو اسی سٹیج سے خطاب کا موقع ملتا ہے جہاں سے ابراھم لنکن نے اپنی ہائوس ڈیوائڈیڈ House divided تقریر کی تھی، اوبامہ کو سننے کے لیے 15 ہزار سے زائد لوگ جمع تھے، ان کی سپیچ نے کمپین کے بڑے موضوعات کا احاطہ کیا تھا، طویل مدتی مسائل جن میں صحت عامہ اور ماحولیاتی تبدیلیوں سے پیدا شدہ مسائل شامل تھے، پیش لفظ میں اوبامہ لکھتے ہیں کہ ہم اکٹھے رہنا سیکھیں گے، ایک دوسرے سے تعاون کریں گے اور دوسروں کی عزت و احترام کی شناخت کریں گے، کاش اوبامہ کے یہ الفاظ حقیقت کا روپ دھار لیں، آگے لکھتے ہیں کہ اور دنیا امریکہ کو واچ کر رہی ہے ، تاریخ کی واحد طاقت، جو اس سرزمین کےتمام لوگوں پر مشتمل ہے جس میں ہر رنگ نسل مذہب اور ثقافت کے لوگ شامل ہیں ، لوگ دیکھنا چاہتے ہیں کہ کیا جمہوریت کا ہمارا تجربہ کام کرتا ہے، یہ دیکھنے کے متمنی ہیں کہ ہم وہ کر سکتے ہیں جو آج تک کوئی قوم نہیں کر پائی ، یہ بھی لکھا ہے کہ کسی سے بھی بڑھ کر یہ کتاب ان نوجوانوں کے لئے دنیا کی تعمیر نو کا دعوت نامہ ہے اور محنت، عزم اور تخیل کی ایک بڑی مقدار کے ذریعہ ایک ایسا امریکہ، جو آخر کار ہم سب کے لیے بہترین ہے اس کے ساتھ صف بندی کرنی ہے، کاش ہمارا بھی کوئی سابق یا موجودہ حکمران ایسی کتب تحریر کر سکے جس میں لوگوں کو اچھے مستقبل کی نوید اور امید دلائی جائے۔

یورپ سے سے مزید