Advertisement

’ڈاک کا عالمی دن‘

October 09, 2019
 

Your browser doesnt support HTML5 video.

پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ڈاک کا عالمی دن منایا جارہا ہ

پاکستان سمیت دنیا بھر میں آج ڈاک کا عالمی دن منایا جارہا ہے جس کا مقصد ڈاک کے نظام کو بہتر بنانا، محکمہ ڈاک کی اہمیت اور اس کی کارکردگی کو اُجاگر کرنا ہے۔

دنیا میں پہلا ڈاک کا عالمی دن 9 اکتوبر 1980 کو منایا گیا۔ ہر سال دنیا کے 160 سے زائد ممالک یہ عالمی دن مناتے ہیں اور ہر وہ ملک جو اقوام متحدہ کی خصوصی تنظیم یونی ورسل پوسٹل یونین (UPU) کے ممبران میں شامل ہے اس موقع پر خصوصی ڈاک ٹکٹ کا اجراء کرتا ہے۔

ڈاک کا نظام ایک تاریخی اور عالمی نظام ہے۔ برصغیر پاک و ہند میں پہلا ڈاک خانہ 1837 میں قیام پذیر ہوچکا تھا لیکن ایک طویل عرصے تک برطانوی ڈاک ٹکٹوں سے کام چلایا جاتا رہا ہے۔

تقسیم ِ ہند کے بعد15 اگست 1947 سے پاکستان پوسٹ نے لاہور سے اپنا کام شروع کیا، اسی سال پاکستان یونی ورسل پوسٹل یونین کا نواسی واں رکن بنا۔

سن 1948 میں پاکستان پوسٹ نے ملک کے پہلے جشن ِ آزادی کے موقع پر اپنے پہلے یادگاری ٹکٹ شائع کیے۔

شعبہ ادب سے وابستہ افراد خط کو آدھی ملاقات کہتے ہیں اور خط کو ایک جگہ سے دوسری جگہ پہنچانے والا شخص ڈاکیا کہلاتا ہے ، برسوں قبل روزانہ ڈاکیا گلے میں ایک تھیلا لٹکائے گلی گلی ، گاؤں گاؤں ڈاک کے ذریعے لوگوں کے آئے ہوئے خطوط پہنچاتا نظر آتا تھا لیکن اب یہ شخص کم ہی دکھائی دیتا ہے۔

دور جدید میں ترقی کے سفر میں جہاں فاصلے سمٹ گئے وہیں پیغام رسانی کے ذرائع میں بھی جدت آتی گئی ،خط کی جگہ فیکس، لینڈ لائن فون، پھر موبائل فون، انٹر نیٹ، ای میل اور اب واٹس ایپ کے آنے سے ڈاکیا اور ڈاک کے نظام کی اہمیت میں کمی آئی ہے۔


مکمل خبر پڑھیں