خواتین کو نظر انداز کرنا مناسب نہیں

March 31, 2016
 

خواتین کے حقوق، ان کردار اور ان کے حقوق کے تحفظ کے حوالے سے اگر اسلامی تعلیمات پر نظر ڈالی جائے تو دنیا کا کوئی مذہب اور معاشرہ اس کی مثال پیش نہیں کر سکتا، اس لئے کہ ان کے حقوق اور کردار کے تحفظ میں نبی کریمﷺ کا کردار ایک مکمل عملی نمونہ ہے۔ ظہور اسلام سے قبل مکہ میں اکثر لوگ اپنی لڑکیوں کو پیدا ہوتے ہی زندہ دفن کر دیا کرتے تھے کیونکہ وہ ایک لڑکی کی تربیت اس کی دیکھ بھال اور اس کے اخراجات کو اپنی بساط سے بڑھ کر خیال کرتے تھے اور اسے اپنی توہین بھی خیال کرتے تھے، چنانچہ نبی کریمﷺ نے اس ظالمانہ فعل کی شدید مخالفت کرتے ہوئے اس سے منع فرمایا اور اسے انسانی اقدار کے خلاف ایک وحشیانہ قدم قرار دیا، پھر آپؐ نے ہر شعبہ زندگی میں خواتین کے حقوق اور کردار کا بھرپور تحفظ کرتے ہوئے جنگ بدر کے قیدیوں کو جو رہائی کے لئے فدیہ کی رقم ادا نہیں کرسکتے تھے اور پڑھے لکھے تھے ان کو یہ ذمہ داری سوپنی کہ ہر قیدی جو فدیہ ادا کرنے کی سکت نہیں رکھتا اور آزاد ہونا چاہتا ہے وہ دس دس مسلمان بچوں کو لکھنا پڑھنا سکھا دے، چنانچہ اس طرح بہت سے بچے جن میں لڑکیاں بھی شامل تھیں، تعلیم حاصل کرنے میں کامیاب ہوئیں۔ اس کے بعد بھی مدینہ منورہ میں کئی مسلمان خواتین اور بعض ازواج مطہراتؓ نے بھی عورتوں کو لکھنا پڑھنا سکھایا اور ان میں ایسا شعور پیدا کیا جو انہیں ان کے حقوق کا تحفظ کرنے میں ممد و معاون ثابت ہوا اور یوں ایک روشن خیال اور انصاف پسند معاشرے نے جنم لیا۔ اس کے بعداسلام کے فروغ اور اسلامی سلطنت قائم ہونے سے خواتین معاشرے کا ایک ایسا کردار بن کر سامنے آئیں کہ انہوں نے نہ صرف اپنے حقوق کا تحفظ کیا بلکہ دوسروں کے حقوق کا بھی تحفظ کرتے ہوئے ظلم و ستم کے خلاف آواز بلند کی۔
بعض ممالک میں خواتین نے حکمرانوں کا کردار بھی ادا کیا ،اس حوالے سے وزیر اعظم پاکستان میاں نواز شریف کا یہ کہنا مبنی برحقیقت ہے کہ خواتین کو نظرانداز کرکے کوئی بھی ملک جدید اور ترقی یافتہ نہیں بن سکتا۔ مذہبی اختلافات سے قطع نظر، آج اور آج سے پہلے کئی یورپی ممالک میں خواتین ملک کی سربراہی اور قیادت کے فرائض انجام دے چکی ہیں اور آج اس کی مثال ہمارے سامنے ہے کہ دنیا کا سب سے ترقی یافتہ ملک جہاں انتخابات کا عمل جاری ہے وہاں خاتون سیاستدان قومی سیاست پر مکمل دسترس رکھتی ہیں اور برطانیہ میں بھی ایک خاتون حکمرانی کے فرائض انجام دے رہی ہیں۔ اس حوالے سے یہ کہنا بھی مبالغہ آمیز نہیں کہ ملکی ترقی میں خواتین کا کردار اتنا ہی اہم ہے جتنا مردوں کا۔ ملک کی سماجی، معاشی، صنعتی اور تعلیمی ترقی کے لئے خواتین کے حقوق کا تحفظ حکومت کی اولین ذمہ داری ہے۔ بانی پاکستان بابائے قوم قائد اعظمؒ نے بھی خواتین کے حقوق کے تحفظ اور ان کے لئے تمام مراعات کی فراہمی پر زور دیا تھا ان کی ہمشیرہ محترمہ فاطمہ جناح نے پوری سیاسی زندگی میں اپنے بھائی کے ساتھ رہتے ہوئے ان کی بھرپور مدد کی اور ہر شعبہ زندگی میں ان سے بھرپور تعاون کیا۔ وہ اس حوالے پاکستان کو ایک ترقی یافتہ ملک بنانے کے لئے سرگرم عمل رہیں اور اس کے ساتھ ساتھ انہوں نے تمام دوسرے مذہبی فرقوں سے تعلق رکھنے والی خواتین کی بھی مکمل سرپرستی کی۔ لہٰذا آج ضرورت اس امر کی ہے کہ لسانی، علاقائی، سیاسی، مذہبی اور تعصب کی بنیادوں پر خواتین کے حقوق کو پامال نہ کیا جائے بلکہ ہر شعبہ زندگی میں ان کی حوصلہ افزائی کی جائے کیونکہ اسی میں ملک کی فلاح و کامرانی ہے۔


مکمل خبر پڑھیں