آپ آف لائن ہیں
اتوار 12؍محرم الحرام 1440ھ 23؍ ستمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

بھارت کے سابق وزیراعظم واجپائی کی آخری رسومات سرکاری اعزاز کے ساتھ اداکردی گئیں۔ اس موقع پربھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی، صدر رام ناتھ کووند، بی جے پی صدر امیت شاہ ، سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ اور کانگریس کے صدر راہول گاندھی موجود تھے۔

تینوں فوجی سربراہان کی جانب سے انہیں خراج عقیدت پیش کیا گیا۔ ان کی ڈیڈ باڈی آئی ٹی او ، دہلی گیٹ شانتی ون چوک ہوتے ہوئےقومی یادگار پرلےجائی گئی۔

اس موقع پر ہزاروںکی تعداد میں ان کے مداح موجود تھے ۔سابق وزیر اعظم طویل علالت کے بعد جمعرات کو آل انڈیا انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسزمیں 93 سال کی عمر میںچل بسے تھے۔

انہوں نے بحران کے کئی مواقع پر ملک کو قیادت بخشی اور سیاست کو آگے بڑھاتے ہوئے حکومت کی باگ ڈور سنبھالی۔

آخری رسومات کی ادائیگی کے موقع پر ٹریفک اژدہا م کے پیش نظردہلی ،راجستھان شاہراہ کے علاوہ دہلی کی 25 سڑکیں بندرہیں اور تقریباً20ہزارسیکورٹی اہلکا ر تعینات کئے گئے تھے۔

اس سے قبل ان کی جسد خاکی 6اے کرشنا مینن مارگ دہلی میں رکھی گئی تھی جسے آج صبح 8بجے بی جے پی کے ہیڈ کوارٹر لایا گیاجہاں ایک بجے تک ملک کی مایہ ناز شخصیات اور اورنامور سیاستدانوں کا ہجوم ان کی میت کا آخری دیدار کیلئے امڈ پڑا۔

میت کو وہاں سے آخری سفر پر راج گھاٹ کے قریب واقع قومی یادگارلے جایاگیا جہاں شام 4بجے آخری رسومات ادا کی گئیں۔

نریندر مودی نے بی جے پی ہیڈکوارٹر پہنچ کر آخری دیدار کیا۔آر ایس ایس چیف موہن بھاگوت نے سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کو خراج عقیدت پیش کیا۔

آخری دیدار کیلئے مشہور مصنف اور شاعر جاوید اختراور شبانہ اعظمی نےانہیں خراج عقیدت پیش کیا ۔

جاوید اختر نے کہا واجپائی بڑےسیاستداں اورمدبر تھے ، ان کے مخالفین بھی ان سے پیار کرتے تھے۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں