آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
جمعہ20؍محرم الحرام 1441ھ 20؍ستمبر 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

تفہیم المسائل

سوال: ہم نے تعمیر نو کے لئے اپنی مسجد شہید کردی تھی ،جس کی وجہ سے رمضان میں مسجد میں کوئی شخص اعتکاف نہ کرسکا ۔کیا اس کا کوئی گناہ ہوگا ؟(نذرمحمد )

جواب: رمضان المبارک کے آخری عشرے کا اعتکاف ’’سنّت مؤکّدہ علیٰ الکفایہ ‘‘ ہے ۔شہرکے کسی محلے یا قصبے اور بستی میں اگر کسی ایک نے کرلیاتو سب بری الذمہ ہوجائیں گے ا ور اگر کسی نے نہ کیا تو سب سے جواب دہی ہوگی۔سنّت مؤکدہ علیٰ الکفایہ ہونے کا معنیٰ یہ ہے کہ محلے میں کسی ایک کی جانب سے ادائیگی پر تمام لوگ بری الذمہ ہوگئے ۔تنویرالابصار مع الدرالمختار میں ہے :ترجمہ:’’سنت کفایہ ،اس کی مثال تراویح کی نماز کا باجماعت قائم کیاجانا ہے، پس اگر بعض نے قائم کی تو باقی لوگوں سے جماعت ساقط ہوگئی(نہ کہ نمازِ تراویح) ،تو وہ بلاعذر اُس کے ترک کئے جانے پر گناہ گار نہیں ہوں گے اوراگر اعتکاف سنت عین ہوتا ،تب بھی ترکِ سنّت کا گناہ ترکِ واجب سے کم ہوگا ،(جلد3،ص:383)‘‘۔

بہترتویہ تھا کہ مسجد میں خیمہ لگاکر کسی کو اعتکاف کے لئے بٹھا دیاجاتا، لیکن اگر محلے میں اور مساجد بھی ہیں، جن میں محلے کے لوگوں نے اعتکاف کیاہو ،تو کافی ہے ،تمام محلے سے ساقط ہوگیا۔ صاحبِ مراقی الفلاح علامہ حَسَن بن عمار بن علی شرنبلالی لکھتے ہیں:’’(اعتکاف )کسی ایسی مسجدمیں جہاں پانچ وقت نماز باجماعت ہوتی ہو، (اعتکاف کی) نیت سے ٹھہرناہے،پس ایسی مسجد جہاں باجماعت نماز نہ ہوتی ہو ،اعتکاف صحیح نہیں ہے ،یہی مختار مذہب ہے ،(جلد2،ص:373-374)‘‘۔صاحبِ مراقی الفلاح کے اِس قول کی یہ حکمت معلوم ہوتی ہے کہ اگر قرب وجوار میں اور بھی مساجد ہوں ،جہاں باجماعت نماز ہوتی ہو ،تو ایسی صورت میں اُسے مسجدِ جماعت میں ہی اعتکاف کرنا چاہئے ۔اِس سے معلوم یہ ہوتاہے کہ اگرکسی عذر کے سبب کسی مسجد میں اعتکاف نہیں ہوسکا اوراسی محلے کی دوسری مسجد میں اعتکاف کیاگیاہے ،تو یہ اعتکاف محلے بھر سے حرج اٹھانے کے لئے کافی ہے ،کوئی گناہ گار نہیں ہوا۔

اقراء سے مزید