آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
اتوار19؍ربیع الاوّل 1441ھ 17؍نومبر 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز

اوول(لندن) کے میدان پر 18جون2017ء کو آئی سی سی چیمپئنز ٹرافی کے فائنل میں پاکستان نے روایتی حریف بھارت کو شکست دی تو وکٹ کیپر کپتان سرفراز احمد ایک ہیرو بن کر ابھرے،البتہ چیف سلیکٹر انضمام الحق اور کوچ مکی آرتھر کے درمیان سرفراز احمد کہیں بیچ ہی میں دکھائی دئیے۔

پاکستان کرکٹ میں کپتان کو بڑی اہمیت حاصل رہی ہے،البتہ اس سال یواے ای میں آسڑیلیا کے خلاف 5ون ڈے میچوں کی سیریز میں کپتان سرفراز احمد کو جس انداز میں ان کی مرضی کے خلاف سیریز سے باہر کیا گیا،بہت سے سوالات نے جنم لیا۔

چیئر مین پی سی بی احسان مانی نے سرفراز احمد پر اعتماد برقرار رکھااور انہیں میگا ایونٹ میں کپتان بنا کر انگلینڈ بھیجاتاہم اب قومی ٹیم کی ورلڈ کپ میں کارکردگی میں اتار چڑھاؤ میں کپتان کی اپنی کارکردگی کا بڑا عمل دخل دکھائی دے رہا ہے۔

ٹرینٹ برج ناٹنگھم میں انگلینڈ کے مقابلے پر میچ سے قبل راولپنڈی ایکسپریس شعیب اختر نے سرفراز احمد پر ذاتی نوعیت کے حملے کئے،تاہم کپتان خاموش رہے.

اب ورلڈ کپ میں دفاعی چیمپئن آسڑیلیا کے خلاف ٹاؤنٹن میں 41رنز کی شکست کے بعد سرفراز احمد سے بہت سے سوالات جواب طلب کر رہے ہیں بالخصوص شاداب خان کو ڈراپ کرنا اور 18ویں اوور کی دوسری گیند پر آسٹریلوی کپتان ارون فنچ کا محمد حفیظ کی گیند پر اس وقت کیچ ڈراپ کرنا جب وہ 44رنز پر کھیل رہے تھے،اور سرفراز کے کیچ چھوڑنے کے بعد فنچ نے حفیظ کی اگلی تین گیندوں پر دو چوکے اور ایک چھکا جڑ دیا۔

سلپ میں آصف علی کے دو کیچ گرانے پر سرفراز سے یہ سوال بھی بنتا ہے کہ بابر اعظم کے ہوتے ہوئے ،آصف علی کو کھڑا کرنے کا کیا جواز تھا۔

پھر پریس کانفرنس میں بابر اعظم ،امام الحق اور محمد حفیظ کے سیٹ ہونے پر آؤٹ ہو جانے پر بات کرنے والے کپتان سرفراز احمد خود کو بھی کٹہرے میں کھڑا ہونے سے کیسے بچا سکتے ہیں ۔

پاکستانی اننگز کے 27ویں اوور میں جہاں 46رنز پر کھیلنے والے محمد حفیظ نے اپنی وکٹ گنوائی،وہیں 6رنز پر سرفراز احمد اس وقت خوش قسمت رہے ،جب فنچ کے پہلے اوور کی دوسری گیند پر وکٹوں کے پیچھے الیکس کیرے نے انہیں اسٹمپڈ کرنے کا موقع گنوا دیا۔

البتہ اس موقع سے سرفراز فائدہ نہ اٹھا سکے،اور ٹیم کو جتوا نہ سکے، ساتویں وکٹ پر سرفراز نے حسن علی کیساتھ 40رنز کی شراکت بنائی،جس میں 32رنز حسن علی کے تھے،آٹھویں وکٹ پر وہاب ریاض نے 64رنز کی شراکت میں 45رنز بنائے۔

ان تمام باتوں کے بعد یہ بات لکھنے اور کرنے میں کوئی دو رائے نہیں کہ آسڑیلیا کے خلاف شکست میں کپتان سرفراز احمد کے غلط فیصلے اور غیر ذمے داری کا اہم کردار نظر انداز نہیں کیا جا سکتا۔

کھیلوں کی خبریں سے مزید