آپ آف لائن ہیں
بدھ14؍شعبان المعظم 1441ھ 8؍اپریل 2020ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز

کالے جادو، سانپ سے کام نہ بنا توچھری کے68 وار سے بہن قتل

کراچی (نیوز ڈیسک) برطانیہ میں ایک خاتون نے اپنی بہن کے شوہر کو حاصل کرنے کی خاطر چاقو کے 68 وار کرکے اسے ہلاک کردیا تھا۔ خاتون نے پہلے اپنی بہن کا ہاتھ کاٹا اور پھر اس پر چاقو کے متعدد وار کرکے اسے ہلاک کردیا تھا، اس س قبل خاتون نے اس کام کیلئے ایک جادوگر کو 5 ہزار پاونڈ رقم بھی ادا کی تھی۔ یہ واقعہ برطانیہ کے علاقے لوٹون میں پیش آیا تھا۔

اس حوالے سے دی لیڈ کلرز آن کوئسٹ ریڈ کی نئی ڈاکیومینٹری میں صباء خان کی اس کہانی کا ذکر ہے۔

29سالہ صباء خان اپنی بڑی بہن صائمہ کے شوہر کو چاہتی تھی اور اس کیساتھ چار سال سے معاشقہ تھا۔

انہوں نے اپنی بہن کو قتل کروانے کیلئے کئی مکروہ طریقے اختیار کئے جس میں زہر خریدنا، زہریلے سانپوں کو استعمال کرنا اور کالا جادو وغیرہ شامل ہیں کیوں کہ وہ اپنے بہنوئی کو حاصل کرنا چاہتی تھی۔

اس جنون میں مبتلا صباء نے بلآخر ٹیسکو سے چاقو خریدا اور 2016ء میں اپنی بہن پر اس وقت قاتلانہ حملہ کردیا جب وہ اپنے چار بچوں کیساتھ گھر میں سو رہی تھیں۔

صباء نے صائمہ پر چاقو کے 68 وار کئے اور اس کا گلہ کاٹ دیا اسی دوران ان کی سال سالہ بھتیجی جو کہ سیڑھیوں پر موجود تھی نے چیخنا شروع کردیا کہ کیا آپ چوہے کو مار رہی ہیں؟۔

لوٹون میں واقع اپنے گھر میں خون میں لت پت اپنی بہن کی لاش چھوڑ کر فرار ہوگئیں جس کے بعد اس نے اس واقعے کے حوالے سے جھوٹے بیانات دینا شروع کردیے اور اسے ایک ڈکیتی کا واقعہ قرار دینے کا ڈرامہ رچایا تاہم پولیس نے شک کی بناء پر اسے گرفتار کرلیا تھا۔

سابق تحقیقاتی افسر پیٹر بلیکسلے کا کہنا ہے کہ صباء خان اپنی بہن کے شوہر کو ہر حال میں حاصل کرنا چاہتی تھی۔

وہ چاہتی تھی کہ حفیظ صرف اس کا ہوکر رہے۔ ٹیکسی ڈرائیور حفیظ کی ملاقات صباء سے اس وقت ہوئی جب حفیظ کی عمر 21 برس تھی، بعد ازاں دونوں کے درمیان خفیہ تعلقات استوار ہوئے، صائمہ جس وقت کام پر ہوتی تھی دونوں اس کا فائدہ اٹھاتے تھے۔

اس دوران حفیظ نے بھی اپنی سالی سے خوب فائدہ اٹھایا اور ایک مرتبہ یہ جاننے کی بھی کوشش کی کہ آیا وہ اپنی سالی سے شادی کرسکتا ہے اور اسلام میں اس کی اجازت ہے بھی یا نہیں۔

اہم خبریں سے مزید