• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
ویب ڈیسک
ویب ڈیسک | 29 اپریل ، 2021

این اے 249: پی پی کے امیدوار قادر مندوخیل کامیاب

قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 249 میں پولنگ کا وقت ختم ہونے کے بعد ووٹوں کی گنتی کا عمل مکمل ہو چکا ہے۔غیر حتمی اور غیر سرکاری نتائج کے مطابق پیپلز پارٹی کے قادر مندوخیل جیت چکے ہیں جبکہ مسلم لیگ ن کے مفتاح اسماعیل دوسرے نمبر پر رہے۔

اس بارمسلم لیگ کو پیپلز پارٹی کےہاتھوں شکست کا سامنا کرنا پڑا ، (ن) لیگ کی 2018 اور 2021 کی ہارمیں 40 ووٹوں کا فرق رہا۔

حلقے کے 276 پولنگ اسٹیشنز کے تمام نتائج آگئے ہیں، غیر حتمی اور غیر سرکاری نتائج کے مطابق پیپلز پارٹی کے قادر مندوخیل 16156 ووٹ لے کر پہلے جبکہ ن لیگ کے مفتاح اسماعیل 15473 ووٹ لے کر دوسرے نمبر پر ہیں۔

کالعدم ٹی ایل پی کے نذیر احمد 11125ووٹ لےکر تیسرے، پی ایس پی کے مصطفیٰ کمال 9227 ووٹ لےکر چوتھے، تحریک انصاف کے امجد آفریدی 8922 ووٹ لے کر پانچویں اورایم کیوایم پاکستان کےمحمدمرسلین 7511 ووٹ لے کر چھٹے نمبر پر ہیں۔

یاد رہے کہ 2018 میں شہباز شریف معمولی فرق سے فیصل واوڈا سے ہار گئے تھے، اس انتخاب میں ن لیگ 723 ووٹوں سے ہاری تھی۔ جبکہ اس بار (ن) لیگ کے امیدوار مفتاح اسماعیل 683 ووٹوں سے ہار گئے۔

کراچی کے قومی اسمبلی کے حلقے این اے 249 میں گزشتہ روز ہونے والے ضمنی انتخاب کے سلسلے میں پولنگ شام پانچ بجے تک بلا تعطل جاری رہی۔

پولنگ کا وقت ختم ہونے کے بعد بھی پولنگ اسٹیشن میں موجود ووٹرز کو ووٹ ڈالنے کی اجازت دی گئی، جبکہ اس کے ساتھ ہی ووٹوں کی گنتی کا عمل بھی شروع ہوگیا۔

حلقے کے تمام پولنگ اسٹیشنز کے باہر سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے، مختلف پولنگ اسٹیشنز پر تیاریاں نامکمل تھیں اور پولنگ وقت پر شروع نہیں ہوسکی تھی۔ 

پولنگ اسٹیشنز نمبر 249، 247، 246، 241 میں بیلٹ باکس سیل نہیں کیے جا سکے تھے، جبکہ ان پولنگ اسٹیشنز پر پولنگ کا عمل شروع نہ ہونے کی وجہ سیاسی جماعتوں کے پولنگ ایجنٹس کا وقت پر نہ پہنچنا بھی تھا۔

حلقہ این اے 249 کی صورتحال

این اے 249 میں رجسٹرڈ ووٹرز کی تعداد 3 لاکھ 39 ہزار سے زائد ہے، جن میں مرد ووٹرز کی تعداد 2 لاکھ 1 ہزار 656 ہے جبکہ خواتین ووٹرز کی تعداد 1 لاکھ 37 ہزار 935 ہے۔

حلقے میں 276 پولنگ اسٹیشنز بنائے گئے تھے جن میں سے 184 پولنگ اسٹیشنز انتہائی حساس جبکہ 92 پولنگ اسٹیشنز کو حساس قرار دیا گیا تھا۔

انتہائی حساس پولنگ اسٹیشنز پر سی سی ٹی وی کیمرے بھی نصب کیے گئے تھے۔

مذکورہ نشست پی ٹی آئی کے فیصل واوڈ کی جانب سے استعفے کے بعد خالی ہوئی تھی جو سینیٹ انتخابات میں کامیابی کے بعد اس نشست سے مستعفی ہوگئے تھے۔

تاہم ضمنی انتخاب میں پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مفتاح اسمٰعیل، تحریکِ انصاف کے امجد آفریدی، پاک سر زمین پارٹی کے مصطفیٰ کمال، ایم کیو ایم پاکستان کے حافظ مرسلین، پیپلز پارٹی کے قادر خان مندوخیل جیسی نامور شخصیات مقابلے میں شامل ہیں، جبکہ حلقے میں 18 آزاد امیدواروں سمیت مجموعی طور پر 30 امیدوار ضمنی الیکشن لڑ رہے ہیں۔

سندھ حکومت نے آج این اے 249 میں تعطیل کا اعلان کیا تھا۔

ن لیگی کارکنان کا جشن، مریم نواز نے ویڈیو شیئر کردی

پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے کراچی کے علاقے بلدیہ ٹاؤن میں ضمنی الیکشن پر پارٹی آفس کے باہر کی ویڈیو شیئر کردی۔ 

خیال رہے کہ مریم نواز نے جس وقت ویڈیو شیئر کی تھی اس وقت غیر حتمی و غیر سرکاری نتائج کے مطابق ن لیگی امیدوار مفتاح اسماعیل سب سے آگے تھے۔

انتخابی ضوابط کی خلاف ورزی، الیکشن کمیشن کا ضلعی انتظامیہ کو خط

ضمنی انتخاب میں سرکاری وسائل کے استعمال کا معاملہ سامنے آنے پر الیکشن کمیشن نے انتخابی ضوابط کی خلاف ورزی پر ضلعی انتظامیہ کو خط لکھا۔

خط میں کہا گیا کہ دورانِ پولنگ دو سرکاری گاڑیاں حلقے میں پارٹی پرچم لگا کر گھومتی رہیں، دونوں گاڑیاں حکومت سندھ کی ملکیت ہیں۔

محمد زبیر نے ووٹوں کی گنتی دیر سے ہونے پر سوال اٹھادیا

مسلم لیگ (ن) کے رہنما اور سابق گورنر سندھ محمد زبیر نے این اے 249 کے ضمنی انتخاب میں ووٹوں کی گنتی سست روی سے ہونے پر سوال اٹھا دیا۔

میڈیا سے گفتگو میں محمد زبیر کا کہنا تھا کہ ٹرن آؤٹ کم ہے تو گنتی جلدی مکمل ہوجانی چاہیے، جب تک تمام فارم 45 نہیں مل جاتے ہم یہاں سے نہیں جائینگے۔

تحریک انصاف کے الیکشن آفس سے سامان سمیٹ دیا گیا

کراچی میں ہونے والے قومی اسمبلی کے حلقے این اے 249 کے ضمنی انتخاب میں پولنگ کا عمل مکمل ہونے کے بعد ووٹوں کی گنتی کے دوران ہی تحریک انصاف کے الیکشن آفس سے سامان سمیٹ دیا گیا۔

صورت حال معلوم ہونے کے بعد الیکشن کا رزلٹ آنے سے پہلے ہی تحریک انصاف کے امیدوار اور رہنما بھی الیکشن آفس سے چلے گئے۔

پولنگ اسٹیشنز میں مسلح افراد کی خبر کی تردید

صوبائی الیکشن کمیشن کی جانب سے کراچی کے قومی اسمبلی کے حلقے این اے 249 میں آج ہونے والے ضمنی انتخاب میں پولنگ اسٹیشنز میں مسلح افراد کی موجودگی کی خبر کی تردیدکی گئی۔

صوبائی الیکشن کمشنر اعجاز انور چوہان کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ مسلح افراد کی پولنگ اسٹیشنز میں موجودگی کی خبر درست نہیں۔

انہوں نے یہ بھی کہا تھا کہ اس حوالے سے قانون نافذ کرنے والے اداروں سے بھی معلومات حاصل کر لی گئی ہیں۔

پانچ PTI ارکانِ اسمبلی کو حلقہ بدر کیا گیا

الیکشن کمیشن آف پاکستان کا کہنا تھا کہ آج کراچی میں ضمنی انتخاب کے دوران پی ٹی آئی کے 5 ارکانِ اسمبلی کی این اے 249 سے حلقہ بدری کے احکامات جاری کیے۔

الیکشن کمیشن کے مطابق پی ٹی آئی کے اراکینِ اسمبلی فردوس شمیم نقوی، راجہ اظہر، سعید آفریدی، بلال غفار اور شاہ نواز جدون حلقے میں موجود تھے۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے ان اراکینِ اسمبلی کی موجودگی اور الیکشن قوانین کی خلاف ورزی پر سخت نوٹس لیا گیا۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے پولیس حکام کو ان ارکانِ اسمبلی کو حلقہ بدر کرنے کے لیے خط لکھا گیا۔

نون لیگ کی پولنگ کا وقت بڑھانے کی درخواست

کراچی کے حلقہ این اے 249 میں ہونے والے ضمنی انتخاب کے سلسلے میں مسلم لیگ (ن) نے الیکشن کمیشن کو پولنگ کے لیے وقت بڑھانے کی درخواست دی تھی۔

مسلم لیگ (ن) کے امیدوار مفتاح اسماعیل نے پولنگ کا وقت بڑھانے کی درخواست کرتے ہوئے صوبائی الیکشن کمشنر کو خط لکھا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ رمضان کے گرم ترین دن کی وجہ سے پولنگ عمل کی رفتار بہت سست ہے۔

انہوں نے خط میں کہا تھا کہ ووٹرز کی بڑی تعداد بھی ووٹ ڈالنے ابھی تک پولنگ اسٹیشن نہیں پہنچی، گرمی اور روزے کی وجہ سے ووٹرز دوپہر کے بعد ووٹ ڈالنے نکلیں گے۔

مفتاح اسماعیل نے الیکشن کمیشن سے استدعا کی تھی کہ عوام کے وسیع تر مفاد میں پولنگ کا وقت 2 گھنٹے بڑھا دیا جائے۔

مسلم لیگ (ن) کی جانب سے حلقے میں ووٹنگ کے لیے اضافی وقت دینے کی درخواست الیکشن کمیشن کو بھجوادی گئی۔

پولیس نے پولنگ اسٹیشن میں میڈیا کو کوریج سے روک دیا

گورنمنٹ ڈگری گرلز کالج میں قائم پولنگ اسٹیشن میں پولیس کی جانب سے میڈیا کوریج پر پابندی عائد کردی گئی تھی۔

ایس پی بلدیہ کیپٹن ریٹائرڈ فیضان علی نے میڈیا کے نمائندوں کو باہر نکال دیا تھا۔

این اے 249 میں میڈیا کوریج سے روکنے کی پولیس کی تردید

تاہم اس کے بعد پولیس کی جانب سے اس طرح کے کسی بھی واقعے کے رونما ہونے کی تردید کی گئی تھی۔ 

ایس پی بلدیہ کیپٹن (ر) فیضان نے اس حوالے سے کہا تھا کہ میڈیا نمائندگان کو کسی قسم کی کوریج سے نہیں روکا گیا، جس پولنگ اسٹیشن کا ذکر کیا جارہا ہے وہاں میں خود موجود تھا۔

انہوں نے کہا تھا کہ بلدیہ مدینہ کالونی گورنمنٹ گرلز ہائی اسکول کے اندر صحافی جمع تھے، میڈیا نے اپنا کام ختم کیا تو انہیں پولنگ اسٹیشن کے اندر رش کم کرنے کو کہا تھا۔

ایس پی بلدیہ کیپٹن (ر) فیضان نے مزید کہا کہ میرے اسکواڈ میں موجود اہلکاروں نے انہیں باہر جانے کو نہیں کہا تھا۔

انہوں نے یہ بھی کہا تھا کہ میڈیا کے عملے اور صحافیوں کے پاس الیکشن کمیشن کا پاس ہونا لازمی ہے، نیز کسی قسم کی شکایت پر پولیس سے رابطہ کیا جا سکتا ہے۔

ووٹرز کو بلے پر مہر لگانے پر مجبور کیا جارہا ہے، تاج حیدر

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے رہنما و سینیٹر تاج حیدر نے چیف الیکشن کمشنر پاکستان کو خط لکھا تھا جس میں کہا ہے کہ این اے 249 کے ضمنی انتخاب میں ووٹرز کو بلے پر مہر لگانے پر مجبور کیا جا رہا ہے۔

تاج حیدر کا الیکشن کمیشن کو لکھے گئے خط میں کہنا تھا کہ این اے 249 کے پولنگ اسٹیشن نمبر 225 سے متعلق شکایات مل رہی ہیں۔

انہوں نے کہا تھا کہ پولنگ اسٹیشن میں خواتین ووٹرز کو بلے پر مہر لگانے پر مجبور کیا جا رہا ہے۔

پیپلز پارٹی کے سینیٹر نے خط میں اپیل کی تھی کہ چیف الیکشن کمشنر اس ضمن میں قانون کے مطابق ضروری کارروائی کریں۔

تاج حیدر نے یہ بھی کہا تھا کہ پولنگ اسٹیشن اے ون اسکول میں پولیس نے 50 ووٹرز کو داخلے سے روک دیا ہے، مشترکہ پولنگ اسٹیشن ہوتے ہوئے مرد ووٹرز کو کیسے روکا جا سکتا ہے؟

رکنِ اسمبلی راجہ اظہر کو حلقہ بدر کرنے کا حکم

الیکشن کمیشن نے پی ٹی آئی کے رکنِ اسمبلی راجہ اظہر کی حلقے میں موجودگی پر نوٹس لیا تھا۔ 

ڈی آر او نے پولیس کو رکنِ اسمبلی راجہ اظہر کو حلقہ بدر کرنے کا حکم بھی دیا تھا۔

میڈیا کو روک کر پولیس دھاندلی کروانا چاہتی ہے:PTI امیدوار

ادھر پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے امیدوار امجد اقبال آفریدی کا کہنا تھا کہ میڈیا نمائندگان کو ضمنی انتخاب کی کوریج سے روک کر پولیس دھاندلی کروانا چاہتی ہے۔

پولنگ اسٹیشنز کے اندر کوریج پر پابندی پر پی ٹی آئی کے امیدوار امجد اقبال آفریدی نے اپنے ردِ عمل کا اظہار کیا تھا اور کہا تھا کہ میڈیا کو ضمنی انتخاب کی کوریج سے روکنا قابلِ مذمت عمل ہے۔

انہوں نے کہا تھا کہ پولیس اپنے فرائض انجام دینے کے بجائے الیکشن کمیشن کا کردار ادا کر رہی ہے، میڈیا نمائندگان کو روک کر پولیس دھاندلی کروانا چاہتی ہے۔

امجد اقبال آفریدی کا یہ بھی کہنا تھا کہ پولیس بے فکر رہے، پیپلز پارٹی کی ضمانت ضبط ہو گی، الیکشن کمیشن معاملے پر نوٹس لے۔

1 ایم پی اے کو حلقے سے جانے کا کہہ دیا: الیکشن کمشنر

پولنگ کے عمل کے دوران صوبائی الیکشن کمشنر انور اعجاز چوہان نے حلقے کے مختلف پولنگ اسٹیشنز کا دورہ کیا تھا۔

میڈیا سے گفتگو میں صوبائی الیکشن کمشنر انور اعجاز چوہان نے بتایا تھا کہ منتخب نمائندے اس حلقے میں نہیں آسکتے، یہاں ایک ایم پی اے موجود تھے انہیں یہاں سے جانے کا کہا۔

انہوں نے یہ بھی کہا تھا کہ ووٹنگ کا تناسب کم ہے، ووٹرز آہستہ آہستہ آ رہے ہیں، کورونا وائرس کی ایس او پیز کا خیال رکھا جا رہا ہے۔

پولنگ میں تاخیر کی کوئی شکایت سامنے نہیں آئی: ڈی آر او

ڈی آر او سید ندیم حیدر نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا تھا کہ این اے 249 کے ضمنی الیکشن میں پولنگ پر امن طریقے سے جاری ہے۔

بدنظمی کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ بعض جگہ پولنگ ایجنٹ نہیں تھے، تاہم پولنگ میں تاخیر کی کوئی شکایت سامنے نہیں آئی ہے۔

فردوس شمیم، بلال غفار کو NA 249 سے فوری نکلنے کا حکم

الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے پاکستان تحریکِ انصاف (پی ٹی آئی) کے اراکین سندھ اسمبلی فردوس شمیم نقوی اور بلال غفار کوقومی اسمبلی کے حلقے این اے 249 سے فوری نکلنے کا حکم دیا گیا۔

الیکشن کمیشن کے ڈی آر اوسید ندیم حیدر نے فردوس شمیم نقوی اور بلال غفار کو قومی اسمبلی کے حلقے این اے 249 سے فوری نکلنے کا حکم دیا ہے، اس حلقے میں آج ضمنی انتخاب جاری ہے۔

ڈی آر اوسید ندیم حیدر نے اس ضمن میں پولیس کو خط لکھا جس میں کہا کہ پولنگ کے دوران کوئی رکنِ اسمبلی یہاں نہیں آسکتے۔

ڈی آر اوسید ندیم حیدر نے کہا کہ فردوس شمیم نقوی کو فون پر فوری حلقے سے نکلنے کا حکم دیا ہے، پولنگ کے دوران منتخب پارلیمنٹرینز کا حلقے میں آنا غیر قانونی ہے۔

ریجنل الیکشن کمشنر نے ایس ایس پی کیماڑی اور ایس ایس پی ویسٹ کو بھی اس سلسلے میں خط لکھا جس میں کہا گیا کہ یقینی بنایا جائے کہ ارکانِ اسمبلی، سینیٹر یا وزیر این اے 249 کا دورہ نہ کریں۔

الیکشن کمیشن کی جانب سے کہا گیا کہ تمام سیاسی جماعتیں ارکانِ اسمبلی کو این اے 249 کا دورہ کرنے سے روکیں، ارکانِ اسمبلی کو امیدواروں کی انتخابی مہم میں حصہ لینے سے بھی روکا جائے۔

ڈی آر اوسید ندیم حیدر نے یہ بھی کہا تھا کہ خلاف ورزی کرنے والے ارکانِ اسمبلی کے خلاف بلاامتیاز کارروائی کی جائے گی۔