• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

مکّہ فتح ہو چُکا ہے اور حرمِ کعبہ بُتوں سے پاک کر دیا گیا ہے۔ اللہ کے نبیﷺ نے ملتزم کی چوکھٹ پکڑ کر اعلان فرمایا ،’’ آج تم سے کوئی بازپُرس نہیں ہوگی، جائو تم سب آزاد ہو۔‘‘ ابوسفیان بن حرب، حکیم بن حزام اور جبیر بن مطعم سمیت قریش کے تمام سرداروں کو امان مل چُکی ہے۔ نبی کریمﷺ بیتُ اللہ کی دیوار سے ٹیک لگائے تشریف فرما ہیں۔آس پاس صحابۂ کرامؓ بھی موجود ہیں۔ بابِ بنو شیبہ سے ایک خاتون اپنے کم سن بچّوں کے ساتھ حرم میں داخل ہوتی ہیں اور بارگاہِ رسالتﷺ میں حاضری کی استدعا کرتی ہیں۔ آج عام معافی کا دن ہے اور یہ خاتون آج صبح اسلام قبول کر چُکی ہیں۔حضور رسالت مآبﷺ نہایت عزّت و احترام کے ساتھ قریش کی اس معزّز خاتون کا استقبال کرتے ہوئے فرماتے ہیں ،’’کہو ،اُمّ ِ حکیمؓ! کیسے آنا ہوا؟

کیا کہنا چاہتی ہو؟‘‘ لبِ اقدسؐ سے خلوص کے پھول فضا میں بِکھر جاتے ہیں۔ چھوٹے بچّوں کی جانب شفقت سے دیکھتے ہوئے فرماتے ہیں،’’ اِن بچّوں کا باپ کہاں ہے؟‘‘ اُمّ ِ حکیمؓ نہایت شرمندگی کے ساتھ زمین کی طرف نظریں جُھکائے، لرزتی آواز میں عرض کرتی ہیں،’’ یارسول اللہﷺ! وہ تو یمن کی جانب بھاگ گیا ہے۔‘‘دراصل، اُن کا شوہر اُن نو مجرمین میں شامل تھا، جنہوں نے اللہ اور اُس کے نبیﷺ کی دشمنی میں جبر و استبداد، ظلم و وحشت کی تمام حدود پار کر لی تھیں اور انہی گھنائونے جرائم کی طویل فہرست کی بنا پر اُن کے قتل کی اجازت دی گئی تھی۔

عکرمہ کو بھی امان مل گئی

حضرت اُمّ ِ حکیمؓ نے ڈرتے ڈرتے پھر عرض کیا،’’ یارسول اللہﷺ، میرے ماں باپ آپؐ پر قربان! کیا میرے شوہر کو بھی امان مل سکتی ہے؟‘‘اُمّ ِ حکیمؓ کی اس درخواست پر صحابۂ کرامؓ سنجیدہ چہروں کے ساتھ حضورﷺ کے جواب کے منتظر تھے۔ نبیٔ رحمتﷺ نے نو مسلم خاتون کی التجا سُنی، معصوم بچّوں کی جانب شفقت و محبّت بَھری نگاہوں سے دیکھا۔ پھر اللہ کے محبوبﷺ کا رُخِ انور دِل آویز تبسّم سے منوّر ہوا اور رحمتُ اللعالمینﷺ کے فیوض و برکات کا دریا جوش میں آگیا۔ 

آپﷺ نے اپنا سَرِمبارک اوپر اُٹھایا، تو سامنے حضرت اُمّ ِ حکیمؓ کی التجا بَھری نظروں میں امید و یاس کے سائے تھے۔ معصوم بچّے اپنے مستقبل سے بے خبر حضورﷺ کے پُرنور چہرے کی طرف دیکھ رہے تھے اور ایک بار پھر فضا پاکیزہ الفاظ کی خوش بُو سے معطّر ہو گئی۔ ارشاد ہوا،’’اے اُمّ ِ حکیمؓ! ہم نے تمہارے شوہر، عکرمہ بن ابی جہل کو بھی امان دی۔‘‘ اللہ اکبر…اللہ اور اُس کے رسولﷺ کے بدترین دشمن ابوجہل کا وہ بیٹا، جو باپ سے بھی بڑھ کر مسلمانوں کے خون کا پیاسا تھا۔ آج رحمتِ نبویﷺ کی بدولت امان پا گیا۔

سلسلۂ نسب

حضرت اُمّ ِ حکیمؓ کا قریش کے نام وَر خاندان، بنو مخزوم سے تعلق تھا۔ یہ ابوجہل کے حقیقی بھائی، حارث بن ہشام کی بیٹی اور عکرمہ بن ابوجہل کی بیوی تھیں۔یوں ابوجہل سے بھتیجی اور بہو کا رشتہ تھا۔ اُن کی والدہ، فاطمہ حضرت خالدؓ بن ولید کی حقیقی بہن تھیں۔اِس طرح اُن کی بھانجی ہوئیں۔ سلسلۂ نسب اِس طرح ہے: حضرت اُمّ ِ حکیمؓ بنتِ حارث بن ہشام بن مغیرہ بن عبداللہ بن عُمر بن مخزوم۔ والدہ کا نام فاطمہؓ بنتِ ولید بن مغیرہ بن عبداللہ بن عُمر بنا مخزوم ہے۔ حضرت عبداللہ بن زبیرؓ سے مروی ہے کہ’’ فتحِ مکّہ کے دن حضرت اُمّ ِ حکیمؓ اور اُن کی والدہ، فاطمہؓ دونوں اسلام لائیں اور خدمتِ اقدسﷺ میں حاضر ہو کر شرفِ بیعت حاصل کیا۔‘‘ (طبقات ابنِ سعد، جلد8 ، صفحہ 400) 

ملک الموت چند لمحات کی دُوری پر

مکّہ فتح ہو چُکا تھا۔ قریش کے تمام سرداروں نے آنحضرتﷺ کے ہاتھوں پر بیعت کرلی تھی۔ ضدّی، متکبّر اور انتقام کے مارے عکرمہ نے جب یہ صُورتِ حال دیکھی، تو جدّہ کے ساحل سے ایک کشتی میں سوار ہو کر یمن کی جانب بھاگ نکلا۔ اُس کی کشتی سمندر کا پُرسکون سینہ چیرتی ہوئی اپنے سفر پر رواں دواں تھی کہ اچانک سمندری طوفان کی زد میں آکر ہچکولے کھانے لگی۔جب بے پناہ کوششوں کے بعد بھی صُورتِ حال بہتر نہ ہوئی، تو ملاحوں کو یقین ہوگیا کہ اب کشتی کو ڈوبنے سے بچانا ممکن نہیں۔ اُنھوں نے مسافروں سے کہا کہ’’ اب صرف اللہ ہی اِسے ڈوبنے سے بچا سکتا ہے، لہٰذا سب اللہ کی تسبیح پڑھو اور اُس سے مدد طلب کرو۔‘‘ عکرمہ سمیت تمام مسافر اِس ناگہانی سمندری آفت سے بہت زیادہ خوف زدہ تھے۔ سمندر کی بے رحم بپھری موجوں میں پھنس کر کشتی کٹی پتنگ کی طرح ہچکولے کھا رہی تھی۔گویا ملک الموت چند لمحات کی دُوری پر تھا۔ 

کفّارِ مکّہ کا بہادر ترین کمانڈر، غزوۂ اُحد میں خالد بن ولید کے ساتھ مل کر ہاری بازی پلٹ دینے والا خون خوار جنگ جُو اور دہشت کی علامت، عکرمہ سمندر کی بے تاب لہروں سے دہشت زدہ ہو کر کشتی کے ایک کونے میں دبکا ایک اللہ کو پُکار رہا تھا’’اللہ کی قسم! اگر سمندر میں ایک اللہ کے سِوا کوئی نجات نہیں دے سکتا، تو خشکی میں بھی اُس کے سِوا کوئی نجات دہندہ نہیں۔ اے اللہ! اگر مَیں یہاں سے صحیح سلامت نکل گیا، تو تیرے رسولﷺ کے ہاتھوں پر بیعت کرکے مسلمان ہو جائوں گا۔‘‘ (تفسیر ابنِ کثیر 464/3) اللہ کو اس شخص سے اپنے دین کا کام لینا تھا، چناں چہ حکمِ الہٰی ہوا اور ایک بڑی لہر نے کشتی کو طوفانی بھنور سے باہر پھینک دیا، جہاں پُرسکون سمندر اُس کا منتظر تھا۔

شوہر کو جہنّم کی آگ سے بچالیا

حضرت اُمّ ِ حکیمؓ کو بارگاہِ رسالتﷺ سے امان کا پروانہ مل چُکا تھا۔ چناں چہ وہ شوہر کو لانےکے لیے فوری طور پر یمن روانہ ہو گئیں۔ اللہ تعالیٰ نے عکرمہ کے دل میں عشقِ مصطفیٰﷺ کی شمع پہلے ہی روشن فرما دی تھی۔ جب اہلیہ نے امان کی خوش خبری سنائی، تو بے اختیار زبان سے نکلا،’’ کیا واقعی رسول اللہﷺ مجھے معاف کردیں گے؟‘‘ اور پھر دنیا نے دیکھا کہ کفّارِ مکّہ کا یہ جنگ جُو سردار جب خدمتِ اقدسﷺ میں حاضر ہوا، تو آنحضرتﷺ نے نہایت گرم جوشی سے اُس کا استقبال کرتے ہوئے فرمایا، ’’مرحبا یاالراکب المہاجر‘‘ یعنی’’پردیسی سوار خوش آمدید۔‘‘یوں عکرمہ نے مشرف بہ اسلام ہو کر نہ صرف اپنے تمام پچھلے گناہوں کا کفّارہ ادا کیا، بلکہ آگے چل کر غزوات میں نہایت شجاعت، بہادری اور پامردی سے کفّار کا مقابلہ کیا۔

حضرت عکرمہؓ کی شہادت

حضرت عکرمہؓ نے اپنی باقی زندگی جہاد کے لیے وقف کردی تھی۔ شام اور روم کے جنگی محاذوں پر دونوں میاں بیوی مصروفِ جہاد رہے۔ شام میں دریائے یرموک کے کنارے رومیوں کی بڑی فوج کے خلاف لڑا جانے والا خون ریز معرکہ اپنے عروج پر تھا۔ غازیانِ اسلام شیروں کی مانند رومیوں کی صفوں میں گھس کر اُنہیں تہس نہس کر رہے تھے۔ مجاہدین کا شوقِ شہادت آخری حد کو چُھو رہا تھا۔ اور پھر جلد ہی وہ لمحہ بھی آگیا کہ جب رومی فوج اپنے ایک لاکھ، تیس ہزار فوجیوں کی بکھری لاشیں چھوڑ کر بھاگ نکلی اور مسلمانوں کو عظیم فتح نصیب ہوئی۔ 

سرزمینِ یرموک کے اِس میدانِ جنگ میں تین مجاہد شدید زخمی حالت میں ایک دوسرے کے قریب پڑے تھے۔ اُن میں سے ایک حضرت عکرمہؓ بن ابوجہل، دوسرے حارثؓ بن ہشام اور تیسرے عیاشؓ بن ابی ربیعہ تھے۔ مسلمان زخمیوں کی طبّی امداد کا کام شروع ہو چُکا تھا۔ ایک شخص نے پانی کا پیالہ اُن کی طرف بڑھایا، تو عکرمہؓ نے حارثؓ کی طرف اشارہ کیا۔ پیالہ حارثؓ کے منہ کی طرف بڑھا، تو اُنہوں نے عیاشؓ کی طرف اشارہ کیا کہ پہلے اُنہیں پلادو۔ 

پیالہ عیاشؓ کی جانب بڑھایا گیا، تو اُنہوں نے اشارہ کیا’’ نہیں، پہلے عکرمہؓ کو پلائو۔‘‘ پانی پلانے والا عکرمہؓ کی جانب بڑھا، تو وہ جامِ شہادت نوش کر چُکے تھے۔وہ حارثؓ کی طرف پلٹا، تو اُن کی روح بھی پرواز کر چُکی تھی۔ جلدی سے پانی کا پیالا عیاشؓ کی جانب بڑھایا ،لیکن وہ بھی جنّت جا چُکے تھے۔ کچھ مؤرخین کا خیال ہے کہ حضرت عکرمہؓ نے جنگِ یرموک نہیں، اجنادین کے معرکے میں داد ِشجاعت دیتے ہوئے شہادت پائی، تاہم بیش تر نے اُن کی شہادت کا واقعہ جنگِ یرموک ہی کے ذیل میں تحریر کیا ہے۔

پیرہنِ عروسی میں جہاد

حضرت اُمّ ِ حکیمؓ کو اپنے شوہر، حضرت عکرمہؓ سے بے حد محبّت تھی۔ اسی محبّت کی بنا پر وہ اُنھیں معافی دلوانے کے لیے رسول اللہﷺ کی خدمت میں حاضر ہوئیں، پھر شوہر کی تلاش میں یمن تک جا پہنچیں اور اُنہیں ساتھ لاکر حضورﷺ کی خدمت میں پیش کر دیا۔ اِس طرح اُنہوں نے اپنے شوہر کو دوزخ کی آگ کا ایندھن بننے سے بچالیا۔ 

حضرت اُمّ ِ حکیمؓ اپنے شوہر کی شہادت کے بعد دیارِ غیر میں اکیلی رہ گئی تھیں۔ اُنہوں نے عدّت کے دن شام ہی میں گزارے۔ بعدازاں، کئی صحابۂ کرامؓ نے اُنھیں رشتے کے پیغامات بھجوائے، تاہم اُنہوں نے اپنے لیے بلند پایہ صحابی، حضرت خالدؓ بن سعید کا انتخاب فرمایا، جو ’’سابقون الاوّلون‘‘ میں سے تھے اور کئی غزوات میں دادِ شجاعت پا چُکے تھے۔ دمشق کے قریب ایک بستی، مرج الصفر میں 400 درہم مہر کے عوض نکاح ہوا۔ یہاں ہر وقت رومیوں کے حملے کا خطرہ تھا۔ رسمِ عروسی کی ادائی کی تیاری ہو رہی تھی۔ حضرت اُمّ ِ حکیمؓ نے اپنے شوہر سے کہا کہ’’ نہ جانے کس وقت رومی فوج حملہ کردے، چناں چہ ابھی تھوڑا توقّف کرلیں۔‘‘اس پر حضرت خالدؓ نے کہا کہ ’’مجھے اِس بات کا یقین ہے کہ آیندہ ہونے والے معرکے میں مجھے ضرور شہادت نصیب ہو گی۔‘‘ چناں چہ ایک پُل کے قریب خیمہ نصب کیا گیا، جو اب ’’قنطرہ اُمّ ِ حکیمؓ‘‘ کے نام سے مشہور ہے۔ 

دوسرے دن ابھی لوگ دعوتِ ولیمہ سے فارغ بھی نہ ہوئے تھے کہ رومی فوج نے اُس جگہ حملہ کر دیا اور اس لڑائی میں حضرت خالدؓ جامِ شہادت نوش کرگئے۔ حضرت اُمّ ِ حکیمؓ اگرچہ عروسی لباس میں تھیں، لیکن بپھری شیرنی کی طرح کھڑی ہوئیں۔ اُس وقت خیمے میں کوئی تلوار یا نیزہ نہیں تھا۔اُنھوں نے چاروں جانب دیکھا، جب کچھ نظر نہ آیا، تو خیمے کی نوکیلی چوب اُکھاڑا کر میدان میں نکل کھڑی ہوئیں۔ اور پھر دمشق کے نیلے آسمان سے آگ برساتے سورج نے یہ محیّرالعقول منظر دیکھا کہ ایک دن کی دلہن نے جذبۂ جہاد سے سرشار ہو کر شجاعت و بہادری کا ناقابلِ یقین کارنامہ سَرانجام دیتے ہوئے سات رومیوں کو واصلِ جہنّم کر دیا۔

وفات و تدفین

حضرت اُمّ ِ حکیمؓ کی بقیہ زندگی وفات، تدفین اور اولاد سے متعلق مستند معلومات دست یاب نہیں۔

حاصلِ مطالعہ

حضرت اُمّ ِ حکیمؓ کے اِس ایمان افروز تذکرے میں یہ درس پنہاں ہے کہ ایک مسلمان عورت اپنے شوہر کو جہنّم کی آگ، اپنے خاندان کو تباہی اور اپنا سہاگ بچانے کے لیے سخت سے سخت حالات کا بھی مقابلہ کرسکتی ہے۔ مسلمان عورت زندگی کے ہر شعبے میں مرد کے شانہ بشانہ مصروفِ عمل رہتی ہے، یہاں تک کہ بوقتِ ضرورت میدانِ جنگ میں بھی شجاعت و بہادری کے کارہائے نمایاں سَرانجام دیتی ہے۔ گہوارے سے لحد تک جو آزادی، تحفّظ، عزّت و احترام اور حقوق اسلام نے عورت کو دیے ہیں، کیا دنیا کے کسی اور مذہب میں ان کی جھلک بھی نظر آتی ہے؟

سنڈے میگزین سے مزید