Editorial Note - مقبوضہ کشمیر:محبوبہ مفتی کا اعترافِ ناکامی - column - 2017-06-19
| |
Home Page
اتوار 29 رمضان المبارک 1438ھ 25 جون 2017ء
ادارتی نوٹ
June 19, 2017 | 12:00 am
مقبوضہ کشمیر:محبوبہ مفتی کا اعترافِ ناکامی

Maqboza Kashmir Mahbooba Mufti Ka Aiteraf E Nakami

نہتے کشمیریوں پر ظلم و جبر کے نت نئے ہتھکنڈوں کے استعمال کے باوجود ناکامی اور دنیا میں بدنامی دیکھ کر بھارت کے مقتدر حلقوں کے لوگ بھی یہ کہنے پر محبور ہو گئے ہیں کہ یہ حربے کشمیریوں کو ان کی جدوجہد سے نہیں روک سکتے چنانچہ مقبوضہ کشمیر کی کٹھ پتلی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے بھی وادی میں طاقت کے استعمال کی ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے اسمبلی میں بیان دیا ہے کہ بندوق اور فوج سے خطے میں امن قائم نہیں ہو سکتا۔ ان کا کہنا تھا کہ شورش اور بد امنی سے نمٹنے کا واحد راستہ امن مذاکرات ہیں ،تشدد اور معصوم افراد کی ہلاکتوں سے صورت حال بے قابو ہو جائے گی۔ یہی بات کانگریس کی رہنما سونیا گاندھی بھی چند روز قبل کہہ چکی ہیں۔ میر واعظ عمر فاروق اور یاسین ملک نے بھی یہ بات دہرائی ہے کہ بھارتی فوج نے نہتے کشمیریوں کے خلاف باضابطہ جنگ چھیڑ رکھی ہے۔ بھارت کشمیر میں جوں جوں طاقت کا استعمال بڑھا رہا ہے، کشمیری قوم کی مزاحمت میں اسی قدر شدت آ رہی ہے اور اسے پوری دنیا دیکھ رہی ہے۔ جس کے باعث بھارت پر عالمی دباؤ بڑھنے کے ساتھ ساتھ اندرونی طور پر بھی آواز بلند ہونے لگی ہے کہ مسئلہ کشمیر کا حل طاقت سے ممکن نہیں۔ کشمیریوں کی اخلاقی،سفارتی اور سیاسی حمایت پاکستان کی ذمہ داری ہے اور حالات آج دنیا کو یہ بتانے کے لیے انتہائی سازگار ہیں کہ مسئلہ کشمیر سات دہائی پرانا ہے اور یہ ہرگز بھارت کا اندرونی مسئلہ نہیں بلکہ اقوام متحدہ اپنی قراردادوں کی رو سے کشمیریوں کو حق خودارادی دلانے کی پابند ہے ۔ بھارتی حکومت پوری عالمی برادری کو اس کی یقین دہانی کراچکی ہے۔ لہٰذا یہ اب عالمی برادری کی ذمہ داری ہے کہ جس طرح اس نے بوسنیا کے مسلمانوں پر ڈھائے جانے والے مظالم کا نوٹس لیا اور سربیا کے ظالم حکمرانوں کا ہاتھ روکا ،بھارت کو بھی مجبور کرے کہ نہتے کشمیریوں پر مظالم بند کرے اور انہیں حق خود ارادیت دے۔پاکستان کی جانب سے اس مقصد کے لیے بھرپور سفارتی مہم چلائے جانے کے لیے یہ وقت نہایت موزوں ہے لہٰذا اس میں تاخیر نہیں کی جانی چاہئے۔

 

.