غزل: شعور، پیاسا سمندر ہے، کیا کیا جائے

August 22, 2018
 

غالب عرفان

شعور، پیاسا سمندر ہے، کیا کیا جائے

یہ کائنات کا منظر ہے، کیا کیا جائے

نفس نفس میں مقّید ہوا کا رخ بن کر

حیات، میرا مقدر ہے، کیا کیا جائے

نگاہ دیکھ نہ پائی ہے، آج تک جس کو

وہ میری روح کے اندر ہے، کیا کیا جائے

بلا رہا ہے، جو آئینے میں نیا چہرہ

مری پہنچ سے بھی باہر ہے، کیا کیا جائے

دراڑ پڑ گئی مٹی میں ہونٹ خشک ہوئے

زمین ویسی ہی بنجر ہے، کیا کِیا جائے

ادا نہ ہو سکا، عرفانِ فکر کا جو قرض

مرے شعور کا محور ہے، کیا کِیا جائے


مکمل خبر پڑھیں