• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

قتل کی دھمکیوں پر لیبر پارٹی کی ڈپٹی قائد کا اظہار تشویش

لندن(پی اے ) قتل کی دھمکیوں پر لیبر پارٹی کی ڈپٹی قائد انجیلا رینر کا اظہار تشویش،انجیلا رے نر نے بتایا کہ انھیں رکن پارلیمنٹ جو کاکس کی طرح قتل کرنے کی دھمکیاں دی جارہی ہیں، انھوں نے پہلی دفعہ انھوں نے بتایا کہ گزشتہ سال عہدہ سنبھالنے کے بعد ہی سے ہراساں کئے جانے کا سلسلہ شروع ہوگیاتھا۔اکتوبر میں رے نر کو دھمکی آمیز ای میل بھیجنے پر ایک شخص بنجامن لف کو15 ہفتہ قید کی سزا دی گئی تھی۔رینر نے بی بی سی کو بتایا کہ سب سے پہلے انھیں موٹا قرار دے کر تضحیک کا نشانہ بنایاگیا پھر انھیں شمالی لہجے پر نشانہ بنایاگیا ،مستقل ہراساں کئے جانے کی وجہ سے اب وہ مستقل پولیس کی حفاظت میں چلتی ہیں اور انھوں نے اپنے گھر میں پینک بٹن بھی لگوالئے ہیں۔انھوں نے بتایا کہ ان کے سب سے چھوٹے بچوں کو بھی بحفاظت نکلنےاور بٹن استعمال کرنے کا طریقہ بتانا پڑتاہے۔انھیں پولیس کے محاصرے میں چلنا پڑتاہے یہ ایسی صورت حال نہیں ہے جو مستقل قائم رہ سکے۔انھوں نے بتایا کہ بہت سے ارکان پارلیمنٹ نے سر ڈیوڈامیس کی موت کے بعد جنھیں 2016میں ان کے حلقہ انتخاب اسیکس میں خنجر کے وار کرکے ہلاک کردیاتھا، ذاتی حفاظتی انتظامات کئے ہیں، جبکہ لیبر پارٹی کے رکن پارلیمنٹ جو کاکس کو ان کے حلقہ انتخاب ویسٹ یارک شائر میں خنجر کے وار کرکے ہلاک کیاگیاتھا،انھوں نے کہا کہ اس سے قبل انھوں نے دھمکیوں کے زیادہ سنگین ہوجانے کے خوف سے زبان نہیں کھولی تھی۔ انھوں نے کہا کہ مجھے ای میلز ملے جن میں کہاگیاتھا کہ ہماری حمایت کرو تاکہ ہم تمہیں جو کاکس کی طرح قتل نہ کریں، اس سے میری والدہ خوفزدہ ہوگئیں، وہ سمجھیں کہ یہ لوگ واقعی مجھے قتل کرنا چاہتے ہیں اور ایسا ان کیلئے ناقابل برداشت تھا میرے بڑے بیٹے نے مجھ سے کہا کہ وہ اب ایسا نہیں چاہتا انھوں نے کہا کہ بہترین سیکورٹی کے باوجود مجھے ان حقائق کا سامنا کرنا پڑرہا ہے انھوں نے کہا کہ ارکان پارلیمنٹ ہمیشہ خطرات سے دوچار رہتی ہیں،انھوں نے کنزرویٹو کے وزرا کو گھٹیا لوگوں کاٹولہ کہنے پر ایک دفعہ پھر معذرت کی انھوں نے کہا کہ تشدد اور زیادتی ہماری جمہوریٹ کاحصہ نہیں ہے۔
یورپ سے سے مزید