آپ آف لائن ہیں
جمعہ 10؍محرم الحرام 1440ھ 21؍ستمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

کچھ اندھے ہوتے ہیں، کچھ عقل کے اندھے اور کچھ دونوں طر ف سے فارغ ہوتے ہیں۔ آج کل ایسے لوگوں کی کمی بری طرح کھٹک رہی ہے۔ دھمالوں، چنڈالوں، خلالوں کےبغیر سیاست کی رونق آدھی بھی نہیں رہ گئی۔ یہ سب وہ لوگ تھے جنہیں عمران کے ہاتھوں پر وزارت ِعظمیٰ کی لکیر ہی نظر نہیںآتی تھی۔ جو آج لکیر سے کہیں بڑھ کر ان کے لئے سیاسی پل صراط بن چکی جس پر بکتربند گاڑیوںکی آمد و رفت بھی جاری ہے۔ آنکھوں اور عقل کے اندھوں کے بعد آج کل اک نئی کھیپ میدان میں ہے۔

یہ پہلوں جیسی رونقی تو نہیں لیکن ان کی کمی پوری کرنے کی پوری کوشش کر رہی ہے۔ یہ وہ نابغے ہیں جو ڈری ڈری دھمکیاں دے رہے ہیں یا بددعائیں۔ تازہ ترین دھمکی ملاحظہ فرمائیں.... ’’نواز شریف کے ساتھ ایسا سلوک نہ کریں۔ وقت بدلتے دیر نہیں لگتی‘‘کتنی آسانی سے بھول گئے کہ کبھی یہ آصف زرداری کو بکتربند گاڑیوں میں گھمایا کرتے تھے اور جان بوجھ کرگاڑی کودھوپ میں کھڑا رکھتے تھے اور جہاں تک تعلق ہے ’’وقت بدلنے میںدیر نہ لگنے کا‘‘ تو اسے صحیح معنوں میں سمجھنا ذرا مشکل ہے۔ گمنام، بے نام، بے چہرہ، بے شناخت و بے شجرہ خاندان صدیوں گمنامی، غربت، خانہ بدوشی کے اندھیروں میں گم رہنے کے بعد ’’سلاطین عثمانیہ‘‘ بنے اور پھر یوں بکھرتے، سمٹتے اورمٹتے ہیں کہ ان کا نام و نشان نہیں ملتا۔ آج جب کوئی خود کو ’’مغل‘‘کہتا ہے تو لوگ مسکرا دیتے ہیں، کورنش بجا نہیںلاتے۔ ایران کے صفوی ڈھونڈے سے نہیںملتے اور روس کے زاروںکا ایک شہزادہ مرا دوست ہے، میرے ساتھ ٹائم طے کرکے آئیں اور ’’کلام شاعر بزبان شاعر‘‘ سن لیں اوریہ خاندان جو چند ماہ پہلے تک "JIT"بھگتانے کے دوران خود کو ’’حکمران خاندان‘‘ قرار دیتا تھا تو میں تب بھی سوچا کرتا تھاکہ قیام پاکستان کے وقت جب قتل و غارت، کشت و خون، لوٹ مارعروج پر تھی، ٹرینیں لاشوں سے بھری تھیں، بچے ماؤں کے پیٹوں سے نکال کر تلواروں، نیزوں، کرپانوں پر اُچھالے جارہے تھے، مہاجرین قافلہ در قافلہ روندے جارہے تھے، مائیں، بہنیں، بہوئیں ، بیٹیاں درندگی کا نشانہ بن رہی تھیں، 14اگست 1947یہ ملک معرض وجود میں آ رہا تھا.....

تب کوئی سوچ بھی سکتا تھا کہ غربت کامارا جاتی امرا امرتسر سے آیا یہ مزدور خاندان نوزائیدہ پاکستان کی آدھی عمر تک اس پر قابض رہے گا اور خود کو ’’حکمران خاندان‘‘قرار دیتے ہوئے شرمائے گا بھی نہیں..... واقعی وقت بدلتے دیر نہیں لگتی لیکن اس کا مطلب صرف وہی جانتا ہے جو بے شک انسانوں کے درمیان دنوں کو پھیرتا رہتا ہے۔ شہباز شریف کو اس جملے کی سمجھ نہیں آ رہی تو وقت سمجھادےگا۔ انگریز بیوروکریٹ گیزیٹئرز تیار کیا کرتے تھے جو ریکارڈ پر ہیں تو کوئی زحمت فرمائے 1945، 1946 وغیرہ میں لاہور کے معززین، شرفا، رئوسا، عمائدین میں کون کون لوگ تھے اور کیا آج ان میں سے کسی ایک کا بھی نام و نشان، آل اولاد باقی ہے؟ ہے تو کہاں اور کس حال میں ہے؟’’کیسے کیسے، کیسے کیسے ہوگئے؟‘‘یہ جائے عبرت ہے لیکن رسی جل بھی جائے تو اس کے بل جانے میں کچھ وقت لگتا ہے۔کل تک مجھ جیسا کودن یہ سوچ سوچ کڑھتا تھا کہ پروردگار! یہ پاکستان کیا اس لئے بنایا تھا کہ یہ خاندان یہاں دندناتا اور من مانیاں کرتا پھرے، ادارے برباد کردے، میرٹ پامال کردے، اخلاقیات کے جنازے نکال دے، اقتصادیات کا حشرنشر کردے لیکن پھرسمجھ ہی نہ آئی سین کیسے تبدیل ہوتا چلا گیا کہ مجھے فیس بک پر ’’ایک زندان پورا خاندان‘‘ جیسا عنوان دینا پڑا۔ بخدا مجھے اس صورتحال پر نہ کوئی خوشی نہ غم.... کانپتا لرزتا اور توبہ توبہ کرتارہتا ہوں۔

دھمکیاں دینے والوں کے علاوہ جو دوسراگروہ ہے، اس کا گزر بسر آج کی ’’بددعائوں‘‘ پر ہے۔ وہ ناکامیوں کی پیش گوئیاں کرنے کے لئے ننگے پائوںپیدل دور دور کی کوڑیا ں لا رہے ہیں اور میں اپنے قلم کے کوڑے سے مٹی جھاڑتے ہوئے دل کی گہرائیوں سے دعا مانگ رہاہوں کہ اے میرے رب! سب ٹھیک کردے۔اس ملک کی سمت تبدیل کردے، ہمیں خوددار اور خودکفیل کردے، حکمرانوںکے دل ودماغ منور کردے، ان کی روحیں معطر کردے، ان کے لئے مشکلات مسخر کردے۔آج کل دوست، احباب، ملاقاتی اپنے اپنے انداز میں یہ سوال پوچھتے ہیں کہ ’’اب تو PTIاقتدار میںآگئی ، اب آپ کیا کریں گے؟‘‘ تو عرض کرتا ہوں کہ وہی کروں گا جو آج تک کرتا آیا ہوںکیونکہ بنیادی طور پر میری کمٹمنٹ کسی فرد یا پارٹی کے ساتھ نہیں، پاکستان اور اس کے عوام کے ساتھ ہے۔خود عمران نے ایک بار ہنستے ہوئے بہت سنجیدہ بات کی تھی کہ ’’اگر ہم اقتدار میں آگئے تو یہی حسن نثار ہمارا بدترین ناقد ہوگا‘‘ بے شک یہی آخری سچائی ہے۔ میں نے چند سال پہلے ملک چھوڑنے کی بات کی تھی۔

امیگریشن کا پراسیس شروع ہوئے 6سال ہوگئے، دوچار سال مزید لگ جائیں گے۔ وقت کے ساتھ ساتھ میرا خوف بڑھ رہا ہے اور اس دعا میںبھی شدت بڑھتی جارہی ہے کہ ’’مولا! میرا ملک ایساکردے کہ اسے چھوڑنے کاخیال بھی کسی کو نہ آئے۔‘‘ قلم کے کوڑے کو تھامے اگلی حکومت کی پرفارمنس کامنتظر ہوں اور عوام کے ساتھ یہ عہد..... تجدید عہد کہ میں تمہیں بھول جاؤں اگر مرا داہنا ہاتھ اپنا ہنر بھول جائے‘‘ مدینہ تو دور کی بات، ہمیں عکس مدینہ بھی دےدو تو ہم خوش، ہمارا خد ا خوش اور میرے قلم کے کوڑے پر مٹی جمتی جائے گی۔

(کالم نگار کے نام کیساتھ ایس ایم ایس اور واٹس ایپ رائےدیں00923004647998)

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں