آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
ہفتہ 7؍ربیع الثانی 1440ھ 15 ؍دسمبر2018ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

العزیزیہ ریفرنس کی سماعت کے دوران سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف نے احتساب عدالت میں اپنے دیئے گئے بیان میںکہا ہے کہ 1999ءمیں مارشل لا کے نفاذ کے بعد شریف خاندان کے کاروبار کا ریکارڈ مختلف ایجنسیاں لے کرچلی گئیں۔

العزیزیہ ریفرنس کیس کی سماعت احتساب عدالت میں ہوئی، اس موقع پر سابق وزیر اعظم نواز شریف نے اپنا بیان ریکارڈ کرایا۔

بیان میں انہوں نے مزید کہا کہ مقامی پولیس اسٹیشن میں کاروباری ریکارڈ کے ایجنسیوں کے لے جانے کی شکایت بھی درج کرائی لیکن کوئی اس پر کارروائی نہیں کی گئی اور 1999ءمیں قبضے میں لیا گیا ریکارڈ آج تک واپس نہیں کیا گیا۔

نواز شریف نے مزید کہا کہ صرف 1999ء میں ہی یہ نہیں ہوا، یہ ہمیشہ ہوتا آیا ہے کہ 1972ء میں پاکستان کی سب سے بڑی اسٹیل مل اتفاق فاؤنڈری کو قومیا لیا گیا۔

سابق وزیر اعظم نے بیان میں یہ بھی کہا کہ 1972ء میں سیاست میں بھی نہیں تھا ،میں نے 80ء کی دہائی میں سیاست کا آغاز کیا۔

Chatاپنی رائے سے آگاہ کریں