آپ آف لائن ہیں
اتوار20؍ذیقعد 1441ھ 12؍جولائی 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

چہرہ شناس ٹیکنالوجی سے شخصی خصائل کا پتہ چل سکتا ہے، تحقیق

ایک تحقیق میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ چہرہ شناسی کی ٹیکنالوجی سے ایک جذباتیت سے عاری سیلفی کے تجزیئے سے کسی کی بھی شخصی یا ذاتی خصائل کا پتہ یا اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔

 تحقیق کاروں نے ایک مصنوعی نیوٹرل نیٹ ورک تیار کیا تاکہ کسی بھی شخص کے چہرے سے اس کے 128مختلف اوصاف یا فیکٹرز کا اندازہ لگایا جاسکے، جیسے کے منہ کی چوڑائی اور ہونٹوں کی اونچائی یا پھر آنکھوں کی بناوٹ سے اسکی شخصیت کا تجزیہ کیاجائے۔

 اس میں تحریری جمع شدہ ڈیٹا کا استعمال کیا گیا تاکہ کسی فرد کی پانچ شخصی خصوصیات کی بنیاد پر اسکی درجہ بندی کی جاسکے، ان خصوصیات میں ایمانداری، اعصابی کیفیت جس میں نامعلوم خوف و خدشات کا شکار ہونا، ظاہر پرست یا حالات کے مطابق رویئے تبدیل کرنے والا، قابل قبولیت اور کھلاپن یا کشادگی شامل تھی۔

 جب ان سوالات کو ڈیٹا میں ڈال کر رضاکاروں نے اس کا تقابل کیا تو اے آئی  وقت کے مطابق درست طور پر 58 فیصد سامنے آئی۔ تحقیق کاروں کا کہنا ہے کہ زیادہ امکان یہی ہے کہ یہ نتائج وقت کے مطابق پچاس فیصد تک حاصل ہوں، کیونکہ چہرہ شناسی کے طریقہ کار کے مقابلے میں انسان کم مستقل مزاج ہوتا ہے۔

 اس تحقیقی سسٹم میں زیادہ درست نتائج مردوں کے مقابلے میں خواتین کے ملے اور سب سے اچھی پہنچان ایمانداری کے حوالے سے ہوئی۔

اس تحقیق کے لیے بارہ ہزار رضاکاروں نے مجموعی طور پر 31 ہزار سیلفیاں اپ لوڈ کیں، جنہیں دو گروپوں میں بانٹ دیا گیا تھا۔

 ماسکو کی دو جامعات، ایچ ایس ای یونیورسٹی (ہائر اسکول آف اکنامکس) اور اوپن یونیورسٹی فار دی ہیومینیٹز اینڈ اکنامکس کے ریسرچرز کا کہنا ہے کہ مصنوعی نیوٹرل نیٹ ورک نے ایک اوسط انسان کو مات دیدی، جس سے کسی شخص کی پرسنالٹی کے بارے میں اس طرح اندازہ لگانے کو کہا گیا تھا کہ اسے اس کے بارے میں کچھ پتہ نہ ہو۔ اس طرح مصنوعی نیوٹرل نیٹ ورک کامیاب رہا۔

خاص رپورٹ سے مزید